உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    عام آدمی پارٹی کو جھٹکا، الیکشن کمیشن نے  20 ممبران اسمبلی کی عرضی مسترد کی

    دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال: فائل فوٹو

    دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال: فائل فوٹو

    عام آدمی پارٹی کو الیکشن کمیشن سے جھٹکا لگا ہے۔ کمیشن نے 20 ممبران اسمبلی کی درخواست کو مسترد کردیا ہے۔ ممبران نے الیکشن کمیشن میں عرضی داخل کرکے کراس ایگزامنیشن کا مطالبہ کیا تھا۔

    • Share this:
      عام آدمی پارٹی کوالیکشن کمیشن سے جھٹکا لگا ہے۔ کمیشن نے 20  "آپ" ممبران اسمبلی کی درخواست کو مسترد کردیا ہے۔ ممبران اسمبلی نے الیکشن کمیشن میں عرضی داخل کرکے کراس ایگزامنیشن کا مطالبہ کیا تھا۔

      تاہم الیکشن کمیشن نے اب اس معاملے کوآخری بحث کے لئے طے کردیا ہے۔ اس معاملے میں آخری سماعت 23 جولائی کو ہوگی۔  واضح رہے کہ الیکشن کمیشن نے پارٹی کے 20 ممبران اسمبلی کو نااہل ٹھہرانے کی سفارش کی تھی۔

      کمیشن نے صدرجمہوریہ کواپنا مشورہ وکیل پرشانت پٹیل کی شکایت پردیا تھا۔ ہندو لیگل سیل کے رکن پرشانت پٹیل نے جون 2015 میں پارلیمانی سکریٹریوں کی تقری کو غیرقانونی بتاتے ہوئے اس وقت کے صدر جمہوریہ پرنب مکھرجی کے سامنے عرضی داخل کی تھی۔

      واضح رہے کہ الیکشن کمیشن کے عام آدمی پارٹی کے 20 ممبران اسمبلی کے نااہل قرار دیئے جانے کے بعد  دہلی ہائی کورٹ نے الیکشن کمیشن کو حکم دیا تھا کہ وہ اگلی سماعت تک دہلی میں نا اہل قرار دئے گئے 20 ممبران اسمبلی کی سیٹ پرضمنی الیکشن کا اعلان نہ کرے۔

      صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند کی جانب سے عام آدمی پارٹی کے 20 ممبران اسمبلی کو نا اہل قرار دینے سے متعلق سفارش پردستخط کرنے کے بعد عدالت میں ممبران اسمبلی کی تین درخواستوں پر سماعت ہونے والی ہے ۔ پارٹی لیڈروں نے عدالت سے درخواست کی تھی کہ انہیں اس آرڈرکورد کرنے کا حکم دیا جائے، جس میں الزام لگایا گیا تھا کہ الیکشن کمیشن نے دفاع کرنے کا مناسب موقع دیئے بغیرہی اپنی سفارش کی ہے۔
      First published: