ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

جموں وکشمیر: پولنگ افسرکوآیا تھا ہارٹ اٹیک، سی آرپی ایف جوان نےخود 'ڈاکٹر' بن کرایسے بچالی جان

دوسرے مرحلے کی ووٹنگ کے دوران الیکشن افسراحسان الحق کوہارٹ اٹیک آیا، جس کےبعد سی آرپی ایف جوان سریندرکمارنےسی پی آراورمنہ سے منہ میں سانس دے کران کی جان بچائی۔

  • Share this:
جموں وکشمیر: پولنگ افسرکوآیا تھا ہارٹ اٹیک، سی آرپی ایف جوان نےخود 'ڈاکٹر' بن کرایسے بچالی جان
سی آرپی ایف جوان کی سمجھ بوجھ سےکشمیرمیں ووٹنگ کےدوران الیکشن افسرکی بچی جان۔ (تصویر: ٹوئٹر)۔

جموں وکشمیرمیں جمعرات کو ہوئے دوسرے مرحلے کی ووٹنگ کے دوران ایک سی آرپی ایف جوان نے اپنی سمجھ بوجھ اوردانشمندی سے ایک کشمیری الیکشن افسرکی جان بچائی۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق صبح تقریباً 9 بجے بچپورا کےایک ووٹنگ مرکزمیں تعینات 28 بٹالین کےکانسٹبل سریندرکمارنےدیکھا کہ وہاں موجود الیکشن افسراحسان الحق کی طبعیت خراب ہورہی ہے۔ انہیں ابتدائی طبی مدد دی جارہی تھی، جب وہ اچانک بے ہوش ہوکرگرگئے۔


ریڈ کراس سوسائٹی کی طرف سے ٹریننگ ملے 50 سی آرپی ایف جوانوں میں سے ایک سریندرکمارنےایمرجنسی نمبروں پرکال لگائے، لیکن کہیں سے بھی فوری طورپرکوئی مدد نہیں مل پائی۔ اس کے بعد انہوں نے اپنے سینئرافسرڈاکٹرسنید خان سے مدد مانگی۔


دراصل احسان الحق کوہارٹ اٹیک آیا تھا۔ اگلے45 منٹ تک سریندرکمارنےفون پرڈاکٹرخان کے مشورے کے مطابق احسان الحق پرسی پی آراورمنہ سے منہ میں سانس دینے کا عمل کیا۔ ڈاکٹرکے حکم کے مطابق سریندرکمارنے 30 سی پی آراورتین بارمنہ سے منہ میں سانس دیا۔ 10 بجے کے بعد ایمبولینس آئی اوراحسان الحق کواسپتال پہنچایا گیا۔ ڈاکٹروں کے مطابق وقت پردیئےگئےعلاج سے ان کی جان بچ گئی۔

First published: Apr 20, 2019 01:41 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading