ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

اجودھیا میں بابری مسجد اراضی پر عظیم الشان رام مندر کی تعمیر ہونی چاہئے : شیعہ سنٹرل وقف بورڈ چیئرمین وسیم رضوی

شیعہ سنٹرل وقف بورڈ کے چیئرمین وسیم رضوی نے آج پھر کہا کہ اجودھیا میں متنازعہ بابری مسجد اراضی پر عظیم الشان رام مندر کی تعمیر ہونی چاہئے اور مسلم اکثریتی علاقہ میں مسجد بنائی جانی چاہئے۔

  • UNI
  • Last Updated: Sep 03, 2017 07:02 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
اجودھیا میں  بابری مسجد اراضی پر عظیم الشان رام مندر کی تعمیر ہونی چاہئے : شیعہ سنٹرل وقف بورڈ چیئرمین وسیم رضوی
شیعہ وقف بورڈ چیئرمین وسیم رضوی

اجودھیا : شیعہ سنٹرل وقف بورڈ کے چیئرمین وسیم رضوی نے آج پھر کہا کہ اجودھیا میں متنازعہ بابری مسجد اراضی پر عظیم الشان رام مندر کی تعمیر ہونی چاہئے اور مسلم اکثریتی علاقہ میں مسجد بنائی جانی چاہئے۔ مسٹر رضوی نے آج  کہاکہ انہوں نے دگمبر اکھاڑہ کے مہنت سریش داس، نرموہی اکھاڑا کے مہنت بابا بھاسکر داس اور ہنومان گڑھی نروانی اکھاڑا کے فریق دھرم داس سے مل کر متنازعہ بابری مسجد اراضی پر عظیم الشان مندر کی تعمیر کیلئے آپسی صلح سمجھوتہ کی تجویز پیش کی۔ فریقین نے اس سمجھوتہ کا خیرمقدم کرتےہوئے کہاکہ وہاں عظیم الشان رام مندر کی تعمیر ہونی چاہئے۔

شیعہ سنٹرل وقف بورڈ کے چیئرمین نے کہا ’سپریم کورٹ میں میں نے حلف نامہ داخل کرکے کہا ہے کہ متنازعہ بابری مسجد اراضی پر رام مندر کی تعمیر ہونی چاہئے جبکہ مسجد اس سے کچھ دور مسلم علاقے میں بنائی جانی چاہئے۔ اس تجویز سے متنازعہ بابری مسجد اراضی معاملے کے فریقین نے بھی تعاون کی بات کی۔‘

انہوں نے کہاکہ اجودھیا میں جتنی بھی مسجدیں بنی ہوئی ہیں، وہ مسلم برادری کیلئے کافی ہیں اور یہ ساری مسجدیں ہندؤں کے تعاون سے ہی بنی ہوں گی۔

First published: Sep 03, 2017 07:02 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading