உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بریڈ بنانے والوں کا دعوی ، بریڈ سے کوئی خطرہ نہیں

    نئی دہلی : حال ہی میں سینٹر فار سائنس اینڈ انوائرمنٹ نے ایک رپورٹ پیش کی تھی ، جس کے مطابق بریڈ میں ایسے اجزا شامل ہیں ، جن سے کینسر کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

    نئی دہلی : حال ہی میں سینٹر فار سائنس اینڈ انوائرمنٹ نے ایک رپورٹ پیش کی تھی ، جس کے مطابق بریڈ میں ایسے اجزا شامل ہیں ، جن سے کینسر کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

    نئی دہلی : حال ہی میں سینٹر فار سائنس اینڈ انوائرمنٹ نے ایک رپورٹ پیش کی تھی ، جس کے مطابق بریڈ میں ایسے اجزا شامل ہیں ، جن سے کینسر کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

    • ETV
    • Last Updated :
    • Share this:
      نئی دہلی : حال ہی میں سینٹر فار سائنس اینڈ انوائرمنٹ نے ایک رپورٹ پیش کی تھی ، جس کے مطابق بریڈ میں ایسے اجزا شامل ہیں ، جن سے کینسر کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ اس خبرکے بعد جہاں لوگ صبح کے ناشتے میں بریڈ کے استعمال سے پرہیز کررہے ہیں ، وہیں مختلف شہروں میں محکمہ صحت فوڈ ڈپارٹمنٹ بریڈ کے سیمپل لینے لگے ہیں۔ دوسری طرف بیکری سے وابستہ ہزاروں افراد میں اس خبر سے بے چینی پھیلتی جارہی ہے۔ بیکری ایسو سی ایشن کے مطابق آئینی طور پر بریڈ کی تیاری میں 5 .0 فیصد پوٹیشیئم برومائڈ اور پوٹیشیئم ہایوڈرائڈ کے استعمال کی اجازت دی گئی ہے ۔ تاہم بیشتر بیکریاں اس سے بھی کم فیصد میں پی پی کا استعمال کرتی ہیں۔
      آل انڈیا بریڈ مینوفیکچررس ایسوسی ایشن نے دہلی پریس کلب میں ایک پریس کانفرنس کر کے بریڈ سے کینسر کی خبروں کی تردید کی۔ اے آئی بی ایم اے نے بریڈ کھانے کو پوری طرح سے محفوظ قرار دیتے ہوئے بریڈ کی رسيپی اور اس میں استعمال ہونے والے کیمیکل کا بھی ذکر کیا۔ ساتھ ہی ایف ایس ایس اے آئی کے ذریعہ اس کے مصدقہ ہونے کا بھی دعوی کیا ۔
      ادھر احمدآباد میونسپل کارپوریشن نے بریڈ سے کینسر کے خطرہ کی خبر سامنے آنے کے بعد 18 نمونے جانچ کے لئے بھیجے ہیں۔ وہاں کی لیباریٹریوں میں بریڈ کی جانچ شروع ہو چکی ہے۔ یہاں پیزا بریڈ، پریمیم بریڈ، اٹالین بریڈ، ڈف ڈسک، کروزو بن ، ایوری تھنگ برگر بن اور جمبو بریڈ وغیرہ کے نمونوں کی جانچ کی جارہی ہے۔
      ادھر ممبرا میں بیکری ایسو سی ایشن کے جنرل سیکریٹری و ایم پی ادریس علی نے بریڈ سے کینسر کے خطرے کی باتوں کو غلط قرار دیتے ہوئے لوگوں سے بے خوف ہوکر بریڈ کھانے کی اپیل کی ۔ واضح رہے کہ مغربی بنگال اور مہاراشٹر میں اقلیتوں کی بڑی تعداد بیکری صنعت سے وابستہ ہے ۔
      First published: