உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    دہلی والوں کو راحت ، آٹو رکشا والوں کی ہڑتال واپس

    نئی دہلی :  آٹو رکشا اور ٹیکسی یونین نے دہلی حکومت کے ذریعہ اپنے مطالبات مان لئے جانے کے بعد کل کی مجوزہ ایک دن کی ہڑتال واپس لینے کا اعلان کیا ہے۔

    نئی دہلی : آٹو رکشا اور ٹیکسی یونین نے دہلی حکومت کے ذریعہ اپنے مطالبات مان لئے جانے کے بعد کل کی مجوزہ ایک دن کی ہڑتال واپس لینے کا اعلان کیا ہے۔

    نئی دہلی : آٹو رکشا اور ٹیکسی یونین نے دہلی حکومت کے ذریعہ اپنے مطالبات مان لئے جانے کے بعد کل کی مجوزہ ایک دن کی ہڑتال واپس لینے کا اعلان کیا ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      نئی دہلی :  آٹو رکشا اور ٹیکسی یونین نے دہلی حکومت کے ذریعہ اپنے مطالبات مان لئے جانے کے بعد کل کی مجوزہ ایک دن کی ہڑتال واپس لینے کا اعلان کیا ہے۔  آٹو رکشا اور ٹیکسی یونین کے جنرل سکریٹری راجندر سونی نے یو این آئی سے بات چیت میں کہا کہ " دہلی حکومت نے ہمارے تمام مطالبات تحریری طور پر تسلیم کرلئے ہیں اور ہم نے ہڑتال واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے"۔
      آٹو ٹیکسی یونین کے متعدد لیڈروں نے آج وزیر ٹرانسپورٹ گوپال رائے سے ملاقات کی تھی۔ دہلی حکومت کے دوسرے مرحلے طاق-جفت فارمولہ کے تحت پیر کو پہلا کاروباری دن ہوگا۔ آٹورکشا ہڑتال کے اعلان کو دیکھتے ہوئے مسافروں کو پریشانیوں کا سامنا ہونے کا خدشہ تھا۔ لیکن اب ہڑتال واپس لینے سے راحت ملی ہے۔ دارالحکومت میں تقریبا 81 ہزار آٹو رکشا ہيں اور 15 ہزار کالی پیلی ٹیکسی روزانہ سڑکوں پر چلتی ہیں۔ آٹو رکشا اور ٹیکسی یونین اولا اور اوبیر جیسی ٹیکسی کی خدمات کو حکومت کی طرف سے فروغ دینے کے خلاف تھی۔ اس کا کہنا تھا اس سے ان کی روزی روٹی پر اثر پڑ رہا ہے۔ اس کے علاوہ وہ دس ہزار آٹو رکشا لائسنس جاری کرنے کا مطالبہ کر رہے تھے۔
      First published: