ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

کشمیر میں برفانی تودے گرنے کے واقعات میں 5 فوجی اہلکاروں سمیت 10 افراد جاں بحق

بتادیں کہ وادی کشمیر کے بالائی علاقوں میں اتوار اور پیر کو شدید برف باری ہوئی جس کے نتیجے میں ان علاقوں میں متعدد جگہوں پر برفانی تودے گرے۔

  • UNI
  • Last Updated: Jan 14, 2020 01:57 PM IST
  • Share this:
کشمیر میں برفانی تودے گرنے کے واقعات میں 5 فوجی اہلکاروں سمیت 10 افراد جاں بحق
کشمیر میں برفانی تودے گرنے کے واقعات میں 5 فوجی اہلکاروں سمیت 10 افراد جاں بحق

سری نگر۔ وادی کشمیر میں برفانی تودے گرنے کے تین الگ الگ واقعات میں 5 فوجی اہلکاروں سمیت کم از کم 10 افراد جاں بحق ہوگئے ہیں۔ برفانی تودے گرنے کے یہ واقعات وسطی کشمیر کے ضلع گاندربل کے سونہ مرگ اور شمالی ضلع کپوارہ کے مژھل اور نوگام سیکٹروں میں پیش آئے ہیں۔ بتادیں کہ وادی کشمیر کے بالائی علاقوں میں اتوار اور پیر کو شدید برف باری ہوئی جس کے نتیجے میں ان علاقوں میں متعدد جگہوں پر برفانی تودے گرے۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ ضلع کپواڑہ میں لائن آف کنٹرول کے مژھل سیکٹر میں منگل کے روز فوج کی ایک چوکی بھاری بھرکم برفانی تودے کی زد میں آگئی جس کے نتیجے میں چار فوجی اہلکار جاں بحق ہوگئے۔ انہوں نے کہا کہ برفانی تودہ گرنے کے اس واقعہ میں ایک فوجی اہلکار لاپتہ ہوگیا تھا جس کو بچا لیا گیا ہے۔


ذرائع نے بتایا کہ اسی ضلع کے نوگام سیکٹر میں بھی بی ایس ایف کی ایک چوکی برفانی تودے کی زد میں آگئی جس کے نتیجے میں ایک اہلکار کی موت واقع ہوئی۔ انہوں نے مزید کہا کہ دیگر کچھ جگہوں پر بھی برفانی تودے گر آئے ہیں جہاں بچائو آپریشن جاری ہے۔ قبل ازیں ضلع گاندربل کے سونہ مرگ علاقہ میں منگل کو برفانی تودہ گرنے کے ایک ہلاکت خیز واقعہ میں پانچ افراد جاں بحق ہوئے۔ گزشتہ ہفتے جموں خطہ کے ضلع پونچھ میں ایل او سی پر برفانی تودہ گر آنے کے ایک واقعہ میں ایک آرمی پورٹر جاں بحق ہوا تھا جبکہ دیگر تین کو بچایا گیا تھا۔


فائل فوٹو


قابل ذکر ہے کہ بھاری بھرکم برفانی تودے گر آنے کے نتیجے میں فوجی اہلکاروں کے ہلاک ہونے کے واقعات زیادہ تر سیاچن گلیشئر میں پیش آتے ہیں۔ سیاچن گلیشئر دنیا کا بلند ترین جنگی میدان ہے جو ہندوستان اور پاکستان کے درمیان باعث متنازع معاملہ بنا ہوا ہے۔ سیاچن گلیشئر میں سال 2019 کے ماہ نومبر کی 18 اور 30 تاریخ کو برفانی تودے گر آنے کے دو الگ الگ واقعات پیش آئے تھے جن میں 4 فوجی اہلکار اور 2 فوجی پورٹر ہلاک ہوئے تھے. قبل ازیں سیاچن گلیشئر میں ہی سال 2016 کے ماہ اکتوبر کی 18 تاریخ کو ایک بھاری بھرکم برفانی تودے کے نیچے 10 فوجی اہلکار زندہ دفن ہوئے تھے۔

سال گزشتہ کے ماہ جنوری کی 3 تاریخ کو جموں کے ضلع پونچھ میں ایک فوجی پوسٹ برفانی تودے کی زد میں آیا تھا جس کے نتیجے میں ایک فوجی اہلکار ہلاک ہوا تھا۔ سال 2018 کے ماہ فروری کی 2 تاریخ کو کپوارہ کے مژھل سیکٹر میں برفانی تودہ گرآنے کے نتیجے میں 3 فوجی اہلکار ہلاک ہوئے تھے جبکہ ماہ جولائی کی 13 تاریخ کو بانڈی پورہ کے گریز سیکٹر میں بھاری بھرکم برفانی تودے کی زد میں آکر 10 فوجی اہلکار از جان ہوئے تھے۔ سال 2017 کے ماہ جنوری کی 25 تاریخ کو بانڈی پورہ کے گریز سیکٹر میں برفانی تودے گر آنے کے چار الگ الگ واقعات میں 20 فوجی اہلکار اور 4 عام شہری ہلاک ہوئے تھے۔
First published: Jan 14, 2020 01:56 PM IST