உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مسلم ہیروز کو آئیڈیل بنانے کی ضرورت ، آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت کا بڑا بیان

    مسلمان ہیروز کو آئیڈیل بنانے کی ضرورت ، آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت کا بڑا بیان ۔ فائل فوٹو

    مسلمان ہیروز کو آئیڈیل بنانے کی ضرورت ، آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت کا بڑا بیان ۔ فائل فوٹو

    RSS Chief Mohan Bhagwat News : موہن بھاگوت نے کہا کہ آج مسلمانوں کے بڑے نام جیسے دارا شکوہ ، اشفاق اللہ ، ابراہیم خان گاردی اور حسن خان میواتی جیسے لوگوں کو اپنا آئیڈیل مان کر اس پر فخر کرنا چاہئے ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کے سربراہ موہن بھاگوت نے ونایک دامودر ساورکر کے سلسلے میں تاریخ میں نظریاتی امتیاز کئے جانے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ اگراس وقت ساورکرکی بات سنی ہوتی تو شاید ہندوستان کا بٹوارہ نہیں ہوتا ۔ موہن بھاگوت نے یہاں امبیڈکرانٹرنیشنل فاؤنڈیشن میں معروف صحافی ادھے مہورکر اور پروفیسر چیرایو پنڈت کی جانب سے مشترکہ طور پر ویر ساورکر پر لکھی گئی کتاب کے رسم اجرا کے موقع پران باتوں کا اظہار کیا ۔ پروگرام کی صدارت وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے کی ۔

      موہن بھاگوت نے اپنے خطاب میں کہا کہ ساورکر نے ہندوستان کی قومیت کا سب سے پہلا اعلان کیا تھا۔ ان کی قوم پرستی پوری دنیا کے اتحاد اور انسانیت پرمرکوزتھی ۔ انہوں نے ہمیشہ سرسید احمد خان کے کردار اور مسلم لیگ کے کردار پرتبادلہ خیال کیا اور کہا کہ جو ہندوستان کا ہے ، اس کی سلامتی ، وقار ہندوستان سے وابستہ ہے ۔ تقسیم کے بعد ہندوستان سے ہجرت کر کے پاکستان میں گئے مسلمانوں کا وقار پاکستان میں بھی نہیں ہے ۔ جو ہندوستان کا ہے ، وہ ہندوستان کا ہی ہے۔

      موہن بھاگوت نے مزید کہا کہ ہندوستان میں کوئی اقلیت نہیں ہے ، سب ہندو ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ یہاں رہنے والے تمام لوگوں کے آباؤ اجداد ایک ہیں اور اسی لیے ہمیں ہندوستان میں مسلمانوں میں جو ہیرو ہوئے ہیں ، ان کو ہمیں اپنا آئیڈیل بنانا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ آج مسلمانوں کے بڑے نام جیسے دارا شکوہ ، اشفاق اللہ ، ابراہیم خان گاردی اور حسن خان میواتی جیسے لوگوں کو اپنا آئیڈیل مان کر اس پر فخر کرنا چاہئے ۔

      بھاگوت نے کہا کہ فوج میں مسلمانوں کا بھی بڑا رول ہے۔ انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر میں مسلم شہیدوں کے نام پر اسکولوں کا نام رکھا جا رہا ہے ، جو بہت اچھی بات ہے ۔ بھاگوت نے کہا کہ میں اس بات کی سو فیصد حمایت کرتا ہوں کہ ایسے لوگوں کے نام پر ہمارے ملک میں سڑکوں کے نام ہونے چاہئیں ، حملہ آوروں کے نام  پر نہیں ۔ اپنی تقریر میں بھاگوت نے ہندو مسلم اتحاد پر زور دیتے ہوئے کہا کہ جو بھی اس ملک میں رہتا ہے وہ ہندو ہے۔ عبادتیں الگ ہو سکتی ہیں ، لیکن آباؤ اجداد تو سب کے ایک ہیں۔ مادر وطن کو کیسے بدل سکتے ہیں؟ اس لیے سب کو ساتھ مل کر چلنا ہے۔

      انہوں نے کہا کہ 1857 کی پہلی جنگ آزادی کے بارے میں ساورکر نے لکھا تھا کہ ہندو بادشاہوں کے بھگوا جھنڈے اور چاند تارے والے سبز جھنڈے دونوں نے انگریزوں کا مقابلہ کیا ۔ لیکن بعد میں تحریک خلافت کے بعد وہابی نظریات سے ماحول بگڑ گیا اور کئی طرح کی تقسیمیں پیدا ہوئیں ۔ جب ہنگامہ ہوا کہ ہم ایک نہیں بلکہ دو قومیں ہیں ، تولوگوں نے غنڈہ گردی کا سہارا لیا۔

      انہوں نے کہا کہ آج بھی اتنے برسوں کے بعد ہم حالات کا جائزہ لیتے ہیں ، تو لگتا ہے کہ سب کو یکساں حقوق اور کسی کا استحصال نہیں ، کی ساورکر کی آوازکو زور سے بولتے تو بٹوارہ نہیں ہوتا ۔

      نیوز ایجنسی یو این آئی کے ان پٹ کے ساتھ ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: