ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

چانسلر فیروز بخت نے ایک بار پھرمولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی انتظامیہ کے خلاف محاذ کھولا

فیروز بخت نے وزیر اعظم کو خط لکھ کر الزام عائد کیا ہے کہ مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی حیدرآباد نے معذوروں کی سرکاری گرانٹ کے ڈھائی کروڑ روپے کا گھوٹالہ کیا ہے ۔

  • Share this:
چانسلر فیروز بخت نے ایک بار پھرمولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی انتظامیہ کے خلاف محاذ کھولا
چانسلر فیروز بخت نے ایک بار پھرمولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی انتظامیہ کے خلاف محاذ کھولا

حیدرآباد ، تلنگانہ میں مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی میں بے ضابطگیوں کا ایک بڑا کیس سامنے آسکتا ہے ۔ چانسلر فیروز بخت احمد نے ایک بار پھر یونیورسٹی کے خلاف محاذ کھولتے ہوئے خود وزیر اعظم سے شکایت کی ہے ۔  چانسلر فیروز بخت احمد نے بدھ کے روز وزیر اعظم کو شکایت کا خط بھیجا ، جس میں انہیں بتایا گیا کہ یونیورسٹی انتظامیہ نے 'معذور افراد کے حقوق ایکٹ ، 2016 عمل آوری اسکیم' (ایس آئی پی ڈی اے) کے تحت موصول ہونے والی ڈھائی کروڑ کی گرانٹ کے معاملے میں بدعنوانی کی ہے اور گرانٹ کا یوٹلائزیشن سرٹیفیکٹ حساب کتاب حکومت کو پیش نہیں کیا ہے ۔  جبکہ گرانٹ ڈیپارٹمنٹ نے متعدد بار اس حساب کتاب کا مطالبہ کیا ہے ۔  یاد رہے کہ اس یونیورسٹی کو 1996 میں سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپئی نے قائم کیا تھا تاکہ اردو میڈیم طلبہ آسانی سے  مرکزی دھارے میں شامل ہو سکیں ۔  یہ افسوس کی بات ہے کہ آج اس کے منتظمین خود بدعنوانی میں ملوث ہیں ۔


خط میں وزیراعظم کو بتایا گیا ہے کہ 2018 میں پی ڈبلیو ڈی سے متعلق بنیادی سہولیات کو بڑھانے کے لئے یونیورسٹی کو کل 4 کروڑ 50 لاکھ 70 ہزار روپے کی مرکزی گرانٹ منظور کی گئی تھی ۔  ستمبر 2018 میں 2 کروڑ 25 لاکھ 35 ہزار روپے یونیورسٹی کو پہلی قسط کے طور پر جاری کردئے گئے ۔  لیکن یونیورسٹی کے ذریعہ مالی سال گزر جانے کے بعد بھی اس رقم کے استعمال اور استعمال کے سرٹیفکیٹ کی تفصیلات حکومت کو نہیں دی گئیں ۔  یہ گرانٹ مرکزی وزارت سماجی انصاف اور ایمپاورمنٹ و معذور افراد کی تقویت کے محکمہ کی جانب سے فراہم کرائی گئی ہے ۔  چانسلر کی جانب سے محکمہ کے ذریعہ بھیجے گئے نوٹس و دہانیاں جمع کروائے گئے ہیں ، جس میں یوٹیلائزیشن سرٹیفکیٹ پیش کرنے کے لئے بار بار درخواستیں کی گئیں ۔  لیکن یونیورسٹی انتظامیہ نے دستاویزات پیش نہیں کئے۔


وائس چانسلر فیروز بخت احمد نے کہا : "یہ بے ضابطگیوں کی علامت ہے ۔  سچ تو یہ ہے کہ اس مرکزی یونیورسٹی میں صورتحال قابو سے باہر ہے ۔  میں نے پہلے ہی یہاں فائنانس عملے کی تمام بے ضابطگیاں ، جعلی تقرریوں ، بھائی بھتیجا واد  ، لڑکیوں کا جنسی استحصال اور ملک دشمن سرگرمیوں کے بارے میں شکایت کی ہے ۔  اگر حکومت نے اپنی آنکھیں بند رکھیں اور انتشار پسند عناصر کی حوصلہ افزائی کی گئی تو یہ یونیورسٹی بھی ملک دشمن سرگرمیوں کا مضبوط گڑھ بن سکتی ہے ، جیسا کہ حال ہی میں سی اے اے کے احتجاج میں دیکھا گیا ۔  شان سرفراز بخت کی طلبہ سے درخواست کے باوجود کہ سی اے اے مسلمانوں کے خلاف نہیں ہے ، طلبہ کو نہ صرف مالی اعانت فراہم کی گئی بلکہ حکومت ، وزیر اعظم نریندر مودی اور بخت اور آر ایس ایس کے خلاف نعرے بازی اور گالیاں گرم تھیں۔


انہوں نے کہا : "ملک کے پہلے وزیر تعلیم اور ان کے بڑے بھائی کی اولاد ، مولانا ابوالکلام آزاد کے رشتے دار کے بطور اور ماہر تعلیم کی حیثیت سے وزیر اعظم نریندر مودی نے مجھے ملک کی اس اہم اردو یونیورسٹی کے چانسلر کی حیثیت سے بھیجا اور کہا کہ میں ایماندار ہوں ، مجھے  وہاں کام کرنا چاہئے۔  تاہم مرکزی یونیورسٹی میں ، چانسلر محض ربر کی ڈاک ٹکٹ ہے اور اصل منتظم وائس چانسلر ہے ، جو ریاستی حکومت کے ماتحت ہے۔  لیکن میں اپنی ذمہ داری نبھا رہا ہوں ، کیوں کہ میں آنکھیں بند نہیں رکھ سکتا ۔  جب مجھے دو سال پہلے یہاں بھیجا گیا تھا ، تب اس وقت کے وائس چانسلر پروفیسر اسلم پرویز اور ان کی پوری جماعت نے میری سخت مخالفت کی ۔  طلبہ کو ساتھ لے کر میرے خلاف زبردست مظاہرہ کیا۔  اسی کام کو اب بھی ان کے کارکنوں نے جاری رکھا ہے۔  مجھے 'مودی کا آدمی' اور 'سنگھی' کہتے ہوئے یہ جماعت اپنی منظم بدعنوانی اور کالے کارناموں کو چھپانے کے لئے کام کر رہی ہے۔  اسے فوری طور پر روکا جائے۔  یہ سب دیکھ کر مجھے دکھ ہوتا ہے ۔

یونیورسٹی نے بڑے پیمانے پر بدعنوانی اور گڑبڑی

چانسلر فیروز بخت کا کہنا ہے  کہ  یہاں کا 90 فیصد عملہ جعلی پیدائش سرٹیفکیٹ اور دیگر جعلی دستاویزات پر انحصار کرتا ہے۔  ابھی تک اس کی تفتیش کیوں نہیں کی گئی؟  نوکری کرنے کے لئے 5-15 سال کی عمر میں ہیرا پھیری کی جارہی ہے ، کوئی کیوں نہیں دیکھنے جارہا ہے؟  محکمہ فاصلاتی تعلیم کے ڈین پروفیسر ابوالکلام اپنی حد سے تجاوز کر چکے ہیں ۔  ان کے سرٹیفیکیٹس سے ظاہر ہوتا ہے کہ انھوں نے ایم اے کی ڈگری صرف پانچ سال کی عمر میں حاصل کی تھی ۔  انہیں سابق وائس چانسلر اسلم پرویز نے ڈین بنایا تھا ، دوسری نا اہلی کے باوجود کوئی تفتیش نہیں ہوئی ، کیوں؟  اسلم پرویز نے ایسی متعدد تقرریاں کیں ۔  جب بخت نے تفتیش کے لئے ابوالکلام کے سرٹیفکیٹس کی کاپی طلب کی تو اسے انکار کردیا گیا ۔  جب وائس چانسلر کے خلاف شکایات ضرورت سے زیادہ ہوگئیں ، تو انہیں استعفی دے دیا گیا تاکہ وہ تفتیش سے بچ سکیں۔

چانسلر نے کہا کہ انتشار اس قدر بڑھ گیا ہے کہ لڑکیوں کا جنسی استحصال عام ہے۔  یہ دھمکی بھی دی جاتی ہے اور خاموشی اختیار کی جاتی ہے کہ پروفیسرس کے خلاف جنسی شکایات یا تو واپس لی گئیں یا اس کا خمیازہ بھگتنے کو تیار رہیں۔  پچھلے دو سالوں میں ، جب دو لڑکیوں نے ہمت کا مظاہرہ کیا تو انہیں یونیورسٹی سے برطرف کردیا گیا ۔  ایک لڑکی حیدرآباد کی  فروٹ بیچنے والے کی بیٹی تھی ، جس نے محکمہ جرنلزم کے ڈین پر الزام لگایا تھا۔  دوسری کا تعلق سری نگر سے تھا ، جس نے اسی ڈین پر الزام لگایا تھا۔  ڈین  وائس چانسلر اسلم پرویز کے قریبی دوست ہیں اور انھیں بوائز اینڈ گرلز ہاسٹل کا پرووسٹ بنا دیا گیا ہے ، جس کی وجہ سے انھیں پچاس لاکھ روپے کی گرانٹ مل جاتی ہے۔  یہی وجہ ہے کہ ڈین کو کلین چٹ دی جاتی ہے ، دونوں کو چانسلر نے باہر نکال دیا تھا اور ان کی زندگی اب بھی برباد ہے۔

انہوں نے بڑی بات کہی کہ 'یہاں جو کچھ ہورہا ہے وہ ملک کے مفاد میں نہیں ہے اور سنجیدہ نوعیت کا ہے ، اتنا سنجیدہ ہے کہ آپ جے این یو کو بھول جائیں گے۔ حکومت کو اس طرف توجہ دینی چاہئے اور محتاط رہنا چاہئے ، کہیں ایسا نہ ہو کہ تاخیر ہوجائے اور معاملہ ہاتھ سے نکل جائے کیوں کہ اویسی کی ٹیم بھی اس یونیورسٹی کو اپنی لپیٹ میں لینے کے لئے تیار ہے ۔

گرانٹ کمیشن کو خود کرنی چاہیے لیے سخت کارروائی

چانسلر فیروز بخت کا کہنا  ہے کہ سوال یہ بھی پیدا ہوتا ہے کہ گرانٹ ڈیپارٹمنٹ صرف یاد دہانیاں بھیجنے تک ہی کیوں محدود ہے؟  چانسلر کو شکایت کیوں کرنی پڑتی ہے؟  محکمہ کو یہ کرنا چاہئے تھا اور کارروائی کرنے کے لئے آگے بڑھنا چاہئے ، جو نہیں ہوا۔  نہ صرف اس یونیورسٹی بلکہ اس محکمہ نے ملک کی تمام یونیورسٹیوں اور دیگر اداروں کو بھاری گرانٹ دیا۔  یہ رقم کس طرح سے استعمال ہورہی ہے ، سوال بھی پیدا ہوتا ہے۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Sep 25, 2020 10:44 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading