ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

دہلی تشدد پر اسدالدین اویسی کا لوک سبھا میں بڑا بیان، مرکزی حکومت پر لگایا یہ الزام

آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (اےآئی اے ایم ایم) کے اسد الدین اویسی نے وزیراعظم نریندر مودی پر ملک کے مسلمانوں کی حفاظت کرنے میں ناکام رہنے کا الزام لگاتے ہوئے دہلی فسادات کی عدالتی جانچ کا مطالبہ کیا۔

  • Share this:
دہلی تشدد پر اسدالدین اویسی کا لوک سبھا میں بڑا بیان، مرکزی حکومت پر لگایا یہ الزام
مجلس اتحاد المسلمین سربراہ اسد الدین اویسی ۔ فائل فوٹو

نئی دہلی: آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (اےآئی اے ایم ایم) کے اسد الدین اویسی نے وزیراعظم نریندر مودی پر ملک کے مسلمانوں کی حفاظت کرنے میں ناکام رہنے کا الزام لگاتے ہوئے دہلی فسادات کی عدالتی جانچ کا مطالبہ کیا۔ دہلی کے کچھ حصوں میں قانون وانصرام کی صورت حال پر لوک سبھا میں آج ہوئے بحث کو آگے بڑھاتے ہوئے اسدالدین  اویسی نے کہا کہ ’’جب دہلی میں فرقہ وارانہ فسادات میں لوگوں کو مارا جارہا تھا اس وقت ںریندر مودی امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کا خیر مقدم کررہے تھے جہاں بحریہ کا بینڈ ’کین یو فیل دی لو ٹونائٹ‘ کی دھن بجائی جارہی تھی۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم ملک کے مسلمانوں کی زندگی بچانے کی اپنی ذمہ داریاں ادا کرنے میں ناکام رہے۔‘‘

انہوںنے مرکز میں برسراقتدار بھارتیہ جنتا پارٹی کو دہلی فسادات کے لئے ذمہ دار قرار دیتے ہوئے کہا کہ ملک کے آئین کے مطابق دہلی میں قانون وانصرام قائم رکھنا ان کی ذمہ داری ہے۔ یہ کہا گیا کہ پولس فورس مناسب تعداد میں مہیا نہیں تھی۔ ایسی صورت حال میں لفنٹنٹ گورنر فوج بلاسکتے تھے۔

انہوں نے کہا کہ ’’آپ بالکل شرمندہ نہیں ہیں۔ شمال۔مشرقی دہلی کے نالوں میں پڑی لاشوں پر آپ فخر محسوس کررہے ہیں۔ کیا آپ کی اندر ذرا بھی انسانیت نہیں ہے۔‘‘

اسدالدین اویسی نے کہا کہ فسادات میں مارے گئے انکت کے جانوں کی قیمت فیضان کے جانوں سے زیادہ نہیں ہوسکتی۔ انہوں نے اس پورے معاملے کی عدالتی جانچ کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ خصوصی تفتیشی ٹیم پر ان کا اعتماد نہیں ہے۔ ساتھ ہی انہوں نے ایک کل جماعتی کمیٹی بناکر فسادات سے متاثر علاقوں میں بھیجے جانے کا بھی مطالبہ کیا۔


 
First published: Mar 11, 2020 08:07 PM IST