உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    چھ ریاستوں کے وزرائے اعلی نے وزیر اعظم مودی سے لاک ڈاون آگے بڑھانے کی اپیل کی ، ممتا بنرجی نے 21 مئی تک کا دیا مشورہ

    چھ ریاستوں کے وزرائے اعلی نے وزیر اعظم مودی سے لاک ڈاون آگے بڑھانے کی اپیل کی ، ممتا بنرجی نے ۲۱ مئی تک کا دیا مشورہ

    چھ ریاستوں کے وزرائے اعلی نے وزیر اعظم مودی سے لاک ڈاون آگے بڑھانے کی اپیل کی ، ممتا بنرجی نے ۲۱ مئی تک کا دیا مشورہ

    ممتا بنرجی نے ایک آن لائن بریفنگ میں کہا کہ پابندیوں کو بڑھایا جانا چاہئے ، کئی ساری چھوٹیں بھی دی جانی چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم 21 مئی تک لاک ڈاون بڑھائے جانے کے حق میں ہیں ۔

    • Share this:
      ملک کی چھ ریاستوں کے وزرائے اعلی نے پیر کو کورونا وائرس کے اثر کو قابو کرنے کیلئے قومی لاک ڈاون کو تین مئی سے آگے بڑھانے کا مشورہ دیا ہے ۔ انہوں نے وزیر اعظم مودی کے ساتھ ایک ویڈیو کانفرنس کے دوران یہ مشورہ دیا ۔ مغربی بنگال کی وزیر اعلی ممتا بنرجی نے کہا کہ لاک ڈاون کو کم سے کم 21 مئی تک کیلئے بڑھا دینا چاہئے ۔ پانچ دیگر وزرائے اعلی میں آندھرا پردیش کے جگن موہن ریڈی ، گوا کے پرمود ساونت ، ہماچل پردیش کے جے رام ٹھاکر ، میزورم کے جورامتھانگ اور میگھالیہ کے کونارڈ سنگما نے بھی کوئی مقررہ تاریخ بتائے لاک ڈاون میں توسیع کی سفارش کی ۔

      رپورٹرس سے بات کرتے ہوئے ممتا بنرجی نے ایک آن لائن بریفنگ میں کہا کہ پابندیوں کو بڑھایا جانا چاہئے ، کئی ساری چھوٹیں بھی دی جانی چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم 21 مئی تک لاک ڈاون بڑھائے جانے کے حق میں ہیں ۔ وزیر اعظم کے ساتھ آج کی میٹنگ سے مجھے یہ سمجھ آیا کہ جو چیزیں انہوں نے کہیں ہیں ، اس کے مطابق لاک ڈٓاون جاری رہے گا ۔

      خیال رہے کہ مغربی بنگال میں ابھی تک 504 معاملات سامنے آئے ہیں ، جس میں سے 109 لوگ صحت یاب ہوکر واپس جاچکے ہیں ۔ جبکہ 20 لوگوں کی موت ہوئی ہے ۔ حالانکہ اس بات کو لے کر کئی مرتبہ اندیشہ ظاہر کیا جاچکا ہے کہ بنگال حکومت نے سبھی معاملات کو اعداد و شمار میں شامل نہیں کیا ہے اور جانچ بھی کم ہوئی ہے ۔

      ادھر ویڈیو کانفرنسنگ کے دوران وزیر اعظم مودی نے وزرائے اعلی سے کہا کہ ہاٹ اسپاٹ زون میں لاک ڈاون جاری رہے گا ۔ حالانکہ کتنی چھوٹیں دی جائیں گی ، یہ ریاست خاص پر منحصر ہوگا اور ان اضلاع میں لگی روک ہٹادی جائے گی جن میں صورتحال میں بہتری آرہی ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: