ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

پاکستان کے خلاف جلد کریں گے جوابی کارروائی: بی ایس ایف جنرل ڈائریکٹرکا انتباہ

بی ایس ایف کے جنرل ڈائریکٹر نے کہا کہ پاکستان میں عمران خان کے وزیراعظم بننے کے بعد جموں وکشمیر میں بین الاقوامی سرحد پر مخالفین کے رخ میں زیادہ جارحیت نظرآرہی ہے۔ 

  • Share this:
پاکستان کے خلاف جلد کریں گے جوابی کارروائی: بی ایس ایف جنرل ڈائریکٹرکا انتباہ
بی ایس ایف: علامتی تصویر

سرحدی سیکورٹی فورسیز (بی ایس ایف) نے جمعہ کو پاکستان کے خلاف سخت جوابی کارروائی کرنے کا عزم کیا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں عمران خان کے وزیراعظم بننے کے بعد جموں وکشمیرمیں بین الاقوامی سرحد پرمخالفین کے رخ میں زیادہ جارحیت نظرآرہی ہے۔


بی ایس ایف کے  جنرل ڈائریکٹر کے کے شرما نے نامہ نگاروں سے کہا کہ ان کے فوجی بین الاقوامی سرحد پر حال میں اپنی زندگی میں مارے جانے کا بدلہ لینے کے لئے دشمن کے خلاف مناسب وقت کا انتظار کررہے ہیں۔


تیس ستمبرکوریٹائرہونے جارہے شرما نے یہ بھی اعتراف کیا کہ ہیڈ کانسٹبل نریندرسنگھ پاکستان کی بارڈرایکشن ٹیم (بیٹ) کی کارروائی میں مارے گئے۔  ڈائریکٹرجنرل نے کہا کہ جوان کے سینے میں تین گولیاں ماری گئیں۔ انہیں باڑکے دوسری طرف کھینچ کرلے جایا گیا۔ ان کے پیرباندھ دیئے گئے اورگلا ریت کرقتل کردیا گیا۔


یہ بھی پڑھیں:    بی ایس ایف کے غائب جوان کی سرقلم لاش برآمد، سرحد پرکشیدگی میں اضافہ ہونے کا امکان

 

انہوں نے کہا کہ لاش کوبرباد نہیں کیا گیا۔ بی ایس ایف سربراہ نے کہا کہ جموں کے رام گڑھ سیکٹرمیں سات دیگراہلکاروں کے ساتھ باڑ کے پاس گئے جوان کی بندوق اورگولا بارود کو (حملہ آور) ساتھ لے گئے۔

انہوں نے نامہ نگاروں سے کہا "یہ واقعہ اپنے آپ میں پہلا واقعہ ہے کیونکہ عام طورپربین الاقوامی سرحد پر بیٹ کی کارروائی دیکھنے کو نہیں ملتی۔ یہ ایک بدقسمتی والا حادثہ ہے"۔

شرما نے کہا کہ کنٹرول بارڈرپرکچھ جوابی کارروائی پہلے ہی کی جاچکی ہے اورابھی مزید کارروائی کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ "اپنے فوجیوں کی موت کا بدلہ لینے کے لئے ہم نےکنٹرول بارڈرپرمناسب کارروائی کی ہے۔ ہمارے پاس مناسب وقت پراوراپنی پسند کے مقام پرجوابی کارروائی کرنے کا اختیار ہے"۔

یہ بھی پڑھیں:    امن کی اپیل کے بعد پاکستانی فوجیوں نے پھر برسائی گولیاں ، بی ایس ایف کے دو جوان شہید

 

شرما نے کہا کہ "جس وقت یہ حادثہ ہوا، اس وقت ہم نے دیکھا کہ دوسرا فریق غائب ہوگیا، وہ کہیں نہیں نظرآئے"۔ انہوں نے کہا کہ "بی ایس ایف نے بہت سخت اورمنہ توڑجوابی کارروائی کی ہے۔ دوسرے فریق کو ہمیشہ کے مقابلے کہیں زیادہ نقصان پہنچایا ہے۔ ہم دوبارہ بھی یہی کریں گے"۔

جنرل ڈائریکٹرنے کہا  "اس معاملے میں سب سے زیادہ یہ اہم تھا کہ ہم جوان کی لاش برآمد کریں اوراس کے بعد مستقبل قریب میں ہم دیکھیں گے کہ ہم کچھ کریں گے"۔ انہوں نے کہا کہ اب یہ پتہ چل گیا ہے کہ بیٹ بین الاقوامی سرحد پربھی حرکت کرسکتی ہے، اس لئے ٹھکانوں پرتعینات بی ایس ایف اہلکاروں سے محتاط رہنے کو کہا گیا ہے۔

کے کے شرما نے بی ایس ایف ہیڈکوارٹرمیں کہا "عمران خان کے پاکستان کا وزیراعظم بننے کے بعد سرحد پرکوئی تبدیلی نہیں آئی ہے اوراس کے بعد یہ حادثہ ہوا ہے۔ بین الاقوامی سرحد پراس طرح کا حادثہ پہلے کبھی نہیں ہوا"۔

یہ بھی پڑھیں:      پاک میں 11 شدت پسند دہشت گردوں کو موت کی سزا، فوج کے سربراہ نے تصدیق

 

یہ بھی پڑھیں:     سارک اجلاس کے بیچ میں اٹھ کر چلی گئیں سشما سوراج، پاکستان کے وزیر خارجہ بھڑکے

 

یہ بھی پڑھیں:    کسی بھی ملک کو دہشت گردی کی حمایت کرنے کی اجازت نہیں دی جانی چاہئے: سشما سوراج

 
First published: Sep 29, 2018 07:47 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading