ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی پہنچیں اناؤ، اجتماعی عصمت دری متاثرہ کے اہل خانہ سے کی ملاقات

لکھنئو کے دو دن کے دورے پر آئیں کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی نے اچانک اپنا پروگرام بدل دیا۔ وہ سیدھے متاثرہ کنبے سے ملنے اناؤ پہنچ گئی ہیں۔

  • Share this:
کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی پہنچیں اناؤ، اجتماعی عصمت دری متاثرہ کے اہل خانہ سے کی ملاقات
پرینکا گاندھی پہنچیں اناؤ، اجتماعی عصمت دری متاثرہ کے اہل خانہ سے کی ملاقات

اناؤ۔ کانگریس جنرل سکریٹری و مشرقی اترپردیش کی انچارج پرینکا گاندھی واڈرا نے اناؤ متأثرہ کے اہل خانہ سے ملاقات کے بعداترپردیش حکومت سے سوال کیا کہ اس نے خواتین کے خلاف روز بروز بڑھتے جرائم کو روکنے کے لئے کیا اقدامات کئے ہیں۔ اناؤ میں عصمت دری اور بعد میں ریپ ملزمین کی جانب سے جلائی گئی متأثرہ کے اہل خانہ سے ملنے کے لئے اناؤ پہنچیں پرینکا نے کہا کہ ریاستی حکومت جواب دے کہ بار بار سیکورٹی کا مطالبہ کرنے والی متأثرہ کو سیکورٹی کیوں نہیں دی گئی۔ نتیجہ یہ ہوا کہ ملزمین نے ہی متأثرہ کوجلا کر مار دیا۔


پرینکا واڈرا نے کنبے کے سبھی اراکین سے علیحدہ علیحدہ بات کی۔ ان کے ساتھ ریاستی کانگریس کے صدر اجے کمار للو اور اناؤ سے سابق رکن پارلیمان انوٹنڈن بھی موجود تھیں۔ متأثرہ کے اہل خانہ سے تبادلہ خیال کرنے کے بعد پرینکا نے میڈیا نمائندوں سے کہا کہ متأثرہ نے بار بار پولیس سیکورٹی کا مطالبہ کیا لیکن اسے سیکورٹی نہیں دی گئی۔ اب اس کے اہل خانہ کو دھمکی دی جارہی ہے۔اہل خانہ نے بھی سیکورٹی کا مطالبہ کیا ہےجو اب تک نہیں ملی ہے۔ واڈرا نے الزام لگایا کہ اس حکومت میں جرم اور جرائم پیشہ افراد کو تحفظ فراہم کیا جا رہا ہے۔


اس سے پہلے پرینکا گاندھی نے ٹویٹ کر یوگی حکومت پر سوال اٹھائے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یوپی میں روز خواتین پر ظلم ہو رہا ہے، حکومت کیا کر رہی ہے؟ پرینکا گاندھی نے ٹویٹ کیا ’’اناؤ کے گذشتہ واقعہ کو ذہن میں رکھتے ہوئے حکومت کی طرف سے متاثرہ کو فوری طور پر سیکورٹی کیوں نہیں دی گئی؟ جس افسر نے اس کا ایف آئی آر درج کرنے سے منع کیا اس پر کیا کارروائی ہوئی؟ اتر پردیش میں ہر روز خواتین پر جو ظلم ہو رہا ہے، اس کو روکنے کے لئے حکومت کیا کر رہی ہے‘‘؟

قابل ذکر ہے کہ گذشتہ جمعرات کو مقدمے کی پیروی کے سلسلے میں رائے بریلی جانے کے لئے صبح گھر سے نکلی عصمت دری متأثرہ کو راستے میں ملزموں نے جلا کرمارنے کی کوشش کی تھی۔ ملزم کے چنگل سے بچنے کے لئے متأثرہ نے جلتی ہوئےجسم کے ساتھ 1800 میٹر تک دوڑتے ہوئے جان بچانے کے لئے مدد طلب کی تھی۔ بعد میں پولیس نے مقامی سمیر پور اسپتال میں داخل کرایا تھا جہاں اس نے پولیس کے سامنے اپنا بیان دیتے ہوئے ملزموں کے نام بھی بتائے تھے۔

مقامی اسپتال سے ضلع اسپتال اور پھر ٹراما سنٹر بھیج دیا گیا تھا۔ بعد میں بہتر علاج کے لئے متأثرہ کو لکھنؤ کے سول اسپتال سے دہلی کے صفدر جنگ اسپتال ائیر لفٹ کرایا گیا تھا ۔لیکن دہلی میں دوران علاج متأثرہ جمعہ کی رات 11:40 منٹ پر زندگی کی جنگ ہارگئی۔ پولیس نے سبھی پانچ ملزمین کو گرفتار کرلیا ہے۔

یو این آئی، اردو کے ان پٹ کے ساتھ
First published: Dec 07, 2019 01:35 PM IST