உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہندوستان میں گڈس اینڈ سروس ٹیکس کے معیار کی شرح 18 فیصد سے زیادہ منظور نہیں: چدمبرم

    نئی دہلی۔ کانگریس نے آج پھر اس بات کا اعادہ کیا کہ ملک میں گڈس اینڈ سروس ٹیکس(جی ایس ٹی) کے معیار کی شرح 18 فیصد سے زیادہ نہیں ہونی چاہئے۔

    نئی دہلی۔ کانگریس نے آج پھر اس بات کا اعادہ کیا کہ ملک میں گڈس اینڈ سروس ٹیکس(جی ایس ٹی) کے معیار کی شرح 18 فیصد سے زیادہ نہیں ہونی چاہئے۔

    نئی دہلی۔ کانگریس نے آج پھر اس بات کا اعادہ کیا کہ ملک میں گڈس اینڈ سروس ٹیکس(جی ایس ٹی) کے معیار کی شرح 18 فیصد سے زیادہ نہیں ہونی چاہئے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی۔ کانگریس نے آج پھر اس بات کا اعادہ کیا کہ ملک میں گڈس اینڈ سروس ٹیکس(جی ایس ٹی) کے معیار کی شرح 18 فیصد سے زیادہ نہیں ہونی چاہئے اور حکومت یہ یقین دہانی کرائے کہ اس بل کو قانونی شکل دینے کے لئے لائے جانے والے مرکزی جی ایس ٹی اوربین ریاستی جی ایس ٹی بلوں میں معیاری شرح کا ٹیکس 18 فیصد ہی رکھا جائے گا۔ راجیہ سبھا میں جی ایس ٹی سے متعلق آئینی ترمیمی بل پر بحث کا آغاز کرتے ہوئے کانگریس کے سینئر لیڈر اور سابق وزیر خزانہ پی چدمبرم نے کہا کہ ان کی پارٹی نے کبھی بھی جی ایس ٹی کی مخالفت نہیں کی۔ کانگریس کا بنیادی مقصد یہ ہے کہ یہ ٹیکس اس طرح سے لاگو کیا جانا چاہئے کہ لوگوں پر مہنگائی کی بے تحاشہ مار نہ پڑے۔


      انہوں نے کہا کہ چیف اقتصادی مشیر کی سربراہی میں قائم کمیٹی کی رپورٹ میں آمدنی مطلق شرح ( آر این آر)کو 15 سے ساڑھے پندرہ فیصد اور جی ایس ٹی کی معیار ی شرح 18 فیصد رکھنے کی سفارش کی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس کا بھی یہی خیال ہے کہ موجودہ اقتصادی صورت حال کے پیش نظر معیاری شرح 18 فیصد سے زیادہ نہیں ہونی چاہئے۔انہوں نے دعوی کیا کہ 70 فیصد چیزیں معیاری شرح کے دائرے میں ہی رہیں گی اور اس سے مہنگائی کی شرح نسبتا قابو میں رہے گی۔


      کانگریس رکن نے کہا کہ اگر جی ایس ٹی کی شرح 23 یا 24 فیصد مقرر کی جاتی ہے تو اس ٹیکس کو نافذ کرنے کا مقصد ہی ناکام ہو جا ئے گا۔ سروس ٹیکس کی شرح بڑھنے سے بے تحاشہ مہنگائی تو بڑھے گی ہی لوگ ٹیکس کی چوری بھی کرنا بھی شروع کر دیں گے اور اس کا اثر ریوینیو پر پڑے گا۔

      First published: