உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    India China: چین کےنئےسرحدی قانون سےکچھ نہیں ہوگا، آرمی چیف جنرل ایم ایم نروانے نے دیا بیان

    آرمی چیف جنرل ایم ایم نروانے (Army chief Gen. MM Naravane)

    آرمی چیف جنرل ایم ایم نروانے (Army chief Gen. MM Naravane)

    آرمی چیف جنرل ایم ایم نروانے (Army chief Gen. MM Naravane) نے کہا کہ ہم نے کئی اقدامات کیے ہیں اور فوجی توازن کو برقرار رکھا جائے گا۔ آرمی چیف نے کہا کہ وزارت خارجہ نے یہ بھی واضح کر دیا ہے کہ چین کے نئے سرحدی قانون کا دو طرفہ تعلقات پر کوئی اثر نہیں پڑے گا اور ہندوستان اسے قبول نہیں کرتا۔

    • Share this:
      آرمی چیف جنرل ایم ایم نروانے (Army chief Gen. MM Naravane) نے 15 جنوری کو ہونے والے آرمی ڈے سے قبل ایک ورچوئل پریس کانفرنس میں کہا کہ چین کا نیا سرحدی قانون (China’s new border law) یکم جنوری 2022 سے نافذ ہوا ہے۔ اس کے فوجی اثرات کا امکان نہیں ہے، لیکن ایک صورت میں فوج اس سے نمٹنے کے لیے کافی حد تک تیاری کی ہے اور اس سے نمٹنے کے لیے تمام صلاحیتوں میں اضافہ اور قوتوں کے توازن کو بحال کرنے کے لیے ہم تیار ہیں۔

      انہوں نے کہا کہ جہاں تک فوجی اثرات کا تعلق ہے، ہم ابھی تک اس پہلو پر غور کر رہے ہیں۔ اگر فوجی ڈومین میں کوئی ممکنہ نتیجہ نکلتا ہے، تو ہم اس سے نمٹنے کے لیے کافی حد تک تیار ہیں۔ ہم نے کئی اقدامات کیے ہیں اور فوجی توازن کو برقرار رکھا جائے گا۔ آرمی چیف نے کہا کہ وزارت خارجہ نے یہ بھی واضح کر دیا ہے کہ چین کے نئے سرحدی قانون کا دو طرفہ تعلقات پر کوئی اثر نہیں پڑے گا اور ہندوستان اسے قبول نہیں کرتا۔
       جنرل نروانے نے کہا کہ ہمارے آپریشنل حقائق کے مطابق ہم نے افواج کی تنظیم نو اور توازن بحال کیا ہے۔ شمالی سرحدوں پر اضافی فورسز کی دوبارہ سمت بندی، مغربی محاذ کے ساتھ ساتھ، ہماری تعزیری ہڑتال کی صلاحیت کو برقرار رکھتے ہوئے انجام دی گئی ہے۔

      اپنے ابتدائی کلمات میں انہوں نے کہا کہ خطرات کی تشخیص اور اندرونی غور و خوض کے نتیجے میں علاقائی سالمیت کو یقینی بنانے اور پی ایل اے (PLA) افواج اور فوجی انفراسٹرکچر میں بڑے اضافے کو پورا کرنے کے لیے فورسز کی دوبارہ تنظیم اور دوبارہ صف بندی ہوئی ہے۔

      جنرل ناراوانے نے کہا کہ اگرچہ ہندوستان اور چین کی طرف سے مستقل بات چیت کے بعد جزوی طور پر علیحدگی اختیار کی گئی تھی، لیکن خطرہ کسی بھی طرح سے کم نہیں ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ واضح ہے کہ جمود کو یکطرفہ طور پر تبدیل کرنے کی چینی کوششوں پر فوج کا ردعمل مضبوط تھا اور ہندوستان اس ڈیزائن کو ناکام بنانے میں کامیاب رہا۔



      انھوں نے کہا کہ اس نے ہمیں اپنے آپریشنل منصوبوں کا جائزہ لینے کا موقع بھی فراہم کیا اور اس کی بنیاد پر نہ صرف مشرقی لداخ بلکہ پورے شمالی محاذ میں ہماری صلاحیتوں کو بڑھانے کے لیے بہت ساری سرگرمیاں کی گئیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: