உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاک مقبوضہ کشمیر میں نظر آئے چین کے فوجی ، ہندوستانی فوج الرٹ پر

    نئی دہلی : دو دن پہلے ہی فوج کی جانب سے بیان آیا تھا کہ اگر پاکستان اور چین کی جانب سے ایک ساتھ حملہ ہو جائے ، تو ہمارے پاس صورت حال کا سامنا کرنے کے لئے وافر فائٹر پلین نہیں ہیں ۔ اسی درمیان ایک چونکانے والی خبر آئی ہے کہ چین کی فوج پیپلز لبریشن آرمی کے فوجی پاکستان کے مقبوضہ کشمیر میں دیکھے گئے ہیں ۔ اس کے بعد سے ہندوستان میں سیکورٹی ایجنسیاں اور فوج انتہائی چوکس ہو گئی ہیں ۔

    نئی دہلی : دو دن پہلے ہی فوج کی جانب سے بیان آیا تھا کہ اگر پاکستان اور چین کی جانب سے ایک ساتھ حملہ ہو جائے ، تو ہمارے پاس صورت حال کا سامنا کرنے کے لئے وافر فائٹر پلین نہیں ہیں ۔ اسی درمیان ایک چونکانے والی خبر آئی ہے کہ چین کی فوج پیپلز لبریشن آرمی کے فوجی پاکستان کے مقبوضہ کشمیر میں دیکھے گئے ہیں ۔ اس کے بعد سے ہندوستان میں سیکورٹی ایجنسیاں اور فوج انتہائی چوکس ہو گئی ہیں ۔

    نئی دہلی : دو دن پہلے ہی فوج کی جانب سے بیان آیا تھا کہ اگر پاکستان اور چین کی جانب سے ایک ساتھ حملہ ہو جائے ، تو ہمارے پاس صورت حال کا سامنا کرنے کے لئے وافر فائٹر پلین نہیں ہیں ۔ اسی درمیان ایک چونکانے والی خبر آئی ہے کہ چین کی فوج پیپلز لبریشن آرمی کے فوجی پاکستان کے مقبوضہ کشمیر میں دیکھے گئے ہیں ۔ اس کے بعد سے ہندوستان میں سیکورٹی ایجنسیاں اور فوج انتہائی چوکس ہو گئی ہیں ۔

    • Pradesh18
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی : دو دن پہلے ہی فوج کی جانب سے بیان آیا تھا کہ اگر پاکستان اور چین کی جانب سے ایک ساتھ حملہ ہو جائے ، تو ہمارے پاس صورت حال کا سامنا کرنے کے لئے وافر فائٹر پلین نہیں ہیں ۔ اسی درمیان ایک چونکانے والی خبر آئی ہے کہ چین کی فوج پیپلز لبریشن آرمی کے فوجی پاکستان کے مقبوضہ کشمیر میں دیکھے گئے ہیں ۔ اس کے بعد سے ہندوستان میں سیکورٹی ایجنسیاں اور فوج انتہائی چوکس ہو گئی ہیں ۔


      ذرائع کے مطابق شمالی ہندوستانی فوجیوں نے شمالی کشمیر کے نوگاؤں سیکٹر کے پاس بنی پاکستان کی چوکیوں میں چینی فوج کے افسران کو دیکھا ۔ وہیں ان کی بات چیت کے کچھ حصوں سے پتہ چلا ہے کہ یہ لوگ یہاں پر کسی تعمیر کے سلسلے میں آئے ہیں ۔


      تاہم فوج کی جانب سے سرکاری طور پر کچھ نہیں کہا گیا ہے لیکن ساری معلومات خفیہ محکمہ کو دی جا رہی ہیں ۔ آپ کو بتا دیں کہ تنگ دھار سیکٹر کے پاس گزشتہ سال بھی چینی فوجیوں کو دیکھا گیا تھا ۔ اس علاقے میں چین حکومت کی کمپنی 970 میگاوٹ کی جہلم- نیلم پن بجلی پروجیکٹ بنا رہی ہے ۔ بتایا جا رہا ہے کہ اس پن بجلی شمالی کشمیر کے باندی پارا میں ہندوستان کی کشن گنگا بجلی پروجیکٹ کے جواب میں بنائی جا رہی ہے ۔


      اس مرتبہ چینی فوجیوں کی بات چیت سے پتہ چلا ہے کہ وہ پی او کے کے قریب کہیں سرنگیں کھودنے کی تیاری کر رہی ہے ۔  یہ سرنگیں ہر موسم میں موجود  رہنے والی سڑک کے لئے کھودی جا رہی ہے ۔


      ماہرین کا خیال ہے کہ جس طرح سے چین پاک مقبوضہ کشمیر میں مسلسل اپنی سرگرمیاں بڑھا رہا ہے ، یہ ہندوستان کے لئے خطرے کی گھنٹی ہو سکتی ہے ۔

      First published: