اپنا ضلع منتخب کریں۔

    جامعہ ملیہ اسلامیہ میں بی بی سی دستاویزی فلم کی اسکریننگ کا منصوبہ، کیمپس کے باہر سخت سیکیورٹی

    Youtube Video

    دوسری طرف دستاویزی فلم کو کیرالہ بھر میں منگل کو مختلف سیاسی تنظیموں بشمول بائیں بازو کی طالب علموں کی فیڈریشن آف انڈیا (SFI) کی طرف سے دکھایا گیا، کیونکہ بی جے پی یوتھ ونگ نے اس اسکریننگ کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے ہتھیار اٹھا لیے تھے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi, India
    • Share this:
      بی بی سی کی دستاویزی فلم میں سال 2002 کے گجرات فسادات کے دوران پی ایم مودی کی قیادت پر سوال اٹھائے گئے ہیں، جو کہ آج کل بحث کا موضوع بنی ہوئی ہے۔ بائیں بازو سے وابستہ اسٹوڈنٹس فیڈریشن آف انڈیا (SFI) نے بدھ کو اعلان کیا کہ وہ شام 6 بجے جامعہ ملیہ اسلامیہ کے کیمپس میں وزیر اعظم نریندر مودی پر بی بی سی کی متنازعہ دستاویزی فلم دکھائے گی۔ تاہم یونیورسٹی انتظامیہ نے کہا کہ دستاویزی فلم کی اسکریننگ کے لیے کسی سے اجازت نہیں لی گئی ہے اور ہم اس کی اجازت نہیں دیں گے۔

      ایس ایف آئی کی جامعہ یونٹ نے ایک پوسٹر جاری کیا جس میں بتایا گیا کہ دستاویزی فلم شام 6 بجے ایم سی آر سی لان گیٹ نمبر 8 پر دکھائی جائے گی۔ بی بی سی کی طرف سے پی ایم مودی پر بنائی گئی دستاویزی فلم نے کچھ شیئرنگ لنکس اور اسکریننگ کے ساتھ لوگوں کو منقسم کر دیا ہے اور کچھ نے برطانیہ کے قومی نشریاتی ادارے (بی بی سی) اور اس دستاویزی فلم کی حمایت کرنے والوں کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔

      اس سے قبل ’’انڈیا: دی مودی کیوشن‘‘ نامی دستاویزی فلم کو لے کر منگل کے روز حیدرآباد یونیورسٹی کے طلبہ نے کیمپس میں اس کی اسکریننگ کی اور دہلی کی جواہر لال نہرو یونیورسٹی (جے این یو) کی طلبہ یونین نے بھی اسکریننگ کی منصوبہ بندی کی، جو کہ منصوبہ بندی کے مطابق نہیں ہوا۔ طلبہ تنظیم نے الزام لگایا کہ یونیورسٹی انتظامیہ نے یونین کے دفتر میں بجلی اور انٹرنیٹ کنکشن کاٹ دیا۔ طلبہ نے یہ مسئلہ اٹھایا اور پتھراؤ کا بھی الزام لگایا اور منگل کی دیر رات دہلی کے وسنت کنج پولیس اسٹیشن کے باہر احتجاج کیا۔

      یہ بھی پڑھیں: 

      دوسری طرف دستاویزی فلم کو کیرالہ بھر میں منگل کو مختلف سیاسی تنظیموں بشمول بائیں بازو کی طالب علموں کی فیڈریشن آف انڈیا (SFI) کی طرف سے دکھایا گیا، کیونکہ بی جے پی یوتھ ونگ نے اس اسکریننگ کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے ہتھیار اٹھا لیے تھے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: