உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    نموٹی وی پربھی نافذ ہوگا وزیراعظم مودی پرمبنی فلم پرپابندی کا حکم: الیکشن کمیشن

    علامتی تصویر

    علامتی تصویر

    کمیشن کےایک افسرنےکہا کہ وزیراعظم مودی کی زندگی پرمبنی فلم پرپابندی کا حکم نمو ٹی وی پربھی نافذ ہوتا ہے۔

    • Share this:
      لوک سبھا الیکشن کے پہلے مرحلے کی ووٹنگ جمعرات کو ہونی ہے۔ ووٹنگ سے ٹھیک قبل الیکشن کمیشن نے کہا ہے کہ وزیراعظم مودی کی زندگی پرمبنی فلم نمو ٹی وی پی بھی نافذ ہوگا۔ کمیشن کے ایک افسرنے یہ اطلاع دی۔ یعنی اب الیکشن کے دوران اس چینل کی نشریات نہیں کی جائے گی۔

      لوک سبھا الیکشن سے ٹھیک قبل شروع ہوئے نمو ٹی وی پی وزیراعظم کی ریلیوں کو نشرکیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ بی جے پی کے بھی کئی پروگراموں کی نشریات کی جاتی ہے۔ گزشتہ دنوں ڈی ٹی ایچ خدمات دینے والی کمپنی ٹاٹا اسکائی نے کہا تھا کہ نمو ٹی وی ایک نیوزچینل ہے۔ بعد میں ٹاٹا اسکائی نےاس پرصفائی دیتے ہوئےکہا تھا کہ یہ ایک اسپیشل سروس ہے۔

      بتادیں کہ نموکوٹی وی کولے کراپوزیشن نے کئی بارآواز اٹھائی ہے۔ ان کا الزام ہے کہ اس چینل کے لئےکوئی لائسنس نہیں لیا گیا۔ بعد میں اپوزیشن جماعتوں نے چینل کولے کرالیکشن کمیشن میں شکایت کی تھی۔ الیکشن کمیشن نے کہا کہ کسی بھی سیاسی یونٹ یا اس سے منسلک شخص کے سیاسی مقاصد کوپورا کرنے والی اورالیکشن کمیشن پراثرڈالنےکی صلاحیت رکھنے والی بایوگرافی قسم کی کسی بھی بایوپک کو سنیما سمیت الیکٹرانک میڈیا میں نشرنہیں کیا جانا چاہئے۔

      اس سے قبل الیکشن کمیشن نے وزیراعظم نریندرمودی کی زندگی پرمبنی فلم ’پی ایم نریندر مودی‘ کی ریلیزپرروک لگا دی ہے۔ چیف الیکشن کمشنرسنیل اروڑہ اورالیکشن کمشنرسشیل چندراوراشوک لواسا کےدستخط سےآج یہاں جاری حکم کےمطابق 17ویں لوک سبھا انتخابات میں 10 مار چ سےنافذ ضابطہ اخلاق کے پیش نظراس فلم کی ریلیزپرروک لگائی گئی ہے۔

      واضح رہےکہ اپوزیشن جماعتوں نےنریندرمودی پربنی اس فلم پرروک لگانےکی مانگ کی تھی اوراس فلم پرپورے ملک میں تنازعہ کھڑا ہوگیا تھا۔ اس معاملہ پرالیکشن کمیشن سے شکایت کی گئی تھی۔ اپوزیشن جماعتوں نےاپنی شکایت میں کہا تھا کہ اس فلم میں تخلیقی آزادی کےنام پرایک مخصوص پارٹی اورایک مخصوص امیدوارکی تشہیرکی گئی ہےاور رائےدہندگان کومتاثرکرنےکی کوشش کی گئی ہے، جوضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی ہے۔الیکشن کمیشن نےہدایت میں کہا کہ انتخابی ضابطہ اخلاق کے تحت الیکٹرانک میڈیا یا کسی سنیما میں اس طرح کے تشہیری سامان کی عوامی نمائش کی اجازت نہیں دی جاسکتی ہے۔ جس میں مرکزمیں حکمراں کسی جماعت یا سیاسی پارٹی کےامیدوارکی حصولیابیوں کو انتخابی فائدہ کےلئےدکھایا گیا ہو۔
      First published: