உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    آسام نے بی جے پی کے بہار کے زخم پر رکھا مرہم ، اماں اور دیدی پر ووٹروں کی ممتا ، کیرالہ میں لیفٹ کو اقتدار

    نئی دہلی۔ پانچ ریاستوں آسام، مغربی بنگال، کیرالہ، تمل ناڈو اور پڈوچیری کی سیاسی قسمت کا آج فیصلہ ہونا ہے۔

    نئی دہلی۔ پانچ ریاستوں آسام، مغربی بنگال، کیرالہ، تمل ناڈو اور پڈوچیری کی سیاسی قسمت کا آج فیصلہ ہونا ہے۔

    نئی دہلی۔ پانچ ریاستوں آسام، مغربی بنگال، کیرالہ، تمل ناڈو اور پڈوچیری کی سیاسی قسمت کا آج فیصلہ ہونا ہے۔

    • Share this:

      نئی دہلی۔ پانچ ریاستوں آسام، مغربی بنگال، کیرالہ، تمل ناڈو اور پڈوچیری کی سیاسی قسمت کا آج فیصلہ ہونا ہے۔ ان ریاستوں میں صبح 8 بجے سے ووٹوں کی گنتی شروع ہو جائے گی۔ تمام ریاستوں میں سیکورٹی کے پختہ انتظامات ہیں۔ وہیں پارٹی ہیڈ کوارٹروں میں بھی سرگرمی بڑھ گئی ہے۔


      بنگال میں 90 مقامات پر ووٹوں کی گنتی کا کام ہوگا۔ یہاں سیکورٹی کے لئے 78 کمپنیاں تعینات کی گئی ہیں۔ 294 اسمبلی سیٹوں کے لئے ان 90 مقامات پر 394 كاونٹنگ ہال کا استعمال کیا جائے گا۔ كاونٹنگ سینٹر تک پہنچنے والوں کے لئے تین سطحوں کی حفاظتی بندوبست کی جائے گی۔ موبائل فون کا استعمال صرف آبزرور ہی کر پائیں گے۔


      ترون گوگوئی، سروانند سونووال، ممتا بنرجی، جے للیتا، کروناندھی، اومن چانڈی، اچيوتانندن، اسٹالن اور بدرالدین اجمل جیسے سیاستدانوں کی قسمت سے صبح پردہ اٹھے گا۔ انتخابات میں روپا گنگولی، شری شانت، بايچنگ بھوٹیا جیسی کئی مشہور شخصیات بھی اپنی قسمت آزما رہی ہیں۔

      بنگال میں اس بار 80 فیصد ووٹنگ ہوئی ہے جو کہ 2011 میں ہوئے 84 فیصد کے مقابلے 4 فیصد کم ہے۔ وہیں سال 2011 میں جب ممتا بنرجی نے ریاست میں حکومت بنا کر تاریخ رقم کی تھی، تب ٹی ایم سی نے 226 سیٹوں پر الیکشن لڑا تھا۔ اس وقت ٹی ایم سی نے نہ صرف 184 سیٹوں پر قبضہ کیا، بلکہ 50 فیصد ووٹ بھی حاصل کئے تھے۔

      آسام کی 126 نشستوں کے لئے دو مراحل میں 84 فیصد ووٹنگ ہوئی ہے جو کہ 2011 کے 75 فیصد پولنگ کے مقابلے تقریبا 9 فیصد زیادہ ہے۔ سال 2011 میں کانگریس نے 126 سیٹوں پر الیکشن لڑا تھا جس میں اسے 78 سیٹوں پر جیت حاصل ہوئی تھی جبکہ بی جے پی نے 120 نشستوں پر امیدوار اتارے تھے، لیکن اسے محض 5 سیٹوں پر جیت حاصل ہوئی تھی اور صرف 12 فیصد ووٹ ملے تھے۔
      First published: