ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

مہاراشٹر: سپریم کورٹ نے حکومت کو دی نوٹس، حکومت تشکیل سے متعلق دستاویزات طلب، پیرکو ہوگی معاملے کی دوبارہ سماعت

جسٹس این وی رمن، جسٹس اشوک بھوشن اور جسٹس سنجیو کھنہ کی خصوصی بنچ نے اتوار کے روز ہوئی سماعت کے دوران مرکزی حکومت کی جانب سے پیش ہو ئےسالیسٹر جنرل تشارمہتہ کو ہدایت دی کہ پیرکی صبح ساڑھے 10 بجے تک گورنرکی جانب سے بی جے پی کو حکومت تشکیل کے لئے مدعوکرنےسے متعلق خط اوروزیراعلی دیویندرفڑنویس کے پاس ممبران اسمبلی کی حمایت کا خط دستیاب کرائیں۔

  • Share this:
مہاراشٹر: سپریم کورٹ نے حکومت کو دی نوٹس، حکومت تشکیل سے متعلق دستاویزات طلب، پیرکو ہوگی معاملے کی دوبارہ سماعت
سپریم کورٹ نے مہاراشٹر میں حکومت تشکیل سے متعلق دستاویزات طلب کئے

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے مہاراشٹرمیں فڑنویس حکومت تشکیل سے متعلق دستاویزات پیر کی صبح تک دستیاب کرانے کی مرکزی حکومت کو ہدایت دی ہے۔ جسٹس این وی رمن، جسٹس اشوک بھوشن اور جسٹس سنجیوکھنہ کی خصوصی بنچ نےاتوارکے روز ہوئی سماعت کے دوران مرکزی حکومت کی جانب سے پیش ہو ئےسالیسٹر جنرل تشار مہتہ کو ہدایت دی کہ وہ اسے کل صبح ساڑھے 10 بجے تک گورنر کی جانب سے بی جے پی کو حکومت تشکیل کے لئے مدعو کرنے سے متعلق خط اوروزیراعلی دیویندر فڑنویس کے پاس ممبران اسمبلی کی حمایت کا خط دستیاب کرائیں۔

عدالت نےکہا کہ وہ اس معاملے میں کل صبح ساڑھے 10 بجے دوبارہ سماعت کرے گی اور اپنا فیصلہ سنائے گی۔ بنچ کی جانب سے جسٹس این وی رمن نے عبوری حکم جاری کرتے ہوئے کہا کہ ’’اس عرضی میں یہ مسئلہ اٹھایا گیا کہ کیا 23 نومبرکوحکومت تشکیل کرنے کے لئے گورنرکا فیصلہ غیرآئینی ہے؟ اس معاملے کے تصفیہ کےلئے ہم تشار مہتہ سے درخواست کرتے ہیں کہ وہ دونوں خط ہمیں کل صبح ساڑھے 10 بجے تک دستیاب كرائیں، پہلا گورنر کی جانب سے حکومت تشکیل سے متعلق دیا گیا خط اور دوسرا دیویندرفڑنویس کے پاس اکثریت کا خط‘‘۔


 




سپریم کورٹ میں معاملے سماعت شروع ہوتے ہی کانگریس کی طرف سے پیش سینئروکیل کپل سبل نے کہا کہ ہم معافی مانگتے ہیں کہ آپ کواتوارکوبلانا پڑا۔ اس پرعدالت نے کہا کہ کوئی بات نہیں۔ سماعت کے دوران جسٹس بھوشن نے مہاراشٹراسمبلی میں جلد ازجلد فلور ٹسٹ کرانے پراتفاق کا اظہارکیا۔ سماعت کے دوران کپل سبل نے عدالت میں کہا 'واضح کیا جائے کہ نصف شب کومہاراشٹرسے صدرراج کس بنیاد پرہٹایا گیا'۔ انہوں نے کہاکہ اگر دیویندرفڑنویس  کے پاس اکثریت کا نمبرہے، توانہیں ایوان میں اکثریت ثابت کرنے دیں، ورنہ مہاراشٹرمیں حکومت بنانے کے لئے ہمارے پاس نمبرہے۔

واضح رہےکہ گورنربھگت سنگھ کوشیاری کے فیصلے کے خلاف شیوسینا، این سی پی اور کانگریس نے سپریم کورٹ میں عرضی دائرکی تھی۔ اس عرضی میں بی جے پی حکومت کو برخاست کرتے ہوئے 24 گھنٹے کے اندرفلورٹسٹ کرانے کا مطالبہ بھی کیا تھا۔
First published: Nov 24, 2019 03:49 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading