ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

مقتول اخلاق کے مجبور اہل خانہ نے گاؤں چھوڑا، انتظامیہ نے بساہڑا میں نکالا امن مارچ

دادری: گوشت کھانے کی افواہ پر مشتعل بھیڑ کے ذریعہ پیٹ پیٹ کر موت کے گھاٹ اتار دئے گئے محمد اخلاق کے اہل کانہ آخر کار دادری کے بساهڑا گاؤں سے دہلی چلے گئے ہیں۔

  • News18
  • Last Updated: Oct 07, 2015 07:15 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
مقتول اخلاق کے مجبور اہل خانہ نے گاؤں چھوڑا، انتظامیہ نے بساہڑا میں نکالا امن مارچ
دادری: گوشت کھانے کی افواہ پر مشتعل بھیڑ کے ذریعہ پیٹ پیٹ کر موت کے گھاٹ اتار دئے گئے محمد اخلاق کے اہل کانہ آخر کار دادری کے بساهڑا گاؤں سے دہلی چلے گئے ہیں۔

دادری: گوشت کھانے کی افواہ پر مشتعل بھیڑ کے ذریعہ پیٹ پیٹ کر موت کے گھاٹ اتار دئے گئے محمد اخلاق کے اہل کانہ آخر کار دادری کے بساهڑا گاؤں سے دہلی چلے گئے ہیں۔ ادھر بساهڑا میں انتظامیہ اور پولیس نے آج امن مارچ نکالا اور فرقہ وارانہ ہم آہنگی برقرار رکھنے کے لئے امن کمیٹی کی میٹنگ کی۔


اپنے مشفق والد کا سایہ ہمیشہ کے لئے کھو چکے محمد سرتاج نے کہا کہ ان کا خاندان کل رات دہلی چلا گیا۔ اخلاق کو موت کے گھاٹ اتارنے والی تقریبا 200 لوگوں کی بھیڑ نے سرتاج کے 22 سالہ بھائی دانش کو بھی شدید طور پر زخمی کر دیا تھا۔


ادھر گوتم بدھ نگر کے ضلع مجسٹریٹ نے بساهڑا اور اس کے ارد گرد کے دیہاتوں میں امن کمیٹی کی ایک میٹنگ کی، جبکہ پولیس نے بھی امن مارچ نکالا۔ مختلف تنظیموں کے رہنما بساهڑا میں اب بھی کیمپ لگائے ہوئے ہیں جبکہ انتظامیہ نے گاؤں کے باشندوں کو چھوڑ کر سبھی لوگوں کے گاؤں میں آنے پر بندش لگا رکھی ہے۔


ضلع مجسٹریٹ این پی سنگھ نے گاؤں میں آنے والے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ اپنی تقریروں سے فرقہ وارانہ ہم آہنگی خراب نہ کریں ۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ کسی بھی شخص کو امن میں خلل ڈالنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ انتظامیہ نے کہا کہ حکم امتناعی اب بھی نافذ ہے۔ گاؤں کی سرحد پر اب بھی بیريكیڈ لگے ہوئے ہیں اور پولیس فورس تعینات ہے۔ افسران گاؤں میں داخل ہو رہی تمام گاڑیوں کی پوری جانچ کر رہے ہیں۔

First published: Oct 07, 2015 07:15 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading