உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کس کس کو مل سکتی ہے مودی کابینہ میں جگہ، پڑھیں، کن ریاستوں میں کون ہیں مضبوط دعویدار

    نئی دہلی۔ مرکزی کابینہ میں کل ردوبدل ہوگا جس میں کئی نئے چہروں کو شامل کئے جانے اور کچھ وزراء کے رخصت ہونے کا امکان ہے۔

    نئی دہلی۔ مرکزی کابینہ میں کل ردوبدل ہوگا جس میں کئی نئے چہروں کو شامل کئے جانے اور کچھ وزراء کے رخصت ہونے کا امکان ہے۔

    نئی دہلی۔ مرکزی کابینہ میں کل ردوبدل ہوگا جس میں کئی نئے چہروں کو شامل کئے جانے اور کچھ وزراء کے رخصت ہونے کا امکان ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی۔ مرکزی کابینہ میں کل ردوبدل ہوگا جس میں کئی نئے چہروں کو شامل کئے جانے اور کچھ وزراء کے رخصت ہونے کا امکان ہے۔ وزیر اعظم نریندر مودی کل صبح 11 بجے اپنی کابینہ میں توسیع کریں گے۔گزشتہ کئی دنوں سے کابینہ میں ردوبدل کی قیاس آرائی تھی اور آج چیف سرکاری ترجمان فرینک نورونها نے کل توسیع ہونے کا سرکاری اعلان کرکے ان قیاس آرائیوں پر روک لگا دی۔ ذرائع کے مطابق کابینہ کی دوسری توسیع میں 10 سے زیادہ نئے چہرے شامل کئے جانے اور کچھ وزیروں کو ہٹا کر انہیں بھارتیہ جنتاپارٹی میں تنظیمی ذمہ داری دیئے جانے کا امکان ہے۔ اس میں اتحادی جماعتوں کی شرکت بڑھائے جانے کی بھی توقع ہے۔خیال کیا جا رہا ہے کہ اس توسیع میں اسمبلی انتخابات کے پیش نظر یوپی اور اتراکھنڈ سے کچھ نئے چہرے شامل کئے جائیں گے۔مسٹر سروانند سونووال کو آسام کا وزیر اعلی بنائے جانے کے مدنظر اس ریاست کو بھی کابینہ میں نمائندگی دی جائے گی۔


      ذرائع نے بتایا کہ قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) کی پارٹیاں اپنا دل اور ریپبلکن پارٹی آف انڈیا (آر پی آئی) کے نمائندوں کو بھی اس میں جگہ دی جائے گی۔اپنا دل کی انوپريہ پٹیل اور آر پی آئی کے لیڈر رام داس اٹھاولے کو دعوت نامہ بھیجا جا چکا ہے۔ بی جے پی کی سب سے پرانی اتحادی شیو سینا کو بھی ایک اور سیٹ دیے جانے کا ذکر ہے لیکن ابھی تک اسے حکومت کی طرف سے کوئی اطلاع نہیں ملی ہے۔ بی جے پی کے رہنما ایس ایس اہلووالیہ، وجے گوئل، ارجن رام میگھوال، پرشوتم روپالا، مہندر ناتھ پانڈے، پي پي چودھري، اجے ٹمٹا، انیل مادھو دوے، پھگن سنگھ کلستے، كرشن راج اور من سكھ بھائی منڈاويا کے نام نئے وزراء کے طور پر لئے جا رہے ہیں۔ یوگی آدتيہ ناتھ اور راجستھان کے گورنر کلیان سنگھ کے بیٹے راج ویر سنگھ کا نام بھی زیربحث ہے۔ مسٹر اہلووالیہ اور مسٹر گوئل نے صبح بی جے پی صدر امت شاہ سے ملاقات کی تھی۔ کچھ اور لیڈروں کے بھی مسٹر شاہ سے ملنے کا امکان ہے۔ وزیر اعظم نے گزشتہ ہفتے اپنی کابینہ کی چار گھنٹے سے زیادہ جاری رہنے والی میٹنگ میں وزراء کے کام کاج کا جائزہ لیا تھا اور پارٹی صدر کے ساتھ بھی تبادلہ خیال کیا تھا۔


      ذرائع کے مطابق چھوٹے اور درمیانہ صنعت کے  وزیرمملکت گری راج سنگھ، انسانی وسائل کی ترقی کے وزیر مملکت پرفیسر رام شنكر کٹھیریا اور پنچایتی راج، کیمیا اور کھاد کے وزیر مملکت نهال چند کو کابینہ سے ہٹا کر تنظیم میں بھیجا جا سکتا ہے۔ قبل ازیں 75 سال سے زیادہ عمر کے ہو چکے بہت چھوٹی، چھوٹی اور درمیانے درجے کی صنعت کے وزیر کلراج مشرا اور اقلیتی امور کی وزیر نجمہ ہپت اللہ کو ہٹائے جانے کی باتیں ہو رہی تھیں لیکن اب اس کا امکان کم بتایا جا رہا ہے۔ کابینہ میں اس وقت وزیر اعظم کو ملا کر کُل 64 وزیر ہیں جن میں 27 کابینی، 12 آزادانہ چارج والے وزیر مملکت اور 25 وزیرمملکت ہیں۔ ذرائع کے مطابق کچھ وزراء کے محکموں میں ردوبدل بھی کی جاسکتی ہے تاہم خزانہ، خارجہ، دفاع اور وزارت داخلہ میں کوئی ردوبدل کا امکان نہیں ہے۔

      First published: