உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کوویکسین بوسٹر شاٹ کے اثر کو پرکھنا چاہتا ہے بھارت بایوٹیک، DCGI سے مانگی ٹیسٹنگ کی اجازت

    کوویکسین بوسٹر شاٹ کے اثر کو پرکھنا چاہتا ہے بھارت بایوٹیک، DCGI سے مانگی ٹیسٹنگ کی اجازت ۔ فائل فوٹو ۔

    کوویکسین بوسٹر شاٹ کے اثر کو پرکھنا چاہتا ہے بھارت بایوٹیک، DCGI سے مانگی ٹیسٹنگ کی اجازت ۔ فائل فوٹو ۔

    Covaxin Booster Shot : ایک دن پہلے ہی وزیر اعظم نریندر مودی (PM Narendra Modi) نے ہفتہ کو اعلان کیا تھا کہ اگلے سال 3 جنوری سے 15 سال سے 18 سال کی عمر کے درمیان کے بچوں کیلئے کووڈ ویکسینیشن مہم شروع کی جائے گی ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : بھارت بائیوٹیک (Bharat Biotech) نے ہندوستان کے ڈرگ ریگولیٹر سے اپنی کووڈ 19 ویکسین کوویکسین کی تیسری خوراک کی افادیت کا جائزہ لینے کیلئے کلینیکل ٹرائل کی اجازت طلب کی ہے ۔ ایک اعلیٰ سرکاری اہلکار کے مطابق دیسی ویکسین بنانے والی کمپنی نے دوسری اور تیسری ڈوز کے درمیان چھ مہینے کا وقفہ رکھتے ہوئے 5000 صحت مند رضاکاروں پرکوویکسین کے بوسٹر شاٹ (Covaxin Booster Shot) کیلئے کلینیکل ٹرائلز کرنے کی تجویز پیش کی ہے ۔ سرکاری افسر نے کہا کہ اس کے علاوہ فرم نے تقریبا پانچ سو ایچ آئی وی پازیٹیو مریضوں کو شامل کرنے والے امیونوکمپرومائزڈ افراد پر ٹیسٹ کی تجویز بھی پیش کی ہے ۔

      ایک دن پہلے ہی وزیر اعظم نریندر مودی (PM Narendra Modi) نے ہفتہ کو اعلان کیا تھا کہ اگلے سال 3 جنوری سے 15 سال سے 18 سال کی عمر کے درمیان کے بچوں کیلئے کووڈ ویکسینیشن مہم شروع کی جائے گی ۔ ساتھ ہی 10 جنوری سے ہیلتھ اور فرنٹ لائن ورکروں ، دیگر سنگین بیماریوں سے متاثر 60 سال سے زیادہ عمر کے لوگوں کو احتیاط کے طور پر ٹیکوں کی خوراک دئے جانے کی شروعات کی جائے گی ۔

      حال ہی میں ادار پونے والا کے سیرم انسٹی ٹیوٹ آف انڈیا نے بھی کافی اسٹاک اور بوسٹر شاٹ کی مانگ کا حوالہ دیتے ہوئے کوویشیلڈ کو بوسٹر ڈوز کے طور پر لگانے کیلئے ڈی سی جی آئی کی منظوری مانگی تھی ، لیکن درخواست کو نامنظور کردیا گیا تھا ۔

      ذرائع کے مطابق ڈی سی جی آئی کے ماہرین کے پینل نے سیرم انسٹی ٹیوٹ کی درخواست کا جائزہ لیا اور فرم کو بوسٹر کی درخواست کو صحیح ٹھہرانے کیلئے لوکل کلینکل ٹرائل ڈیٹا (Local Clinical Trial Data) جمع کرنے کیلئے کہا ۔ اس کے علاوہ ایس آئی آئی نے برطانیہ کی اسٹڈی سے صرف 75 موضوعات کا امیونوزینیسٹی ڈیٹا پیش کیا تھا ۔

      اس ماہ کے شروع میں ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن پر ٹیکہ کاری پر ماہرین کے اسٹریٹجک ایڈوائزری گروپ نے کہا تھا کہ جو لوگ امیونوکمپرمائزڈ ہیں یا جنہیں ایک غیر فعال کووڈ 19 ویکسین لگی ہوئی ہے ، انہیں اینٹی باڈیز میں کمی اور نئے ویریئنٹ اومیکران کی وجہ سے بڑھتے کووڈ 19 معاملات کے پیش نظر سیکورٹی کیلئے بوسٹر شاٹس لینا چاہئے ۔
      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: