உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ایکسکلوزیو : جیٹلی نے غیر ملکی سرمایہ کاروں کا کیا استقبال اور پروٹکشنزم پر کیا تشویش کا اظہار

    وزیر خزانہ ارون جیٹلی۔ فائل فوٹو

    وزیر خزانہ ارون جیٹلی۔ فائل فوٹو

    وزیر خزانہ ارون جیٹلی نے کہا ہے کہ ہندوستان میں غیر ملکی سرمایہ کاروں کا خیر مقدم ہے ، کیونکہ ہم لبرل اکنامی میں یقین رکھتے ہیں ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : وزیر خزانہ ارون جیٹلی نے کہا ہے کہ ہندوستان میں غیر ملکی سرمایہ کاروں کا خیر مقدم ہے ، کیونکہ ہم لبرل اکنامی میں یقین رکھتے ہیں ۔ حالانکہ انہوں نے دیگر ممالک کے ذریعہ اپنائی جارہی پروٹکشنزم پالیسیوں پر تشویش کا اظہار کیا۔ نیوز 18 نیٹ ورک کے ساتھ ایک ایکسکلوزیو انٹرویو میں انہوں نے حال میں امریکی صدر صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے ذریعہ ایچ ون بی ویزا کو مہنگا بنانے پر بھی تبادلہ خیال کیا۔
      جیٹلی نے کہا کہ میں اس بات کو لے کر فکر مند ہوں ، کیونکہ اگر اس طرح کی ٹینڈنسی مضبوط ہوتی ہے تو سبھی ملک ایسے ہی قدم اٹھائیں گے ، ہمارے تجربے اس بات کے گواہ ہیں کہ معیشت کو لبرل بنانے سے ہمیں مدد ملی ہے۔
      وزیر خزانہ نے کہا کہ گزشتہ ڈھائی دہائی کے دوران جن چیزوں نے ہندوستانی معیشت کو بہتر اور بڑا بنانے میں ہماری مدد کی ہے ، ان سے آج ہم اپنی بہتری کے تئیں زیادہ متفق ہیں ، ہم چاہتے ہیں کہ ملک میں غیر ملکی سرمایہ کار آئیں ، ہم یہ نہیں سوچتے کہ غیر ملکی سرمایہ کاروں کا ہندوستان آنا ہماری معیشت کیلئے نقصاندہ ہے ۔ آج کی تاریخ میں ہم انہیں ایسی طاقت کے طور پر دیکھتے ہیں جو ہمارے ملک میں پونجی لاکر یہاں روزگار کے مواقع بڑھائیں گے۔
      چین کے ذریعہ گوگل اور فیس بک پر پابندی لگائے جانے کی مثال دیتے ہوئے جیٹلی نے کہا کہ ہم نے اس طرح کے قدم نہیں اٹھائے ہیں۔ کیونکہ ہم چین کے طرز پر نہیں سوچ رہے ہیں ، ہم غیر ملکی سرمایہ کاروں کا خیر مقدم کرتے ہیں۔ غور طلب ہے کہ چین نے گھریلو کمپنیوں بائیڈو اور وی چیٹ کو فروغ دینے کیلئے گوگل اور فیس بک پر پابندی عائد کر رکھی ہے۔
      جیٹلی نے کہا کہ بڑی آبادی اور بڑے پیمانے پر انسانی وسائل کی وجہ سے ہم نے دنیا بھر کے تقریبا ہر ملک میں بڑی تعداد میں قوم پرست لوگوں کو بھیجا ہے ، یہی وجہ ہے کہ اگر آج آپ نیوزی لینڈ میں کرکٹ میچ دیکھتے ہیں تو آپ کو وہاں کی ٹیم میں کئی سارے ہندوستانی مل جائیں گے۔
      غور طلب ہے کہ وزیر اعظم مودی نے بھی گزشتہ ماہ ورلڈ اکانومک فورم سے اپنی تقریر میں پروٹکشنزم کی مخالفت کی تھی ۔ مودی نے کہا تھا کہ پروٹکشنزم طاقتیں گلوبلائزیشن کے خلاف کام کررہی ہیں ۔ ان کا مقصد نہ صرف گلوبلائزیشن کو خراب بتانا ہے بلکہ وہ پونجی کے فطری اثر کے بھی خلاف ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ آج دنیا بھر میں نئی طرح کی ٹیرف اور نان ٹیرف بندشیں اور سرحدیں کھینچی جارہی ہیں۔
      First published: