உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جاری رہے گی ڈی ڈی سی اے کی جانچ ، مرکز کو پریشانی ہے تو عدالت جائے : کیجریوال

    نئی دہلی : ڈی ڈی سی اے میں بدعنوانی کی جانچ کے لئے قائم جانچ کمیشن کو مرکز کی طرف سے غیر قانونی قرار دئے جانے کے بعد وزیر اعلی اروند کیجریوال نے ایل جی اور پی ایم او کو آڑے ہاتھوں لیا ہے ۔

    نئی دہلی : ڈی ڈی سی اے میں بدعنوانی کی جانچ کے لئے قائم جانچ کمیشن کو مرکز کی طرف سے غیر قانونی قرار دئے جانے کے بعد وزیر اعلی اروند کیجریوال نے ایل جی اور پی ایم او کو آڑے ہاتھوں لیا ہے ۔

    نئی دہلی : ڈی ڈی سی اے میں بدعنوانی کی جانچ کے لئے قائم جانچ کمیشن کو مرکز کی طرف سے غیر قانونی قرار دئے جانے کے بعد وزیر اعلی اروند کیجریوال نے ایل جی اور پی ایم او کو آڑے ہاتھوں لیا ہے ۔

    • News18
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی : ڈی ڈی سی اے میں بدعنوانی کی جانچ کے لئے قائم جانچ کمیشن کو مرکز کی طرف سے غیر قانونی قرار دئے جانے کے بعد وزیر اعلی اروند کیجریوال نے ایل جی اور پی ایم او کو آڑے ہاتھوں لیا ہے ۔


      اروند کیجریوال نے ٹویٹ کرکے کہا ہے کہ ڈی ڈی سی اے کی جانچ جاری رہے گی۔ اگرایل جی اور وزیر اعظم کو جانچ کمیشن سے کوئی پریشانی ہے تووہ کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹائیں۔


      اس سے پہلے مرکزی حکومت نے ڈی ڈی سی اے معاملہ کی جانچ کے لئے دہلی کی عام آدمی پارٹی کی حکومت کی طرف سے قائم کردہ جانچ کمیشن کو غیر آئینی اور غیر قانونی قرار دیا ۔


      کیجریوال نے ٹویٹ کرتے ہوئے لکھا کہ ڈی ڈی سی معاملہ کی جانچ کے لئے دہلی حکومت نے ہندوستانی آئین اور قانون کے تحت جانچ کمیشن بنائی ہے۔ مرکز کی رائے دہلی حکومت کے لئے ضروری نہیں ہے۔






      کیجریوال نے دوسرے ٹویٹ میں لکھا کہ جانچ کمیشن مسلسل کام کرے گا۔ اگر ایل جی ، ایم ایچ اے اور پی ایم او کو کوئی شکایت ہے ، تو وہ کورٹ کا رخ کر سکتے ہیں۔ صرف ایک کورٹ ہی ہے ، جو کمیشن کو کام کرنے سے روک سکتا ہے۔

       




      غور طلب ہے کہ دہلی کے لیفٹیننٹ گورنر کے دفتر کی طرف سے آج جاری کئے گئے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ مرکزی وزارت داخلہ نے دہلی حکومت کے ویجلینس ڈائریکٹوریٹ کی جانب سے جاری نوٹیفکیشن کو غیر آئینی اور غیر قانونی قرار دیا ہے ۔

      First published: