ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

دہلی تشدد: آدھار کارڈ چھوڑ کر سب کچھ ہو گیا خاک، 23 مارچ کو ہونی ہے بیٹی کی شادی

نغمہ اور اس کی بڑی بہن گھر کی تیسری منزل پر بوٹیک چلاتی ہیں۔ اسی سے گھر کا خرچ چلتا تھا۔ لیکن اب ان کا یہ بوٹیک پوری طرح سے برباد ہو گیا ہے۔

  • Share this:
دہلی تشدد: آدھار کارڈ چھوڑ کر سب کچھ ہو گیا خاک، 23 مارچ کو ہونی ہے بیٹی کی شادی
کھجوری خاص علاقے میں رہنے والے اس کنبے کا کچھ بھی نہیں بچا ہے

نئی دہلی۔ پچھلے پیر کے روز دہلی تشدد (Delhi Violence) میں جو کچھ بھی ہوا اسے یاد کرتے ہوئے نغمہ سیفی پھوٹ پھوٹ کر رونے لگتی ہیں۔ صبح اذان ختم ہوتے ہی وہ اپنی ماں اور تین بہنوں کے ساتھ کسی طرح جان بچا کر گھر سے بھاگی تھیں۔ دہلی کے کھجوری خاص علاقے میں رہنے والی نغمہ کے گھر کے باہر پچھلے اتوار کو لوگوں نے نعرے لگاتے ہوئے پتھربازی کی تھی۔ بتا دیں کہ اس تشدد کے دوران کھجوری خاص علاقے میں سب سے زیادہ نقصان ہوا ۔ یہاں 30 سے زیادہ گھروں میں آگ لگا دی گئی۔


گھر سے بھاگ کر بچائی جان


نغمہ کے مطابق، صبح ان کے گھر کے باہر لوگ دھمکیاں دیتے ہوئے کہہ رہے تھے کہ کیا کوئی مسلم لڑکی اس گھر کے اندر رہتی ہے۔ اس کے بعد ان سب نے گھر سے بھاگنے کا فیصلہ کیا۔ لیکن ان کے ابا گھر سے جانے کو تیار نہیں تھے۔ امی روتی رہیں لیکن ان کے ابا الیاس نے اپنے دو بیٹوں کے ساتھ گھر سے نہیں جانے کا فیصلہ کیا۔ نغمہ، اس کی ماں اور دو بہنوں نے قریب واقع اپنے رشتہ داروں کے گھر چاند باغ جانے کا فیصلہ کیا۔ ان کے پاس ہی یہ بیوٹیشین کا کورس کرتی تھیں۔ نغمہ نے کہا ’ اگر پونم میم نہیں ہوتیں تو ہم سب برباد ہو جاتے۔ ایسا لگ رہا ہے کہ اللہ نے انہیں ہمیں بچانے کے لئے بھیجا تھا‘۔


دہلی تشدد کی تصویر: فائل فوٹو: نیوز18


گھر میں لگا دی آگ

نغمہ اور اس کی بڑی بہن گھر کی تیسری منزل پر بوٹیک چلاتی ہیں۔ اسی سے گھر کا خرچ چلتا تھا۔ لیکن اب ان کا یہ بوٹیک پوری طرح سے برباد ہو گیا ہے۔ مشتعل بھیڑ نے سارے کپڑے اور ڈریس بنانے کی چیزیں جلا دیں۔ ابا الیاس گراؤنڈ فلور پر لکڑی کا کام کرتے تھے۔ لیکن اب کچھ بھی نہیں بچا ہے۔ نغمہ نے روتے ہوئے کہا’ میری امی، بہن اور میں مل کر مہینے میں 30-40 ہزار روپئے کماتے ہیں جس سے بڑی مشکل سے گھر کا خرچ چلتا ہے۔ ابا کی زیادہ کمائی نہیں ہوتی۔ کچھ دن پہلے انہیں تھوڑا کام ملا تھا اور وہ لکڑی لے کر آئے تھے، لیکن اب سب جل گیا ہے کچھ بھی نہیں بچا ہے‘۔

اب کیسے ہو گی شادی؟

چھوٹی بہن ناظرین کی 23 مارچ کو شادی ہونی ہے۔ شادی کی ساری تیاریاں تقریبا پوری ہو چکی تھیں، لیکن اب کچھ بھی نہیں بچا ہے۔ نغمہ کا کہنا ہے کہ ان کی امی پچھلے کچھ دنوں سے کھا پی نہیں رہی ہیں۔ سب کچھ جل کر خاک ہو گیا ہے۔ صرف آدھار کارڈ بچا ہے وہ بھی اس لئے کیونکہ یہ ہمارے موبائل میں تھا۔

زیبا وارثی کی رپورٹ
First published: Mar 02, 2020 04:24 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading