ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

پولیس جے این یو تشدد کی تحقیقات کو لےکر سنجیدہ: دہلی پولیس

دہلی پولیس کےترجمان مندیپ سنگھ رندھاوا نے یہاں نامہ نگاروں سےکہا کہ پورے معاملہ کی جانچ دہلی پولیس کی کرائم برانچ کو سونپ دی گئی ہے۔ اس کےعلاوہ ثبوات وحقائق حاصل کرنے اور کیس کی تحقیقات میں کسی بھی تاخیرسے بچنے کےلئےمغربی رینج کی جوائنٹ پولیس کمشنرشالکنی سنگھ کے تحت ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Jan 07, 2020 02:34 PM IST
  • Share this:
پولیس جے این یو تشدد کی تحقیقات کو لےکر سنجیدہ: دہلی پولیس
جے این یو میں تشدد- فائل فوٹو

نئی دہلی: دہلی پولیس نےکہا کہ جواہر لال نہرو یونیورسٹی میں ہونے والے تشدد کی تحقیقات کے زاویہ سے ہر پہلوکی سنجیدگی سے تحقیقات کی جا رہی ہے اورا س میں ملوث افراد کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔ دہلی پولیس کےترجمان مندیپ سنگھ رندھاوا نے یہاں نامہ نگاروں سےکہا کہ پورے معاملہ کی جانچ دہلی پولیس کی کرائم برانچ کوسونپ دی گئی ہے۔ اس کےعلاوہ ثبوات وحقائق حاصل کرنےاورکیس کی تحقیقات میں کسی بھی تاخیرسے بچنے کےلئےمغربی رینج کی جوائنٹ پولیس کمشنرشالکنی سنگھ کے تحت ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔


انہوں نےکہا کہ کچھ اہم سراغ ملے ہیں، جس سے معاملہ کو جلد حل کرنے میں مدد ملے گی۔

رندھاوا نےکہا کہ کرائم برانچ کی ٹیم اور مقامی پولیس آج جے این یو کیمپس میں جا کر حقائق کو جمع کرنے کا کام کیا ہے۔ سوشل میڈیا پر کچھ ویڈیو اور کچھ وهاٹس ایپ پیغام وائرل ہو رہے ہیں ان سب کی باریک بینی سے جانچ کی جائے گی۔ پولیس ڈپٹی کمشنررندھاوا نے کہا کہ کل شام ساڑھے پانچ بجے جے این یو ہاسٹل سے طالب علموں کے دو دھڑوں کے درمیان لڑائی کی اطلاع ملی تھی جس کے بعد پولیس نے تیزی سے حالات کو کنٹرول کیا۔


شام سات بج کر 45 منٹ پر یونیورسٹی انتظامیہ کی جانب سے اجازت ملنے کے بعد پولیس کیمپس میں فلیگ مارچ کیا اور حالات کو کنٹرول کیا۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ کچھ پولیس اہلکار یونیورسٹی کے ایڈ منسٹریٹو بلاک میں تعینات رہتے ہیں لیکن جھگڑا وہاں سے دور ایک ہاسٹل میں ہوا ، پولیس بروقت موقع پر پہنچ کر حالات کو کنٹرول کیا۔ پولیس کی جانب سے کسی قسم سے لاپرواہی نہیں برتی نہیں گئی ہے۔
First published: Jan 07, 2020 12:08 AM IST