ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

دیوریا : چار دنوں سے جاری فرقہ وارانہ تنازع کے بعد صورتحال پرسکون ، مگر کشیدہ ، 31 افراد گرفتار

اترپردیش میں دیوریا کے لار علاقہ میں دسہرہ کی مورتی وسرجن کرنے کے مسئلے پر گزشتہ چار دنوں سے جاری تنازعہ کے بعد آج صورتحال پرسکون ہوئي ہے ، مگرکشیدگی برقرار ہے۔ اس سلسلےمیں ابھی تک 31 لوگوں کو پولس نے گرفتار کیا ہے

  • UNI
  • Last Updated: Oct 16, 2016 02:41 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
دیوریا : چار دنوں سے جاری فرقہ وارانہ تنازع کے بعد صورتحال پرسکون ، مگر کشیدہ ، 31 افراد گرفتار
علامتی تصویر

دیوریا : اترپردیش میں دیوریا کے لار علاقہ میں دسہرہ کی مورتی وسرجن کرنے کے مسئلے پر گزشتہ چار دنوں سے جاری تنازعہ کے بعد آج صورتحال پرسکون ہوئي ہے ، مگرکشیدگی برقرار ہے۔ اس سلسلےمیں ابھی تک 31 لوگوں کو پولس نے گرفتار کیا ہے۔

سرکاری ذرائع نے بتایا کہ کل کثیر تعداد میں پولس فورس تعینات کر کے مورتی وسرجن کیا جا رہا تھا ، اسی دوران عشاء کی نماز کی وجہ سے کچھ دیر کے لیے ٹریفک روک دی گئی تھی۔ اس دوران ایڈیشنل پولس سپرنٹنڈنٹ این کے سنگھ نے مورتی وسرجن میں ساؤنڈ سسٹم کی آواز کم کرنے کے لئے کہا، جس پر معاہدے کے بعد ماحول پھر بگڑ گیا اور لوگ وسرجن یاترا کو چھوڑ کر پولس سے جھڑپ کے بعد پتھراؤ کرنے لگے۔ لاٹھی چارج میں چھ لوگوں کے ساتھ ایڈمرل ویریندر سمیت چند پولیس اہلکار بھی زخمی ہو گئے۔

اس واقعہ کے بعد شر پسند عناصر نے میهرونا میں گرام پردھان توفیق احمد کی فرنیچر کی دکان میں کل دیر رات آگ لگا دی اور پتھراؤ کر کے تقریبا نصف درجن دکانوں کو نقصان پہنچایا۔ پتھراؤ میں دو سرکاری گاڑیوں سمیت چھ گاڑیوں کو نقصان پہنچا ۔

پولس سپرنٹنڈنٹ محمد عمران کے مطابق اس وقت لار علاقے میں مکمل سکون ہے۔ اس معاملے میں 31 افراد کو گرفتار کیا گیا ہے۔ احتیاطی سکیورٹی کیلئے پولس فورس تعینات ہے۔ بھیڑ کے حملے میں پولس کے ایک جوان کو چوٹیں آئی ہیں۔ تاہم، انہوں نے اس واقعہ میں ڈی ایم کے زخمی ہونے کو افواہ قرار دیا۔

First published: Oct 16, 2016 02:41 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading