உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Nupur Sharma: نوپورشرما کی عرضی پر سماعت، ذاتی حملوں پرسپریم کورٹ جج نےکی مذمت

    Youtube Video

    جسٹس پاردی والا نے خبردار کیا کہ ججوں پر ان کے فیصلوں کے لیے ذاتی حملے ملک میں ایک خطرناک منظر نامے کا باعث بنیں گے جبکہ یہ تجویز بھی پیش کی کہ ڈیجیٹل میڈیا کے ذریعے ٹرائلز انصاف کی فراہمی کے عمل میں بے جا مداخلت کا مطالبہ کرتے ہیں۔

    • Share this:
      سپریم کورٹ (Supreme Court) کے جج جسٹس جے بی پارڈی والا نے نوپور شرما (Nupur Sharma) کے پیغمبر محمد صلی اللہ علیہ وسلم (Prophet Mohammad) کے بارے میں کیے گئے ریمارکس پر تنقید کی۔ انھوں نے ججوں پر کیے جانے والے ذاتی حملے کی مذمت کی۔

      جسٹس پاردی والا نے خبردار کیا کہ ججوں پر ان کے فیصلوں کے لیے ذاتی حملے ملک میں ایک خطرناک منظر نامے کا باعث بنیں گے جبکہ یہ تجویز بھی پیش کی کہ ڈیجیٹل میڈیا کے ذریعے ٹرائلز انصاف کی فراہمی کے عمل میں بے جا مداخلت کا مطالبہ کرتے ہیں۔

      اے این آئی کے مطابق جسٹس جے بی پارڈی والا سپریم کورٹ کے بنچ کا حصہ تھے۔ انھوں نے پیغمبر اسلام کے بارے میں بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کی نوپور شرما کے تبصروں پر تنقید کی تھی، کہا کہ ججوں کے فیصلوں کے لیے ان پر ذاتی حملے ایک ’خطرناک منظر‘ کا باعث بنتے ہیں۔ ججوں کو یہ سوچنا ہوگا کہ قانون واقعی کیا سوچتا ہے جب کہ میڈیا کیا سوچتا ہے کی فکر پایا جاتی ہے۔

      جسٹس پاردی والا نے کہا کہ سوشل اور ڈیجیٹل میڈیا بنیادی طور پر ججوں کے خلاف ذاتی رائے کا اظہار کرنے کا سہارا لے رہا ہے، بجائے اس کے کہ ان کے فیصلوں کی تعمیری تنقی کی جائے۔ یہی چیز عدالتی ادارے کو نقصان پہنچا رہی ہے اور اس کے وقار کو کم کر رہی ہے۔

      انھوں نے کہا کہ ججوں پر ان کے فیصلوں کے لیے ذاتی حملے ایک خطرناک منظر نامے کی طرف لے جاتے ہیں جہاں ججوں کو یہ سوچنا پڑتا ہے کہ میڈیا کیا سوچتا ہے بجائے اس کے کہ قانون واقعی کیا سوچتا ہے۔ اس سے قانون کی حکمرانی کو نقصان پہنچتا ہے۔ سوشل اور ڈیجیٹل میڈیا بنیادی طور پر ذاتی رائے کے اظہار کا سہارا لے رہا ہے۔ ججوں کے خلاف ان کے فیصلوں کی تعمیری تنقیدی کے بجائے یہ عدالتی ادارے کو نقصان پہنچا رہا ہے اور اس کے وقار کو پست کر رہا ہے۔ فیصلوں کا علاج سوشل میڈیا سے نہیں بلکہ درجہ بندی میں اعلیٰ عدالتوں سے ہوتا ہے۔ جج کبھی اپنے ذریعے بات نہیں کرتے۔ ہندوستان میں سوشل میڈیا کو خالصتاً قانونی اور آئینی مسائل کی سیاست کرنے کے لیے کثرت سے استعمال کیا جاتا ہے۔

      یہ بھی پڑھئے: بی جے پی پر بڑھا تلنگانہ کے لوگوں کا یقین، ریاست کی ترقی کیلئے پرعزم: PM مودی

      انہوں نے مزید کہا کہ جدید دور کے تناظر میں ڈیجیٹل میڈیا کے ذریعے ٹرائل انصاف کی فراہمی کے عمل میں ایک بے جا مداخلت ہے اور کئی بار لکشمن ریکھا کو پار کر دیتے ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں: 'اقلیتوں میں کمزور اور محروم طبقات کے درمیان بھی جائیں': PM مودی نے بی جے پی کارکنان سے کہا

      ایودھیا کیس کو مثال کے طور پر پیش کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ زمین اور ٹائٹل کا تنازع تھا لیکن جب حتمی فیصلہ آیا، اس معاملے نے سیاسی رنگ پکڑ لیا۔ متنازعہ تنازعہ جو کہ ملک کی عدالت میں ہزاروں صفحات پر مشتمل بلا شبہ سب سے قدیم مقدمہ زیر التواء تھا، یہ وہ جگہ ہے جہاں آئینی عدالت کے سامنے کسی بھی عدالتی کارروائی ختم ہو سکتی ہے اور اس تنازعہ کا فیصلہ کرنے والے ججز تھوڑا سا ہل سکتے ہیں، جو قانون کی حکمرانی کے خلاف ہے۔ یہ قانون کی حکمرانی کے لیے صحت مند نہیں ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: