ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ٹول فری رہے گا ڈی این ڈی ، سپریم کورٹ کا ہائی کورٹ کے حکم پر روک لگانے سے انکار

ڈی این ڈی کو ٹول فری کرنے کے الہ آباد ہائی کورٹ کے حکم پر روک لگانے سے سپریم کورٹ نے انکار کر دیا ہے۔

  • Pradesh18
  • Last Updated: Nov 11, 2016 01:03 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
ٹول فری رہے گا ڈی این ڈی ، سپریم کورٹ کا ہائی کورٹ کے حکم پر روک لگانے سے انکار
ڈی این ڈی کو ٹول فری کرنے کے الہ آباد ہائی کورٹ کے حکم پر روک لگانے سے سپریم کورٹ نے انکار کر دیا ہے۔

نئی دہلی : ڈی این ڈی کو ٹول فری کرنے کے الہ آباد ہائی کورٹ کے حکم پر روک لگانے سے سپریم کورٹ نے انکار کر دیا ہے۔ سپریم کورٹ نے آڈیٹر جنرل کو ہدایت دی ہے کہ وہ ڈی این ڈی اکاؤنٹ کی جانچ کر کے پراجیکٹ کاسٹ کا پتہ لگائیں اور 4 ہفتے میں رپورٹ داخل کریں۔ آڈیٹر جنرل جانچ کر کے بتائیں گے کہ ٹول برج کمپنی کو اب تک ٹول ٹیکس سے کتنا فائدہ ہوا ہے۔ حتمی فیصلہ رپورٹ کے بعد سنایا جائے گا۔

قبل ازیں اکتوبر کے آخری ہفتے میں الہ آباد ہائی کورٹ نے گاڑی ڈرائیوروں کو بڑی راحت دیتے ہوئے دہلی اور اتر پردیش کو جوڑنے والی دہلی نوئیڈا-ڈائرکٹ فلائی وے پر ٹول ٹیکس کی وصولی کو بند کرنے کا حکم دیا تھا۔ جج ارون ٹنڈن اور جج سمتا اگروال کی بینچ نے کہا تھا کہ ڈی این ڈی پر اب گاڑیوں کو ٹول ٹیکس ادا کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔

عدالت نے کہا تھا کہ راستے پر گاڑیوں سے وصول کیا جا رہا ٹول ٹیکس غیر قانونی ہے ۔ ساتھ ہی ساتھ ریاستی حکومت کو بھی اس بات کو یقینی بنانے کا کا حکم دیا گیا تھا کہ آئندہ ٹول ٹیکس نہ وصول کیا جائے۔ فیڈریشن آف نوئیڈا ریزیڈینٹس ویلفیئر ایسوسی ایشن کی جانب سے دائر درخواست میں نوئیڈا اتھارٹی اور ٹول وصول کرنے والی کمپنی کے درمیان معاہدہ کو منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ عدالت میں یہ معاملہ گزشتہ چار برسوں سے چل رہا تھا۔ عدالت نے آٹھ اگست کو آخری سماعت کی اور فیصلہ محفوظ رکھ لیا تھا۔

ڈی این ڈی فلائی وے پر 2001 میں ٹریفک شروع ہوا، نو کلومیٹر طویل اس ڈی این ڈی فلائی وے کو 407 کروڑ روپے کی لاگت سے تعمیر کیا گیا تھا اور ایسا مانا جا رہا ہے کہ 2000کروڑ روپے تک کی ٹول کے ذریعہ وصولی کی جا چکی ہے۔

First published: Nov 11, 2016 01:03 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading