ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

دہلی تشدد میں اب تک 18 لوگوں کی موت، پولیس نے کیا فلیگ مارچ، سیلم پور میں سدھرے حالات

شمال مشرقی دہلی (North East Delhi) میں گزشتہ دودنوں میں شہریت ترمیمی قانون(CAA) کو لیکر بھڑکے تشدد میں اب تک 18 لوگوں کی موت ہوچکی ہے جبکہ 56 پولیس اہلکار سمیت 200 لوگ زخمی بتائے جارہے ہیں۔ اس درمیا بجھن پورہ اور کھریجی خاص علاقے میں منگل کو آگ زنی اور پتھراؤ ہونے کے بعد پولیس نے فلیگ مارچ کیا۔

  • Share this:
دہلی تشدد میں اب تک 18 لوگوں کی موت، پولیس نے کیا فلیگ مارچ، سیلم پور میں سدھرے حالات
شمال مشرقی دہلی (North East Delhi) میں گزشتہ دودنوں میں شہریت ترمیمی قانون(CAA) کو لیکر بھڑکے تشدد میں اب تک 18 لوگوں کی موت ہوچکی ہے جبکہ 56 پولیس اہلکار سمیت 200 لوگ زخمی بتائے جارہے ہیں۔ اس درمیا بجھن پورہ اور کھریجی خاص علاقے میں منگل کو آگ زنی اور پتھراؤ ہونے کے بعد پولیس نے فلیگ مارچ کیا۔

شمال مشرقی دہلی (North East Delhi) میں گزشتہ دودنوں میں شہریت ترمیمی قانون(CAA) کو لیکر بھڑکے تشدد میں اب تک 18 لوگوں کی موت ہوچکی ہے جبکہ 56 پولیس اہلکار سمیت 200 لوگ زخمی بتائے جارہے ہیں۔ اس درمیا بجھن پورہ اور کھریجی خاص علاقے میں منگل کو آگ زنی اور پتھراؤ ہونے کے بعد پولیس نے فلیگ مارچ کیا۔ پولیس کے مطابق، سیلم پور میں حالات اب سدھرتے نظررہے ہیں۔ یہ صبح 4:30 بجے کے بعد  سے تشدد کا کوئی واقعہ سامنے نہیں آیا ہے۔ وہیں پولیس نے بابرہور ، جعفرآباد اور گوکلپوری میں آمدورفت بند کر رکھا  ہے۔


وہیں سی ایم اروند کیجریال کی رہائش گاہ کے باہر دہلی تشدد کے قصورواروں کے خلاف کارروائی کرنے اوع جلد سے جلد امن بحالی کی مانگ کررہے لوگوں کو پولیس نے ہٹا دیا ہے۔ پولیس نے طلبا۔طالبات پر واٹر کینن کا استعمال کیا۔ بڑی تعداد میں طلبا سی ایم کی رہائش گاہ کے باہر   "کیجریوال آؤ ہم سے بات کرو" ے نعرے لگا رہے تھے۔





وزیر داخلہ امت شاہ نے گزشتہ 24 گھنٹوں میں تیسری مرتبہ اعلی سطحی میٹنگ کی ۔ اس میٹنگ میں ایس این شریواستو بھی موجود تھے ، جنہیں آج ہی دہلی پولیس کا اسپیشل کمشنر ( لا اینڈ آرڈر ) مقرر کیا گیا ہے ۔ یہ میٹنگ تقریبا تین گھنٹوں تک چلی ۔



First published: Feb 26, 2020 07:15 AM IST