உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Year 2022: ای پی ایف او کی نامزدگی سے لے کر سالانہ جی ایس ٹی ریٹرن فائلنگ تک، اہم مالیاتی کاموں کیلئے آخری تاریخ میں توسیع

    • Share this:
      Extension of Deadlines Beyond December 31: حکومت نے گزشتہ دو دنوں میں مختلف اعلانات میں متعدد شعبوں کے لیے آخری تاریخ میں توسیع کی ہے۔ ای پی ایف او (EPFO) نامزدگی سے لے کر ریگولیٹڈ اداروں میں صارفین کے لیے کے وائی سی (KYC) کو اپ ڈیٹ کرنے تک حکومت کے مختلف ونگز ڈیڈ لائن کو اپ ڈیٹ کر رہے ہیں جو کہ 31 دسمبر کو ہونی تھیں۔ اس طرح ہندوستان بھر کے شہریوں کے پاس اب آرام کرنے اور فائل کرنے کے لیے زیادہ وقت ہے۔ اس کے مطابق اپ ڈیٹس فی الحال ان پر کسی دباؤ کے بغیر ہی کیے جائیں گے۔ اس سلسلے میں یہ بتانا ضروری ہے کہ ان ڈیڈ لائنز کو بڑے پیمانے پر کورونا بیماری کی وجہ سے بڑھایا گیا تھا جس میں نئے اومی کرون ویرینٹ کے ابھرنے کے ساتھ کورونا کیسوں کا اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

      حکومت کی طرف سے 31 دسمبر سے دیگر تاریخوں تک توسیع کی گئی آخری تاریخوں کی فہرست یہ ہے:

      (1) ای پی ایف او ​​نامزدگی داخل کرنے کی تاریخ 31 دسمبر سے آگے بڑھا دی گئی۔

      ایمپلائیز پروویڈنٹ فنڈ آرگنائزیشن یا ای پی ایف او نے جمعرات 30 دسمبر کو کہا کہ ممبران اب 31 دسمبر کے بعد اپنے ای پی ایف اکاؤنٹس میں نامزدگی داخل کر سکتے ہیں، جو کام کرنے کے لیے مقررہ آخری تاریخ تھی۔ اس بار اس نے کوئی آخری تاریخ نہیں بتائی۔ تاہم حکومت کی حمایت یافتہ ریٹائرمنٹ باڈی نے کھاتہ داروں کی حوصلہ افزائی کی کہ وہ جلد از جلد ای نامزدگی کے لیے فائل کریں۔

      تازہ ترین اقدام اس وقت سامنے آیا ہے جب بہت سے صارفین نے ای-نامزدگی کے لیے فائل کرتے وقت ای پی ایف او ​​پورٹل میں خرابیوں کی شکایت کی تھی۔ ٹویٹر پر شکایت کرنے والے متعدد صارفین کے مطابق ای پی ایف او پورٹل انہیں نامزدگی کے لیے فائل کرنے کی اجازت نہیں دے رہا ہے اور جب بھی وہ کام کرنے کی کوشش کر رہے ہیں تو غلطی کا پیغام دکھا رہا ہے۔

      ای پی ایف او نے ایک بیان میں کہا کہ سبسکرائبرز کے لیے اپنے شریک حیات، بچوں اور والدین کی دیکھ بھال کے لیے نامزدگیوں کا اندراج کرنا اور آن لائن پی ایف، پنشن اور انشورنس کے ذریعے ان کی حفاظت کرنا بہت ضروری ہے۔ نامزدگی داخل کرنے کا مقصد فوائد کو یقینی بنانا ہے۔ پی ایف اکاؤنٹ ہولڈر کے ساتھ کسی حادثے کی صورت میں اس کے زیر کفالت افراد کو تحفظ فراہم کیا جائے گا۔ اگر کسی اکاؤنٹ ہولڈر کے ساتھ ایسا واقعہ پیش آتا ہے تو نامزد شخص انشورنس اور پنشن اسکیموں سے فوائد حاصل کر سکے گا۔

      (2) سالانہ ریٹرن فائل کرنے کی آخری تاریخ میں 28 فروری تک توسیع

      سنٹرل بورڈ آف بالواسطہ ٹیکس اور کسٹمز (CBIC) نے بدھ 29 دسمبر کو دیر رات کی ٹویٹ میں کہا کہ حکومت نے مارچ 2021 کو ختم ہونے والے مالی سال 21-2020 کے لیے جی ایس ٹی سالانہ ریٹرن فائل کرنے کی آخری تاریخ میں بھی 28 فروری تک دو ماہ کی توسیع کردی ہے۔ مالی سال 2020-21 کے لیے GSTR-9C کو 31.12.2021 سے 28.02.2022 تک بڑھا دیا گیا ہے۔

      ۔ GSTR 9 ایک سالانہ ریٹرن ہے جو ٹیکس دہندگان کی طرف سے ہر سال گڈز اینڈ سروسز ٹیکس (GST) کے تحت درج کیا جاتا ہے۔ یہ مختلف ٹیکس ہیڈز کے تحت کی جانے والی یا موصول ہونے والی ظاہری اور باطنی سپلائیوں سے متعلق تفصیلات پر مشتمل ہے۔ GSTR-9C GSTR-9 اور آڈٹ شدہ سالانہ مالیاتی بیان کے درمیان مفاہمت کا بیان ہے۔

      سالانہ ریٹرن پیش کرنا صرف ان ٹیکس دہندگان کے لیے لازمی ہے جن کا مجموعی سالانہ ٹرن اوور 2 کروڑ روپے سے زیادہ ہے جبکہ ایک مصالحتی بیان صرف ان رجسٹرڈ افراد کو پیش کرنا ہے جن کا مجموعی ٹرن اوور 5 کروڑ روپے سے زیادہ ہے۔

      (3) محدود اداروں کے لیے کے وائی سی کی متواتر اپ ڈیٹ کی توسیع:

      ریزرو بینک آف انڈیا نے جمعرات کو کے وائی سی کی ضروریات کو لازمی طور پر اپ ڈیٹ کرنے کی آخری تاریخ کو تین ماہ تک بڑھا کر 31 مارچ 2022 تک کر دیا۔ مرکزی بینک نے کہا کہ یہ نرمی جاری کووِڈ 19 وبا کے پیش نظر دی گئی ہے۔ کورونا کے نئے ورژن کی وجہ سے غیر یقینی صورتحال کے پیش نظر مذکورہ سرکلر میں فراہم کردہ نرمی کو 31 مارچ 2022 تک بڑھا دیا گیا ہے۔ آر بی آئی نے اپنے پہلے سرکلر کا حوالہ دیتے ہوئے ایک نوٹیفکیشن میں کہا کہ اس سال 31 دسمبر کے اندر ان کی KYC کی معلومات پر کی جائے۔ بینک کے صارفین کو اس تاریخ تک اپنی KYC معلومات کو اپ ڈیٹ کرنے کی ضرورت تھی تاکہ وہ اپنے کھاتوں سے غیر محدود جمع یا نکال سکیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: