உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    غازی پور بارڈر پر دفعہ 144 نافذ، بسیں اور ورج گاڑیاں لگائی گئیں، راکیش ٹکیت بولے کر لوں گا خودکشی

    اگر قانون واپس نہیں ہوا تو میں خودکشی کر لوں گا: ٹکیت

    اگر قانون واپس نہیں ہوا تو میں خودکشی کر لوں گا: ٹکیت

    راکیش ٹکیت نے روتے ہوئے میڈیا سے کہا کہ میرے کسانوں کو مارنے کی کوشش کی جا رہی ہے میں یہاں سے خالی نہیں کروں گا۔ ہمیں مارنے کی سازش رچی جا رہی ہے، یہ ایک نظریاتی جنگ ہے۔ کسانوں کے ساتھ ظلم کیا جا رہا ہے۔ انہوں کہا کہ اگر قانون واپس نہیں ہوا تو میں خودکشی کر لوں گا۔۔

    • Share this:
      نئی دہلی: 26 چھبیس جنوری (26 January) کو کسان ٹریکٹر پریڈ (Kisan Tractor Parade) نکلالے جانے کے دوران دہلی میں مچے ہنگامہ اور ہئے تشدد کے بعد دہلی پولیس ۔ یوپی پولیس اور انتظامیہ نے غازی پور بارڈر پر اب بیحد سخت رخ اپنا لیا ہے۔ تقریبا 37 کسان لیڈڑان پر ایف آئی آر جاری اور متعدد افراد کو لک آؤٹ نوٹس جاری ہونے کے بعد اب کسان تحریک (Kisan Andolan) کو ختم کرنے کی تیز رفتار تیاری کی جارہی ہے۔ یہاں دہلی پولیس کے ڈپٹی کمشنر نے شام 7.30 بجے تک دفعہ 144 نافذ کی تھی جس کے تحت کسی بھی مظاہرہ یا اجتماع پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔ تازہ ترین واقعے کے پیش نظر پولیس انتظامیہ کی طرف سے بسیں اور ورج گاڑیاں بھی لائی گئی ہیں۔ اس سے صاف واضح ا ہے کہ تھوڑی دیر میں یا دیر رات میں دھرنا کی جگہ کو مکمل طور پر خالی کرایا جاسکتا ہے۔

      غازی پور بارڈر (Ghazipur Border) پر تقریبا دو ماہ سے بیٹھے کسان پولیس انتظامیہ کے سخت رخ کے بعد وہاں سے واپس جانے لگے ہیں۔ وہیں یہاں کسان تحریک کی قیادت کر رہے راکیش تکیٹ کے ساتھ انتظامیہ کے کئی دور کی بات چیت ہو چکی ہے۔ حالانکہ رپورٹ آرہی تھیں کہ راکیش ٹکیت پولیس کے سامنے سرینڈر کرنے والے ہیں لیکن انہوں نے واضح کردیا ہے کہ وہ سرینڈر نہیں کریں گے۔ فی الحال یہاں ہنگامہ برپا ہے۔ پولیس اہلکاروں کی ایک بڑی تعداد سڑک کے دونوں طرف پر موجود ہے۔ اعلی عہدیدار ابھی ٹکیت اور دیگر لیڈران سے بات کرنے پہنچے۔ اس کے بعد غازی آباد کے اے ڈی ایم (سٹی) ، شیلندر سنگھ نے کہا کہ راکیش ٹکیت کو سڑک خالی کرنے کے لئے قانونی نوٹس دے دیا گیا ہے، کیونکہ سڑک کو بند کرنا قانونا غلط ہے۔ انہیں سوچنے کے لئے وقت دیا گیا ہے۔

      قانون واپس نہیں لیا تو خودکشی کر لوں گا: ٹکیت
      راکیش ٹکیت نے روتے ہوئے میڈیا سے کہا کہ میرے کسانوں کو مارنے کی کوشش کی جا رہی ہے میں یہاں سے خالی نہیں کروں گا۔ ہمیں مارنے کی سازش رچی جا رہی ہے، یہ ایک نظریاتی جنگ ہے۔ کسانوں کے ساتھ ظلم کیا جا رہا ہے۔ انہوں کہا کہ اگر قانون واپس نہیں ہوا تو میں خودکشی کر لوں گا۔۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: