உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    CWC Meeting: اشوک گہلو سمیت کئی لیڈران نے راہل گاندھی سے کی اپیل، پھر بن جائیں کانگریس کے صدر

    Youtube Video

    خیال رہے کہ کانگریس کے سینئر لیڈروں کا بڑا دھڑا لمبے عرصے سے پارٹی میں قیادت کی تبدیلی کا مطالبہ کر رہا ہے۔

    • Share this:
      کانگریس میں داخلی کھینچ تان کے بیچ آج پارٹی کی ورکنگ کمیٹی کی میٹنگ جاری ہے۔ سی ڈبلیو سی (Congress Working Committee) کے اجلاس میں کئی اہم امور پرتبادلہ خیال کیا جارہاہے۔ اس میٹنگ میں ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال، تنظیمی انتخابات، نئے صدر کے چناؤ اور پانچ ریاستوں میں ہونیوالے اسمبلی انتخابات سمیت مختلف امور پر بات چیت ہوسکتی ہے۔خیال رہے کہ کانگریس کے سینئر لیڈروں کا بڑا دھڑا لمبے عرصے سے پارٹی میں قیادت کی تبدیلی کا مطالبہ کر رہا ہے۔ جی ٹوئنٹی تھری کے نام سے مشہور اس گروپ کے لیڈر پارٹی قیادت پر سی ڈبلیو سی کا اجلاس بلانے کے لیے مسلسل دباؤ بھی ڈال رہے تھے۔ پارٹی کے ان غیر مطمئن لیڈروں کا ماننا ہے کہ کانگریس کو ایک کل وقتی صدر کی ضرورت ہے تب ہی طاقتور حریف کا مقابلہ کیا جاسکتا ہے۔

      کانگریس کے گروپ 23 کے نام سے جانے جانے والے سینئر لیڈروں کا ایک گروپ پارٹی میں کل وقتی صدر کے انتخاب کے لیے ایک طویل عرصے سے مسلسل مطالبہ کر رہے ہیں۔ یہ رہنما پارٹی قیادت پر ورکنگ کمیٹی کا اجلاس بلانے کے لیے دباؤ بھی ڈال رہے تھے ، جس کے پیش نظر اس میٹنگ اہم سمجھا جا رہا ہے۔

      دھڑے کے لیڈروں کا کہنا ہے کہ پارٹی کو بھارتیہ جنتا پارٹی کا مقابلہ کرنے کے لیے کل وقتی صدر کی اشد ضرورت ہے۔ پہلی بار پارٹی کے سینئر لیڈر عبوری صدر سونیا گاندھی سے کل وقتی صدر کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

       

      میٹنگ میں سینئر لیڈر غلام نبی آزاد ، کپل سبل وغیرہ کی طرف سے اٹھائے جانے والے مسائل پر بحث کے ساتھ ساتھ مختلف ریاستوں میں کانگریس میں جاری تنازع ، چین کی دراندازی ، مہنگائی ، کسانوں کا مسئلہ اور دیگر موضوعات پر بات چیت متوقع ہے۔

      کانگریس صدر سونیا گاندھی نے پارٹی میں کل وقتی صدر کے لیے تنظیمی انتخابات کرانے کا مطالبہ کرنے والے لیڈروں کو منھ توڑ جواب دیتے ہوئے کہا کہ کانگریس ورکنگ کمیٹی نے انہیں 2019 میں جو ذمہ داری سونپی ہے اس میں وہ سب کو ساتھ لے کر چلی ہیں اورپارٹی کو مضبوط بنانے کے لئے انہوں نے اس ذمہ داری کو بخوبی اداکیا ہے۔ سونیا گاندھی نے ہفتہ کو یہاں پارٹی ہیڈ کوارٹر میں کانگریس کی اعلیٰ ترین پالیسی ساز ادارہ ورکنگ کمیٹی کی میٹنگ کی صدارت کرتے ہوئے کہا کہ تنظیم میں انتخاب کرانے کامطالبہ پارٹی میں ہرطرف سے ہورہا ہے اور سب کے جذبات کے مطابق کانگریس کی مضبوطی کے لیے تنظیمی انتخابات ہونے چاہئیں لیکن پارٹی کے تمام لیڈران اورکارکنان کو اس سے پہلے متحد ہوکرپارٹی کے مفادات کو سب سے اہم رکھتے ہوئے کام کرنے کی ضرورت ہے۔

      انہوں نے کہا کہ پارٹی میں تنظیمی انتخابات کرانے یا دیگر امور کو پارٹی کے اندراٹھایا جانا چاہیے۔ پارٹی کے داخلی امور کو عوامی پلیٹ فارم یا میڈیا کے ذریعہ نہیں اٹھایا جانا چاہیے۔ ان کاکہنا تھاکہ انہوں نے ایک کل وقتی صدر کے طورپر بخوبی اپنی ذمہ داری اداکی ہے اور عوامی اہمیت کے مسائل اٹھائے ہیں اور انہیں بغیر سوچے سمجھے نہیں جانے دیا ہے۔ پارٹی کے لیڈران جو بھی کہتے ہیں انہوں نے اس پر توجہ دی ہے لیکن میڈیا کے ذریعہ کوئی بھی بات ان سے نہیں کی جاسکتی ہے۔

      سونیا  گاندھی نے کہا کہ کانگریس کو مضبوط بنانے کے لیے سب کو مل کر کام کرنے اور ذاتی مفادات سے قطع نظر پارٹی کے مفادات کو سب سے اہم مانتے ہوئے کام کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ 2019 میں کانگریس ورکنگ کمیٹی نے ہی انہیں عبوری صدر کے طور پر کام کرنے کی ذمہ داری سونپی تھی اوروہ اس عہدے پر تب سے ذمہ داری سے کام کر رہی ہیں اور انہوں نے سب کو ساتھ لے کر چلنے کوشش کی۔ دلتوں، کسانوں، قبائلیوں، غریبوں، پسماندہ، کمزور طبقات سب کا مدا وہ اٹھاتی رہی ہیں۔

      انہوں نے کہا کہ پارٹی کے تنظیمی انتخابات اس سال جون میں کرانے کا فیصلہ کیا گیا تھا، لیکن کورونا وبا کی دوسری لہر کی وجہ سے یہ انتخابات وقت پر نہیں ہو سکے۔ کوروناکو ہرانے کے لیے ہر ایک کو اس کے لیے مقرر کردہ ضوابط پر عمل کرنا تھا اس لیے انتخابات نہیں ہو سکتے تھے۔ تنظیم میں انتخابات ہونا ہر ایک کا جذبہ ہے لیکن پارٹی رہنماؤں کو اس طرح کے مدے تنظیم کے اندر ہی اٹھانے چاہیے اور پارٹی کے اندرکے مدے میڈیا کے ذریعہ سامنے نہیں آنےچاہیے تھے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: