ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

راہل گاندھی ہی ہوں گے 2019 میں اپوزیشن کے مشترکہ وزیراعظم امیدوار: کانگریس ترجمان

کانگریس ترجمان راجیو تیاگی نے دعوی کیا ہے کہ 2019 کے لوک سبھا الیکشن میں مشترکہ اپوزیشن کے لیڈر راہل گاندھی ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی کے خلاف کھڑے ہوئے اپوزیشن کی لیڈر شپ کا سوال بالکل واضح ہے۔

  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
راہل گاندھی ہی ہوں گے 2019 میں اپوزیشن کے مشترکہ وزیراعظم امیدوار: کانگریس ترجمان
کانگریس صدر راہل گاندھی: فائل فوٹو۔

نئی دہلی: کانگریس ترجمان راجیو تیاگی نے دعوی کیا ہے کہ 2019 کے لوک سبھا الیکشن میں مشترکہ اپوزیشن کے لیڈر راہل گاندھی ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی کے خلاف کھڑے ہوئے اپوزیشن کی لیڈر شپ کا سوال بالکل واضح ہے۔


راہل گاندھی کے نام پر کچھ پارٹیسوں سے اتفاق رائے بھی ہوگیا ہے، کچھ سے اتفاق رائے بھی لی جارہی ہے۔ راہل کے نام پر این سی پی، نیشنل کانفرنس، راشٹریہ لوک دل اور سماجوادی پارٹی متفق ہیں۔


نیوز 18 ہندی کے فیس بک لائیو میں راجیو تیاگی نے اس بات کا دعوی کیا۔ ان پٹ ایڈیٹر افسر احمد نے سوال پوچھا کہ کیا مایاوتی کو وزیراعظم امیدوار کے طور پر کانگریس آگے بڑھائے گی؟ جواب میں تیاگی نے کہا کہ یہ نمبر پر منحصر کرے گا۔ کس کے کتنے نمبر آئیں گے، جس کے نمبر زیادہ آئیں گے اس کا لیڈر وزیر اعظم بنے گا۔


 

 

تیاگی نے کہا کہ پورے ملک میں دو پارٹیاں ہیں، بی جے پی اور کانگریس۔ انہی دو پارٹیوں کے آس پاس الیکشن لڑا جائے گا۔ بی جے پی نریندر مودی کی قیادت میں الیکشن لڑے گی اور اپوزیشن راہل گاندھی کے۔ انہوں نے کہا کہ 2019 میں عوام طے کرے گی کہ وزیراعظم کون بنے گا۔ اگر کانگریس پارٹی کی سیٹیں 300 آگئیں تو کیا کہیں گے۔ تب تو وزیراعظم راہل گاندھی ہی بنیں گے۔

راجیو تیاگی کے بیان سے واضح ہے کہ کانگریس راہل گاندھی کو ہی اپوزیشن کی طرف سے وزیراعظم امیدوار کے طور پر پرموٹ کرنا چاہتی ہے۔ جبکہ ممتا بنرجی اور مایاوتی سمیت کچھ لیڈر اس لئے کانگریس اور بی جے پی دونوں کی مخالفت کرنے والے تھرڈ فرنٹ تیار کرنے میں مصروف ہیں۔

سماجوادی پارٹی کبھی وزیراعظم امیدوار کے طور پر مایاوتی کے نام پر راضی نظر آتی ہے تو کبھی ملائم سنگھ یادو کانام لیتی ہے۔ ایسے میں سمجھا جاسکتا ہے کہ 2019 کے عام انتخابات کے لئے بھی اپوزیشن میں اتحا دہوپانا اتنا آسان نہین ہے، بھلے ہی ان پارٹیوں کے لیڈر ایک اسٹیج پر کیوں نہ کھڑے ہورہے ہوں۔

 

 
First published: May 23, 2018 07:42 PM IST