உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    میڈیا دارالعلوم کے پہلے کے فتووں کو ڈاکٹر ذاکر نائیک کے خلاف ہتھیار کے طور پراستعمال نہ کرے: دارالعلوم دیوبند

    دیوبند۔  معروف داعی اسلام  ڈاکٹر ذاکر نائیک کے بارے میں جاری میڈیا کی ہنگامہ آرائی کے درمیان دیوبند کے علماء نے کہا کہ تحقیقات سے پہلے کسی نتيجے پر پہنچے بغیر ان کے خلاف کوئی کارروائی مناسب نہیں ہے۔

    دیوبند۔ معروف داعی اسلام ڈاکٹر ذاکر نائیک کے بارے میں جاری میڈیا کی ہنگامہ آرائی کے درمیان دیوبند کے علماء نے کہا کہ تحقیقات سے پہلے کسی نتيجے پر پہنچے بغیر ان کے خلاف کوئی کارروائی مناسب نہیں ہے۔

    دیوبند۔ معروف داعی اسلام ڈاکٹر ذاکر نائیک کے بارے میں جاری میڈیا کی ہنگامہ آرائی کے درمیان دیوبند کے علماء نے کہا کہ تحقیقات سے پہلے کسی نتيجے پر پہنچے بغیر ان کے خلاف کوئی کارروائی مناسب نہیں ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      دیوبند۔  معروف داعی اسلام  ڈاکٹر ذاکر نائیک کے بارے میں جاری میڈیا کی ہنگامہ آرائی کے درمیان دیوبند کے علماء نے کہا کہ تحقیقات سے پہلے کسی نتيجے پر پہنچے بغیر ان کے خلاف کوئی کارروائی مناسب نہیں ہے۔ ممتاز تعلیمی ادارہ دارالعلوم دیوبند اور سماجی اور مذہبی تنظیم جمعیت علماء ہند (ارشد)گروپ نے آج واضح کیا کہ ذاکر نائیک سے ان
      کے نظریاتی اختلافات ہیں۔ ڈاکٹر نائیک کے خلاف دارالعلوم کی جانب سے بہت پہلے فتوی جاری کیا گیا لیکن ان فتووں کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ہم ان کے خلاف ہیں۔


      دارالعلوم کے قائم مقام مہتمم مولانا عبدالخالق مدراسی نے ڈاکٹر ذاکر نائیک کو دارالعلوم سے جوڑ کر میڈیا میں آ رہی خبروں پر اعتراض کرتے ہوئے کہا کہ بغیر تحقیقات کے کسی کو مجرم تسلیم کر لینا مناسب نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں نہیں لگتا کہ ذاکر نائیک دہشت گردی کی حمایت کرتے ہیں۔


      دارالعلوم کے پی آر او اشرف عثمانی نے ڈاکٹر ذاکر نائیک کے سلسلے میں ادارے کی طرف سے پہلے جاری کئے گئے فتووں کے بارے میں’يواین آئی ‘سے کہا کہ مسلمانوں کے چار امام ابو حنیفہؒ،شافعیؒ، حنبلیؒ اور مالکیؒ ہیں۔ دیوبندی مسلک کے مسلمان امام ابو حنیفہ ؒکے پیروکار ہیں۔ دارالعلوم نے جو فتوی جاری کیا تھا ان میں کہا گیا تھا کہ ڈاکٹر نائیک کسی بھی نظریے کے امام کے ماننے والے نہیں ہیں۔ ان کی اپنی سوچ اور اسلامی تشریحات ہیں ۔اس لئے دارالعلوم ان کی حمایت نہیں کر سکتا اور مسلمانوں کو ڈاکٹر ذاکر کے خیالات کو نہ سننا چاہئے، نہ عمل کرنا چاہئے۔


      Darul_Uloom_Deoband


      اشرف عثمانی کے مطابق ان فتووں کا آج کے تناظر میں یہ مطلب نہیں نکالا جانا چاہئے کہ دیوبندی علماء کی نظر میں ڈاکٹر نائیک کے خیالات اور تعلیمات دہشت گردی کی حوصلہ افزائی کرنے والے ہیں۔ اشرف عثمانی نے کہا کہ ادارے کے مہتمم مفتی ابو القاسم نعمانی عید کی چھٹیوں پر ہیں ۔ان سے میڈیا میں شائع ہو رہی خبروں کی بابت غور و خوض کے بعد دارالعلوم کے نائب مہتمم عبدالخالق مدراسی کی جانب سے بیان جاری کیا گیا ہے جس میں واضح انداز میں کہا گیا ہے کہ میڈیا دارالعلوم کے پہلے کے فتووں کو ڈاکٹر نائیک کے خلاف ہتھیار کے طور پر استعمال نہ کرے۔

      First published: