ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

کانگریس کا انتخابی منشور، جموں کشمیر کی خصوصی پوزیشن میں تبدیلی نہ کرنے کا وعدہ

کانگریس نے کہا کہ ریاست کو خصوصی پوزیشن عطا کرنے والی آئین ہند کی دفعہ 370 کے ساتھ کوئی چھیڑ چھاڑ نہیں کی جائے گی اور اس میں کسی تبدیلی کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

  • UNI
  • Last Updated: Apr 02, 2019 05:55 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
کانگریس کا انتخابی منشور، جموں کشمیر کی خصوصی پوزیشن میں تبدیلی نہ کرنے کا وعدہ
کانگریس صدر راہل گاندھی

کانگریس نے ملک میں بر سر اقتدار آنے کی صورت میں جموں کشمیر میں فوج کی تعداد میں کمی، افسپا کے نفاذ پر نظر ثانی اور ریاست کے مسائل کے حل کے لئے متعلقین کے ساتھ غیر مشروط بات چیت کا سلسلہ شروع کرنے کا وعدہ کیا ہے۔ کانگریس نے کہا کہ ریاست کو خصوصی پوزیشن عطا کرنے والی آئین ہند کی دفعہ 370 کے ساتھ کوئی چھیڑ چھاڑ نہیں کی جائے گی اور اس میں کسی تبدیلی کی اجازت نہیں دی جائے گی۔


منگل کے روز رواں سال کےعام انتخابات کے لئے جاری کئے گئے انتخابی منشور میں کانگریس نے کہا ہے کہ جموں کشمیر کے لوگوں کے مسائل کا حل مذاکرات میں ہی مضمر ہے اور مذاکراتی عمل سے ہی جموں کشمیر کے تینوں خطوں کے لوگوں کی خواہشات کو سمجھا جاسکتا ہے اور اُن کے مسائل کا ایک باعزت حل تلاش کیا جاسکتا ہے۔ مذاکراتی عمل شروع کرنے کے لئے سول سوسائٹی سے وابستہ تین مذاکرات کاروں کو مقرر کیا جائے گا۔

منشور میں کہا گیا کہ کانگریس دو رُخی اپروچ اختیار کرے گی۔ اول سرحد کو سیل کیاجائے گا، دراندازی کو بند کیا جائے گا اور دوسرا لوگوں کے مطالبات سے منصفانہ طور پر نمٹا جائے گا اور لوگوں کے دلوں کو جیتنے کی کوشش کی جائے گی۔


منشور میں کہا گیا ہے کہ جموں کشمیر میں نافذ افسپا اور ڈسٹربڈ ایئریا ایکٹ پر بھی نظر ثانی کی جائے گی اور سیکورٹی کی ضروریات اور لوگوں کے تحفظ کے توازن کو برقرار رکھنے کے تناظر میں مناسب تبدیلیاں کی جائیں گی۔ جموں کشمیر کو خصوصی درجہ عطا کرنے والی آئین ہند کی دفعہ 370 کے بارے میں کانگریس کے الیکشن منشور میں کہا گیا ہے 'کانگریس 26 اکتوبر1947 کو الحاق نامہ پر دستخط ہونے سے جموں کشمیر کے حالات کی شاہد ہے اور کانگریس کا ماننا ہے کہ جموں کشمیر ہندوستان کا حصہ ہے۔ ہم یہ بھی تسلیم کرتے ہیں کہ ریاست کی مخصوص تاریخ اور وہ مخصوص حالات جن کے تحت ریاست کا ہندوستان کے ساتھ الحاق ہوا اور جس کے باعث دفعہ370 آئین ہند میں شامل ہوا۔ آئینی پوزیشن کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کرنے یا اس کو تبدیل کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی'۔

منشور میں کہا گیا کہ کانگریس فوج کی تعیناتی پر نظر ثانی کرکے زیادہ فوجی اہلکاروں کو دراندازی کی مکمل روک تھام کے لئے سر حد پر تعینات کرے گی اور وادی میں فوج اور مرکزی مسلح پیرا ملٹری فورسز کی تعداد میں کمی کرکے جموں کشمیر پولیس کو امن وقانون کی بحالی کی ذمہ داری سونپی جائے گی۔
First published: Apr 02, 2019 05:55 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading