உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سبرامنیم سوامی نے کہا- پرویز مشرف چاہیں تو لے سکتے ہیں ہندوستانی شہریت

    سبرامنیم سوامی نے شہریت ترمیمی قانون سے متعلق ٹوئٹ کیا ہے۔

    سبرامنیم سوامی نے شہریت ترمیمی قانون سے متعلق ٹوئٹ کیا ہے۔

    سبرامنیم سوامی نےکہا ہےکہ پرویز مشرف دہلی کےدریا گنج کے رہنے والے ہیں اورپاکستان میں استحصال کا سامنا کر رہے ہیں۔ خود کو ہندوؤں کی نسل ماننے والے بھی شہریت حاصل کرسکتے ہیں۔

    • Share this:
      نئی دہلی: شہریت ترمیمی قانون کولےکرپورے ملک میں ہورہےاحتجاجی مظاہرہ کےدوران بی جے پی رکن پارلیمنٹ سبرامنیم سوامی نے پاکستان کے سابق صدرپرویزمشرف کو ہندوستان کی شہریت دینےکی بات کہی ہے۔ سبرامنیم سوامی نےکہا ہے کہ پرویزمشرف دہلی کےدریا گنج کے رہنے والے ہیں اورپاکستان میں استحصال کا سامنا کر رہے ہیں۔ واضح رہے کہ پاکستان کی عدالت نے پرویزمشرف کے لئے سزائے موت کا اعلان کردیا ہے۔

      بی جے پی لیڈراورراجیہ سبھا رکن پارلیمنٹ سبرامنیم سوامی نےٹوئٹ کرکےکہا ہےکہ جس طرح سے پاکستان کےسابق صدرپرویزمشرف کوپریشان کیا جارہا ہے، اس کے بعد ہم فاسٹ ٹریک کی بنیاد پرانہیں شہریت دے سکتےہیں۔ پرویزمشرف چونکہ دریا گنج سے ہیں اوراس وقت پاکستان میں استحصال کا سامنا کررہے ہیں، خود کوہندوؤں کی نسل ماننے والے سبھی لوگ نئے شہریت ترمیمی قانون کےلئےاہل ہیں اورانہیں شہریت دی جائے۔

      واضح رہےکہ پاکستان کے سابق صدرپرویزمشرف ملک سےغداری کے معاملے میں موت کی سزا سنائی گئی ہے۔ پشاورہائی کورٹ کے چیف جسٹس وقاراحمد سیٹھ کی صدارت میں خصوصی عدالت کی تین رکنی بینچ نے 76 سالہ مشرف کوطویل وقت سے چل رہے ملک سےغداری کے معاملے میں موت کی سزا سنائی۔ یہ معاملہ 2007 میں آئین کو معطل کرنے اورملک میں ایمرجنسی لگانےکا ہے، جو قابل سزا جرم ہے۔ بینچ نےاپنے مختصرحکم میں کہا کہ اس نےاس معاملے میں تین ماہ تک تمام شکایتوں، ریکارڈس، جرح اورثبوتوں کی جانچ کی اورپاکستان کےآئین کے دفعہ 6 کے مطابق پرویزمشرف کوملک سےغداری کا قصور وارپایا ہے۔ ان پرآئین سے چھیڑچھاڑ کا الزام لگا ہے۔

      ان دنوں پرویزمشرف دبئی میں ہیں۔ انہیں ہارٹ اوربلڈ پریشرسےمتعلق پریشانی کی شکایت کے بعد تین دسمبرکودبئی کےایک اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔ 76 سالہ سابق صدرپرویز مشرف کواسٹریچرپراسپتال لایا گیا تھا۔ پرویزمشرف سال 2001 سے 2008 تک پاکستان کےصدررہے ہیں۔ سال 2008 میں وہ ملک چھوڑکرچلےگئےتھے۔ اس کے بعد وہ مارچ 2013 میں پاکستان لوٹے تھے۔
      First published: