உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    دستکاروں کی وراثت بچانے کے اقدامات کر رہی حکومت : مختار عباس نقوی

    مختار عباس نقوی نے کہا کہ حکومت دستکاروں اور دستکاروں کی وراثت بچانے کے لئے مختلف سطحوں پر غور خوض کر رہی ہے۔

    مختار عباس نقوی نے کہا کہ حکومت دستکاروں اور دستکاروں کی وراثت بچانے کے لئے مختلف سطحوں پر غور خوض کر رہی ہے۔

    مختار عباس نقوی نے کہا کہ حکومت دستکاروں اور دستکاروں کی وراثت بچانے کے لئے مختلف سطحوں پر غور خوض کر رہی ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      نئی دہلی۔ اقلیتی امور کے وزیر مختار عباس نقوی نے دستکارطبقے کے نوجوانوں کو خود روزگار کے لئے ’مدرا یوجنا‘کا فائدہ اٹھانے کا مشورہ دیتے ہوئے آج کہا کہ حکومت دستکاروں اور دستکاروں کی وراثت بچانے کے لئے مختلف سطحوں پر غور خوض کر رہی ہے۔مختار عباس نقوی نے قومی اقلیتی ترقی اور فنانس کارپوریشن (این ایم ڈی ایف سی ) کی طرف یہاں فنانس مینجمنٹ پر منعقد ورکشاپ کے افتتاح کے موقع پر یہ بات کہی۔ انہوں نے کہا کہ دستکار اور کاریگر ملک کے اہم ورثہ ہیں جو کشمیر سے لے کر کنیا کماری تک پھیلے ہوئے ہیں۔ لیکن، روزگار کا فقدان اور اس روزگار میں منافع نہ رہنے کی وجہ سے اب ان خاندانوں کے بچے اپنا پشتینی پیشہ چھوڑ کردوسرے کام کی طرف بھاگ رہے ہیں۔

      انہوں نے کہا "حکومت  کوشش کر رہی ہے کہ اس وراثت کو کس طرح مضبوط کر سکیں، ان کے لئے کس طرح روزگار مہیا کرا سکیں. مالی مدد اور تربیت کے ذریعے حکومت ان کے ورثے کو بچانے کی کوشش کر رہی ہے‘‘۔

      مرکزی وزیر نے کہا کہ حکومت نے اپنا روزگار شروع کرنے والے نوجوانوں کے لئے ’مدرا یوجنا ‘ شروع کی ہے۔ اس کے تحت 20 سے 30 لاکھ روپے کا قرض دیا جاتا ہے جو اپنا روزگار کے لئے کافی ہے۔ اقلیتی طبقے کے نوجوان بھی اس کا فائدہ لے سکتے ہیں۔

      انہوں نے اس کے نوجوانوں کو سستا قرض فراہم کرنے کے لئے این ایم ڈی ایف سی کو ان کے پاس جا کر قرض دینے کا بھی مشورہ دیا۔
      First published: