உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Srinagar: جموں۔سری نگرقومی شاہراہ میں بہت جلدہوگی صفائی، جمعہ کی دوپہرتک نقل وحرکت کاامکان

    ’جموں سری نگر قومی شاہراہ پر ٹریفک کی جلد بحالی کو یقینی بنانے کے لیے کوششیں تیز کر دی گئی ہیں‘۔

    ’جموں سری نگر قومی شاہراہ پر ٹریفک کی جلد بحالی کو یقینی بنانے کے لیے کوششیں تیز کر دی گئی ہیں‘۔

    جموں خطہ کے جڑواں پونچھ-راجوری اضلاع کو جنوبی کشمیر کے شوپیاں ضلع سے جوڑنے والی ایک اور لنک مغل روڈ کو بھی دو دن تک بند رہنے کے بعد ٹریفک کے لیے کھول دیا گیا۔

    • Share this:
      حکام نے بتایا کہ 270 کلومیٹر طویل جموں-سری نگر قومی شاہراہ پر جاری بحالی کے کام میں رکاوٹ ڈالنے والے پتھروں کو پھوڑنے کے لیے دھماکہ خیز مواد استعمال کیا گیا تھا، جو جمعرات کو مسلسل تیسرے دن مسلسل بارشوں کی وجہ سے متعدد مٹی کے تودے گرنے کی وجہ سے بند تھی۔

      عہدیداروں نے بتایا کہ موسم میں بہتری کے ساتھ ادھم پور اور رامبن اضلاع میں نصف درجن سے زیادہ مقامات پر بحالی کا کام صبح کے وقت تیز کر دیا گیا کیونکہ کشمیر جانے والی 700 سے زیادہ پھنسے ہوئے گاڑیوں کو یہاں سے ہٹادیا گیا ہے۔ جس میں زیادہ تر ٹرکیں تھی، جو ضروری سامان لے کر جارہی تھی۔

      انہوں نے کہا کہ باقی 1,300 گاڑیوں کو نکالنے کی کوششیں جاری ہیں جو کہ ہائی وے پر پھنسے ہوئے ہیں۔ کشمیر کو ملک کے باقی حصوں سے جوڑنے والی واحد ہمہ موسمی سڑک اور گاڑیوں کی آمدورفت کی جزوی بحالی جمعہ کی دوپہر تک متوقع ہے۔ ادھم پور ضلع میں سمرولی کے قریب دیول پل پر پتھروں کو پھٹنے کے لیے دھماکہ خیز مواد استعمال کیا گیا تھا، جہاں ایک بہت بڑا لینڈ سلائیڈنگ سڑک کے ایک طویل حصے کو بند کر دیا تھا۔

      جموں کے ڈویژنل کمشنر رمیش کمار نے ادھم پور کے ڈپٹی کمشنر کریتکا جیوتسنا اور سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس ونود کمار سمیت دیگر سینئر افسران کے ساتھ سمرولی کے قریب لینڈ سلائیڈنگ کے مقام کا معائنہ کیا اور عمل آوری ایجنسیوں سے کہا کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ سڑک کو جلد از جلد ٹریفک کے قابل بنایا جائے۔ ڈپٹی کمشنر نے ڈویژنل کمشنر کو آگاہ کیا کہ ہائی وے کی بحالی کے لیے افراد اور مشینری جنگی بنیادوں پر کام کر رہے ہیں۔

      رامبن کے ڈپٹی کمشنر مسرت اسلام نے کہا کہ شاہراہ پر مٹی کے تودے گرنے سے متاثر ہونے والے تقریباً 30 علاقوں میں سے 25 کو بدھ کو ہی صاف کر دیا گیا تھا۔ رامبن اور ادھم پور اضلاع میں 33 مقامات پر مٹی کے تودے گرنے اور پتھراؤ کی وجہ سے منگل کی شام ہائی وے کو بند کر دیا گیا تھا۔ ایک 150 فٹ لمبی سڑک اور ہائی وے پر ایک زیر تعمیر پل بھی سیلابی ریلے کی وجہ سے بہہ گیا۔

      یہ بھی پڑھیں: BRICSکیا ہے؟ کب ہوا تھا اس کا قیام اور کیا ہے اس کے اصل مقاصد؟

      جموں خطہ کے جڑواں پونچھ-راجوری اضلاع کو جنوبی کشمیر کے شوپیاں ضلع سے جوڑنے والی ایک اور لنک مغل روڈ کو بھی دو دن تک بند رہنے کے بعد ٹریفک کے لیے کھول دیا گیا۔

      یہ بھی پڑھیں: ’چین کرےعالمی قانون کااحترام، ہندوستان کےساتھ بات چیت کےسرحدی تنازع کوکرےحال‘ Australia

      اس سے پہلے دن میں نیشنل ہائی وے کے سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس شبیر احمد ملک نے کہا کہ جموں سری نگر قومی شاہراہ پر ٹریفک کی جلد بحالی کو یقینی بنانے کے لیے کوششیں تیز کر دی گئی ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: