ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

دہلی کے ان تین میٹرو اسٹیشنوں پر انٹری اور ایگزٹ بند، نہیں رکے گی کوئی ٹرین

ڈی ایم آر سی نے پٹیل چوک، اور ادیوگ بھون میٹرو اسٹیشن بند کردیا ہے۔ ان اسٹیشنوں پر انٹری اور ایگزٹ بند رہے گی۔ پٹیل چوک اور ادھیوگ بھون پر ٹرین رکے گی بھی نہیں۔

  • Share this:
دہلی کے ان تین میٹرو اسٹیشنوں پر انٹری اور ایگزٹ بند، نہیں رکے گی کوئی ٹرین
دہلی کے ان تین میٹرو اسٹیشنوں پر انٹری اور ایگزٹ بند، نہیں رکے گی کوئی ٹرین

جامعہ ملیہ اسلامیہ اور علی گڑھ مسل میونیورسٹی میں طلبا کے خلاف پولیس ایکشن کی مخالفت میں کانگریس کی جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی انڈیا گیٹ پردھرنے پربیٹھ گئی ہیں۔ پرینکا گاندھی کا یہ دھرنا 4 بجے سے جاری ہے اور6 بجے تک چلے گا۔ پرینکا گاندھی کے ساتھ کانگریس کے دیگرلیڈربھی دھرنے پربیٹھے ہیں۔ اس سے قبل پریس کانفرنس کرتے ہوئے کانگریس ترجمان رندیپ سرجے والا نے اطلاع دیتے ہوئے بتایا تھا کہ پرینکا گاندھی کی قیادت میں کانگریس کے لیڈرانڈیا گیٹ پرعلامتی احتجاج پربیٹھیں گے۔

اسی درمیان ڈی ایم آر سی نے پٹیل چوک، اور ادیوگ بھون میٹرو اسٹیشن بند کردیا ہے۔ ان اسٹیشنوں پر انٹری اور ایگزٹ بند رہے گی۔ پٹیل چوک اور ادھیوگ بھون پر ٹرین رکے گی بھی نہیں۔



اس سے پہلے ڈی ایم آرسی نے جامعہ ملیہ اسلامیہ میٹرو اسٹیشن پر انٹری اور ایگزٹ کو بند کردیا تھا۔ اس اسٹیشن پر بھی کوئی میٹرو نہیں رک رہی ہے۔ غور طلب ہے کہ شہریت ترمیمی قانون کے خلاف ملک کے مختلف حصوں میں پر تشدد مظاہروں کی خبریں آرہی ہیں۔ جامعہ کےطلبا نے بھی مظاہرہ کیا لیکن پولیس نے بغیر اجازت جامعہ کی لائبریری میں گھس کر طلبا پر لاٹھی چارج کیا۔

وضح  رہے  کہ  سی اےاے کی مخالفت میں دہلی جامعہ یونیورسٹی میں بھاری مخالفت کے بعد اتوار کی شام کو علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے طلبا بھی سڑک پر اتر آئے۔ اس دوران انہوں نے پولیس پر جم کر پتھربازی کی۔ پولیس نے آنسو گیس کے گولے چھوڑ کر کسی طرح حالات کو قابو میں کیا۔ اس کے بعد دیر رات علی گڑھ اور سہارنپور میں ضلع انتظامیہ نے انٹرنیٹ بند کرنے کا حکم سنادیا۔ اس واقعے کے فوراً بعد اےایم یو انتظامیہ نے 5 جنوری تک یونیورسٹی میں چھٹی کا اعلان کردیا۔ وہیں ہوسٹل خالی کرانے کیلئے انتظامیہ کی جانب سے پولیس سے مدد مانگی گئی ہے۔ پیر کو پولیس اے ایم یو کے ہاسٹل خالی کرانے پہنچی۔

ادھر دوسری طرح جامعہ ملیہ اسلامیہ اور اے ایم یو میں ہنگامے کے بعد پیر کو صبح لکھنؤ میں ندوہ کالج کے طلبا بھی مشتعل ہوگئے۔ انہوں نے کالج کے گیٹ پر جم کر مظاہرہ کیا۔ اس دوران طلبا اور پولیس میں نوک۔جھونک بھی ہوئی ہے۔ پولیس نے کسی طرح سے طلبا کو کالج گیٹ کے اندر کیا جس کے بعد پتھربازی ہونے لگی۔
First published: Dec 16, 2019 07:10 PM IST