ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

جاٹ ریزرویشن : دہلی پر منڈلایا پانی کے بحران کا خطرہ ، کیجریوال حکومت نے کھٹکھٹایا سپریم کورٹ کا دروازہ

نئی دہلی : جاٹ ریزرویشن کی آگ کی لپٹیں اب دہلی تک پہنچ گئی ہیں۔ جاٹ مظاہرین نے ہریانہ میں مونک نہر پر قبضہ کرلیا ہے ، جس کی وجہ سے دہلی کے سامنے پانی کا بحران پیدا ہوگیا ہے۔ ذرائع کے مطابق دہلی حکومت نے اس ضمن میں سپریم کورٹ میں ایک عرضی داخل کی ہے، جس پر کل سماعت ہو سکتی ہے۔

  • Pradesh18
  • Last Updated: Feb 20, 2016 11:41 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
جاٹ ریزرویشن : دہلی پر منڈلایا پانی کے بحران کا خطرہ ، کیجریوال حکومت نے کھٹکھٹایا سپریم کورٹ کا دروازہ
نئی دہلی : جاٹ ریزرویشن کی آگ کی لپٹیں اب دہلی تک پہنچ گئی ہیں۔ جاٹ مظاہرین نے ہریانہ میں مونک نہر پر قبضہ کرلیا ہے ، جس کی وجہ سے دہلی کے سامنے پانی کا بحران پیدا ہوگیا ہے۔ ذرائع کے مطابق دہلی حکومت نے اس ضمن میں سپریم کورٹ میں ایک عرضی داخل کی ہے، جس پر کل سماعت ہو سکتی ہے۔

نئی دہلی : جاٹ ریزرویشن کی آگ کی لپٹیں اب دہلی تک پہنچ گئی ہیں۔ جاٹ مظاہرین نے ہریانہ میں مونک نہر پر قبضہ کرلیا ہے ، جس کی وجہ سے دہلی کے سامنے پانی کا بحران پیدا ہوگیا ہے۔ ذرائع کے مطابق دہلی حکومت نے اس ضمن میں سپریم کورٹ میں ایک عرضی داخل کی ہے، جس پر کل سماعت ہو سکتی ہے۔


ادھر نائب وزیر اعلی منیش سسودیا نے کی مظاہرین سے پانی چھوڑنے کی اپیل کی ہے۔ خیال رہے کہ مونك نہر سے ہی دہلی میں پانی کی سپلائی ہوتی ہے، ایسے میں مونك نہر کا پانی نہ ملنے سے دہلی میں ہاہاکار مچ سکتی ہے۔ پانی نہ ملنے سے جل بورڈ کے کل نو میں سے سات واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹ متاثر ہوں گے۔


تاہم ہریانہ کے وزیر اعلی کھٹر اور وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے دہلی حکومت کو مدد کی یقین دہانی کرائی ہے، تو دوسری طرف دہلی یونیورسٹی اور منڈكا میں مظاہرین نے جم کر ہنگامہ کیا۔ اس دوران لوگوں نے حکومت کے خلاف جم کر نعرے بازی بھی کی۔


خیال رہے کہ ہریانہ میں آج بھی پرتشدد جاٹ تحریک جاری رہی۔ مظاہرین نے کئی مقامات پر سرکاری املاک، بسوں اور دیگر ذاتی گاڑیوں اور املاک کو جلا کر راکھ کر دیا۔ کئی مقامات پر ہائی وے پر جام لگایا گیا اور جگہ جگہ پر ٹرینوں کی پٹری اکھاڑی گئی ، جس کی وجہ سے ریل خدمات بند کرنی پڑیں۔


حالات بے قابو ہوتے دیکھ کر فوج بلانی پڑی اور تشدد زدہ حصار، سونی پت اور جیند اضلاع میں کرفیو نافذ کردیا گیا۔ اس کے علاوہ روہتک، بھیوانی، جھجھر، کیتھل اضلاع میں بھی تشدد کے کئی واقعات پیش آئے ۔ ریاست میں اب تک 8 افراد کی موت ہو چکی ہے جبکہ 100 سے زیادہ لوگ زخمی ہیں۔

First published: Feb 20, 2016 11:41 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading