ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

بدایوں: 50 سالہ خاتون کی عصمت دری اور قتل معاملے میں کلیدی ملزم گرفتار

بدایوں اجتماعی آبروریزی وقتل کیس میں کلیدی ملزم پُجاری ستیہ نارائن گرفتار کر لیا گیا ہے۔ ستیہ نارائن پر پچاس ہزار کا انعام تھا۔ اس کیس میں دوملزمین کو پولیس پہلے ہی گرفتار کرچکی ہے۔

  • Share this:

بدایوں اجتماعی آبروریزی وقتل کیس میں کلیدی ملزم پُجاری ستیہ نارائن گرفتار کر لیا گیا ہے۔ ستیہ نارائن پر پچاس ہزار کا انعام تھا۔ اس کیس میں دوملزمین کو پولیس پہلے ہی گرفتار کرچکی ہے۔ واضح رپے کہ اترپردیش کے بدایوں میں ایک خاتون کے ساتھ نربھیا واقعہ (Nirbhaya Case) جیسی واردات کو پھر سے دوہرانے کا معاملہ سامنے آیا تھا۔ حیوانیت ایک ادھیڑ عمر خاتون کے ساتھ ہوئی ہے۔ خاتون کا ریپ (Gang Rape) کے بعد قتل کر دیا گیا۔ واردات کے بعد خاتون کے پوسٹ مارٹم رپورٹ سے چونکانے والا انکشاف ہوا ہے۔ رپورٹ کے مطابق خاتون کے پرائیویٹ پارٹ میں راڈ جیسی کسی چیز سے حملہ کیا گیا ہے جس سے خاتون کے پرائیویٹ پارٹ میں گہری چوٹیں آئی ہیں۔

خاتون کے پرائیویٹ پارٹ میں ڈالی راڈ اور پاؤں بھی توڑا۔۔

پی ایم رپورٹ کے مطابق خاتون کی پسلی اور پاؤں توڑ دئے گئے تھے۔ پھیپھڑے پر بھی وزن دار چیز سے حملہ کیا گیا تھا۔ اس واقعے کے بعد موقع پر ایس ایس پی نے فوران ایس پی کو بھیجا اور ملزموں کی گرفتاری کیلئے چار ٹیمیں بنائی گئی تھیں۔ پولیس نے اہل خانہ کی تحریر ملزم مہنت سمیت اس کے ایک ساتھی اور ڈرائیور کے خلاف اجتماعی عصمت دری کے بعد قتل کا مقدمہ درج کیا تھا۔ جس کے بعد یوگی حکومت نے بھی معاملے پر نوٹس لیا اور کارروائی کی گئی۔ خاتون کا پوسٹ مارٹم پینل سے منگل کو ہوا تھا۔


خاتون کی دردناک موت

یہ سنسنی خیچ واردات ادھیتی تھانہ علاقہ کے ایک گاؤں کی ہے۔ یہاں گاؤں کی ایک خاتون پاس کے گاؤں میں واقع ایک مندر پر اتوار کی شام کو گئی تھی۔ اس کے بعد وہ لوٹ کر نہیں آئی۔ مقامی لوگوں کا الزام ہے کہ تقریبا رات کو بارہ بجے ایک کار سوار اور دو دیگر شخص خاتون کو لہولہان چھوڑ کر فرار ہو گئے تھے۔ خاتون کی رات میں ہی موت ہو گئی۔ بتایا جا رہا ہے کہ اس سے پہلے ملزم خاتون کو اپنی گاڑی سے علاج کیلئے چندوسی بھی لے گئے تھے۔

اہل خانہ نے گینگ ریپ (Gang Rape) کے بعد قتل کا الزام لگایا ہے۔ گھر والوں کا کہنا ہے کہ ادھیتی کے تھانے دار راویندر پرتاپ سنگھ شکایت کے بعد بھی موقع واردات پر نہیں پہنچے۔ پیر کی دوپہر معاملے کے 18 گھنٹے بعد لاش کو پوسٹ مارٹم کیلئے بھیجا گیا۔ خاتون ڈاکٹر سمیت تین ڈاکٹروں کے پینل نے پوسٹ مارٹم کیا۔ شام کو رپورٹ آئی تو معلوم ہوا کہ خاتون کے پرائیویٹ پارٹ میں گہری چوٹ تھی۔ کافی خون بھی نکلا تھا۔ رپورٹ میں کوئی وزن دار چیز ست وار کعنے کا بھی ذکر ہے۔ پوسٹ مارٹم رپورٹ دیکھ کر افسر حیرت میں پڑ گئے تھے۔ جس کے بعد ان سبھی ملزموں کی تلاش تھی اور آج بالآخر یہ سبھی مجرم پولیس کی گرفت میں ہیں۔
Published by: Sana Naeem
First published: Jan 08, 2021 11:54 AM IST