ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

بہار میں شکست پر کانگریس میں بیان بازی کا سلسلہ جاری، گہلوت کے بعد سلمان خورشید نے سبل پر کسا طنز

بہار الیکشن میں کانگریس کی خراب کارکردگی کو لے کر پارٹی کے کچھ سینئر لیڈروں نے ایک بار پھر مورچہ کھول دیا ہے۔ اس درمیان پارٹی کے سینئر لیڈر سلمان خورشید نے منگل کو باغی لیڈروں پر نشانہ سادھتے ہوئے ایسے پارٹی ارکان کو ' ڈاوٹنگ تھامس' قرار دیا ہے جن کی بےچینی رہ رہ کر سامنے آ جاتی ہے۔

  • Share this:
بہار میں شکست پر کانگریس میں بیان بازی کا سلسلہ جاری، گہلوت کے بعد سلمان خورشید نے سبل پر کسا طنز
سینئر کانگریس لیڈر سلمان خورشید کی فائل فوٹو

نئی دہلی۔ بہار الیکشن میں کانگریس کی خراب کارکردگی کو لے کر پارٹی کے کچھ سینئر لیڈروں نے ایک بار پھر مورچہ کھول دیا ہے۔ اس درمیان پارٹی کے سینئر لیڈر سلمان خورشید (Salman Khurshid) نے منگل کو باغی لیڈروں پر نشانہ سادھتے ہوئے ایسے پارٹی ارکان کو ' ڈاوٹنگ تھامس' قرار دیا ہے جن کی بےچینی رہ رہ کر سامنے آ جاتی ہے۔ دراصل، ڈاوٹنگ تھامس اس شخص کو کہتے ہیں جو کسی بھی چیز پر یقین کرنے سے انکار کرتا ہے جب تک کہ وہ خود نہ تجربہ کرے یا ثبوت نہ ہو۔


فیس بک پر لکھے اپنے پوسٹ میں سلمان خورشید نے مغل بادشاہ بہادر شاہ ظفر (Bahadur Shah Zafar) کی لائنوں سے شروعات کرتے ہوئے لکھا ' نہ تھی حال کی جب ہمیں خبر، رہے دیکھتے اوروں کے عیب وہنر، پڑی اپنی برائیوں پر جو نظر، تو نگاہ میں کوئی برا نہ رہا'۔ مغل بادشاہ ظفر اپنے ناقدین سے اپنی کمیوں کو نظرانداز نہ کرنے کی صلاح دے رہے ہیں۔


سابق مرکزی وزیر نے اپنی پوسٹ میں آگے لکھا ' اگر رائے دہندگان پارٹی کے سیکولر اقدار کو اہمیت نہیں دے رہے ہیں جن کا ہم تحفظ کرتے ہیں تو ہمیں اقتدار میں آنے کے لئے شارٹ کٹ تلاش کرنے کی بجائے طویل جدوجہد کے لئے تیار رہنا چاہئے'۔


بتا دیں کہ کپل سبل (Kapil Sibal) سمیت سینئر کانگریسی لیڈروں نے حال میں اختتام پذیر بہار الیکشن میں پارٹی کی مایوس کن کارکردگی پر سوال اٹھاتے ہوئے نظرثانی کی مانگ کی تھی۔ بہار الیکشن میں کانگریس اور آر جے ڈی اتحاد کو بی جے پی اور نتیش کی قیادت والے گٹھ بندھن کے مقابلے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ ریاست میں ایک بار پھر نتیش کمار کی قیادت میں این ڈی اے کی حکومت بنی ہے۔

سلمان خورشید نے آگے لکھا' اقتدار سے باہر کیا جانا عوامی زندگی میں آسانی سے قبول نہیں کیا جا سکتا، لیکن اگر یہ اصولوں پر مبنی سیاست کا نتیجہ ہے تو اسے احترام کے ساتھ قبول کیا جانا چاہئے۔ اگر اہم اقتدار کے لئے اپنے اصولوں کے ساتھ سمجھوتہ کرتے ہیں تو بہتر ہے کہ ہم اسے چھوڑ دیں'۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Nov 17, 2020 11:34 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading