உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جنتر منتر پر اشتعال انگیز تقریر اور مسلم مخالف نعرے بازی ، دہلی پولیس نے درج کی ایف آئی آر

    جنتر منتر پر اشتعال انگیز تقریر اور مسلم مخالف نعرے بازی ، دہلی پولیس نے درج کی ایف آئی آر۔ تصویر : اے این آئی ۔

    جنتر منتر پر اشتعال انگیز تقریر اور مسلم مخالف نعرے بازی ، دہلی پولیس نے درج کی ایف آئی آر۔ تصویر : اے این آئی ۔

    Delhi News: دہلی میں جنتر منتر پر اشتعال انگیز تقریر اور ایک خاص مذہب کے لوگوں کے خلاف نعرے بازی کا ویڈیو وائرل ہو رہا ہے ۔ ویڈیو وائرل ہونے کے بعد دہلی پولیس نے ایف آئی آر درج کرکے معاملہ کی جانچ شروع کردی ہے ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : دہلی  میں جنتر منتر پر اشتعال انگیز تقریر اور ایک خاص مذہب کے لوگوں کے خلاف نعرے بازی کا ویڈیو وائرل ہو رہا ہے ۔ ویڈیو وائرل ہونے کے بعد دہلی پولیس نے ایف آئی آر درج کرکے معاملہ کی جانچ شروع کردی ہے ۔ یہ کیس دہلی کے کناٹ پلیس میں درج کیا گیا ہے ۔ اس معاملہ میں آرگنائزرس نے بھی ویڈیو بنانے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی شکایت کی ہے ۔ دراصل اتوار کو کچھ تنظیموں نے کوئٹ انڈیا موومنٹ اور انگریزوں کے بنائے ہوئے پرانے قوانین کو واپس لینے کے لیے دھرنا دیا تھا ۔ اسی کے دوران کچھ لوگوں نے ایک خاص فرقہ کے خلاف قابل اعتراض نعرے بازی کی ۔

      وائرل ویڈیو میں گالی گلوچ اور خاص فرق کیلئے غلط الفاظ بھی استعمال کئے گئے تھے ۔ ویڈیو منظر عام پر آنے کے بعد کناٹ پلیس پولیس اسٹیشن میں ایک کیس درج کیا گیا ہے ۔ ڈی سی پی دیپک یادو نے کہا کہ پولیس اب ویڈیو اور اس وقت آس پاس کھڑے لوگوں سے پوچھ گچھ کرکے معلومات حاصل کرکے ملزمین کی شناخت کررہی ہے ۔


      ادھر کچھ سماجی کارکنان بھی اس معاملہ میں دہلی پولیس سے شکایت کرنے پہنچے ، جنہوں نے بتایا کہ جس طرح اتوار کو ایک خاص مذہب کے لوگوں کے خلاف نعرے لگائے گئے ہیں ، یہ انتہائی قابل اعتراض ہے ۔ سماجی کارکن شبنم ہاشمی نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ اس معاملہ میں جلد از جلد کارروائی کی جائے ۔ پولیس کی موجودگی میں ایسا واقعہ حیران کن ہے ۔ پولیس کو اس معاملہ میں سخت کارروائی کرنی چاہئے۔ اب پولیس اس وائرل ویڈیو میں نظر آنے والے لوگوں کی تلاش کر رہی ہے ، تاکہ اس میں ملوث لوگوں کے خلاف کارروائی کی جا سکے ۔

      خیال رہے کہ انگریزوں کے بنائے ہوئے پانچ قوانین ختم کرنے کیلئے جنتر منتر پر جو مظاہرہ کیا گیا تھا ، اب اس مظاہرہ کو لے کر قانونی کارروائی کی جا رہی ہے ۔ پولیس نے کناٹ پلیس پولیس اسٹیشن میں ایف آئی آر درج کر کے ان لوگوں کی تلاش شروع کر دی ہے ، جنہوں نے تقریب کے دوران اشتعال انگیز تقاریر کیں اور نعرے لگائے۔

      دہلی بی جے پی لیڈر اشونی اپادھیائے اس تقریب کے کنوینر تھے ، لیکن اب ویڈیو منظر عام پر آنے کے بعد وہ اشتعال انگیز نعرے لگانے والوں سے کنارہ کشی اختیار کررہے ہیں ۔ اشونی اپادھیائے کا کہنا ہے کہ ان کے پروگرام میں ایسا کچھ نہیں ہوا ہے ۔ ویڈیو میں نظر آرہے لوگوں کو وہ نہ تو جانتے ہیں اور نہ ہی کبھی ملے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے دہلی پولیس کو شکایت دی ہے کہ ایسے لوگوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: