உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    چندی گڑھ میں خواتین کے شارٹ اسکرٹ پہن کر ڈسکو جانے پر پابندی عائد

    چندی گڑھ : انتظامیہ نے خواتین کے اسکرٹ پہن کر ڈسکو میں جانے پر پابندی لگا دی ہے ۔ لڑکیوں اور خواتین کو مناسب لباس پہن کر ہی نائٹ کلب میں آنے کے لئے کہا گیا ہے

    چندی گڑھ : انتظامیہ نے خواتین کے اسکرٹ پہن کر ڈسکو میں جانے پر پابندی لگا دی ہے ۔ لڑکیوں اور خواتین کو مناسب لباس پہن کر ہی نائٹ کلب میں آنے کے لئے کہا گیا ہے

    چندی گڑھ : انتظامیہ نے خواتین کے اسکرٹ پہن کر ڈسکو میں جانے پر پابندی لگا دی ہے ۔ لڑکیوں اور خواتین کو مناسب لباس پہن کر ہی نائٹ کلب میں آنے کے لئے کہا گیا ہے

    • Pradesh18
    • Last Updated :
    • Share this:
      چندی گڑھ : انتظامیہ نے خواتین کے اسکرٹ پہن کر ڈسکو میں جانے پر پابندی لگا دی ہے ۔ لڑکیوں اور خواتین کو مناسب لباس پہن کر ہی نائٹ کلب میں آنے کے لئے کہا گیا ہے ۔ انتظامیہ کے اس فیصلے کی خواتین کے ساتھ ساتھ بار اور نائٹ کلب آپریٹرز نے بھی مذمت کی ہے۔

      نائٹ لائف کی آڑ میں بے حیائی کو کنٹرول کرنے کے لئے عوامی تفریح 2016 ایکٹ کا حوالہ دے کر نافذ کی گئی اس پابندی کو لوگ عجیب اور مضحکہ خیز بتا رہے ہیں ۔ غداری کا حوالہ دیتے ہوئے سب کے لئے اس کا اس پر عمل آوری لازمی کردی گئی ہے ۔ بیوروکریٹس کے مطابق کہ شہر کے بار اور نائٹ کلب ملک مخالف عناصر کے لئے کے لئے اڈہ بن گئے ہیں ۔

      یکم اپریل سے نافذ کی گئی اس پالیسی میں بار کے وقت میں دو گھنٹے کی کمی کرتے ہوئے رات 2:00 کی بجائے صرف آدھی رات 12 بجے تک کھولنے کو کہا گیا ہے ۔ وہیں سرکاری بابوؤں کو نائٹ کلب اور بار مالکان پر کارروائی کے لئے بھرپور چھوٹ دی گئی ہے ۔

      پالیسی کے مطابق  میونسپل صدر اور کمشنر، چندی گڑھ پولیس کے ایس ایس پی ، ڈائریکٹر، صحت کی خدمات اور ایکسائز اور ٹیکسیشن کمشنر اور ڈپٹی کمشنر کی نگرانی میں کام کرنے والی اس نوڈل کمیٹی کو بار اور نائٹ کلب کی تجدید کاری کی اجازت دینے سے انکار کرنے کا حق دیا گیا ہے ۔

      بار اور نائٹ کلب چلانے کی نئی پالیسی میں کہا گیا ہے کہ مختصر لباس میں خواتین کے اشتہارات لگانے اور بے حیائی اور باغیانہ یا سیاسی عدم استحکام کرنے کا امکان ہے ۔ تاہم اس پالیسی کے مسودے میں مختصر لباس پہنے خواتین یا بے حیائی کی وضاحت کے ساتھ ساتھ غداری پر بھی تفصیل سے کچھ نہیں کہا گیا ہے ۔

      مورل پولیسنگ کے نام پر مسلط کردہ انتظامیہ کے اس فیصلے کا شہر کے بار اور نائٹ کلب آپریٹر مخالفت کر رہے ہیں ۔ ان کا کہنا ہے خواتین کو کیا پہننا ہے اور کیا نہیں ، یہ انتظامیہ کس طرح بتا سکتی ہے ۔
      First published: