உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    چیف سکریٹری مار پیٹ کیس : وزیر اعلی نے کہا : اروند کیجریوال ضدی ہوسکتا ہے ، مگر پرتشدد نہیں

    دلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال: فائل فوٹو۔

    دہلی کے چیف سکریٹری انشو پرکاش کے ساتھ بدسلوکی اور مار پیٹ کے معاملہ میں وزیر اعلی اروند کیجریوال کا بڑا بیان سامنے آیا ہے ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : دہلی کے چیف سکریٹری انشو پرکاش کے ساتھ بدسلوکی اور مار پیٹ کے معاملہ میں وزیر اعلی اروند کیجریوال کا بڑا بیان سامنے آیا ہے ۔ خیال رہے کہ عام آدمی پارٹی کے دو ممبران اسمبلی پرکاش جروال اور امانت اللہ خان پر چیف سکریٹری سے مار پیٹ کا الزام ہے ، وہیں کیجریوال پر بھی الزام ہے کہ ان کی موجودگی میں چیف سکریٹری کے ساتھ بدسلوکی اور ہاتھاپائی کی گئی ، لیکن انہوں نے کچھ نہیں کیا ۔ ان الزامات کو یکسر مسترد کرتے ہوئے بدھ کو دہلی کے وزیر اعلی نے کہا کہ اروند کیجریوال ضدی ہوسکتا ہے ، مگر پرتشدد نہیں۔
      عام آدمی پارٹی کے آفیشیل ٹویٹر ہینڈل سے کیجریوال کا ایک ویڈیو ٹویٹ کیا گیا ہے۔ اس ویڈیو میں دہلی کے وزیر اعلی یہ کہتے ہوئے نظر آرہے ہیں کہ کیجریوال ضدی ہوسکتا ہے ، لیکن پرتشدد نہیں ہوسکتا ۔ ہم لوگ تشدد کبھی نہیں کریں گے ۔ مار پیٹ بزدل لوگ کرتے ہیں اور کیجریوال بزدل نہیں ہے۔
      چیف سکریٹری سے مار پیٹ کے الزامات کو خارج کرتے ہوئے کیجریوال نے کہا کہ ہم کبھی مار پیٹ نہیں کریں گے اور اپنے لوگوں سے کیوں کریں گے ، آپس میں لڑ لیں گے ، جھگڑ لیں گے ، مگر ہم مار پیٹ کیوں کریں گے۔


      خیال رہے کہ دہلی کے چیف سکریٹری انشو پرکاش نے الزام لگایا تھا کہ وزیر اعلی کی رہائش گاہ پر میٹنگ کے دوران ان کے ساتھ عام آدمی پارٹی کے لیڈرو ں نے بدتمیزی اور ہاتھا پائی کی ۔ ان کے مطابق وہ 19 فروری کی دیر رات ایک میٹنگ میں شامل ہونے کیلئے وزیر اعلی کی رہائش گاہ پر گئے ۔ راشن کے ایک معاملہ کو لے کر بحث ہوگئی ، جس کے بعد وزیر اعلی کے سامنے لیڈروں نے ان کے ساتھ مار پیٹ کی ۔
      First published: