ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

گرفتاری سے بچنے کے لئے دیاشنکر نے ہائی کورٹ میں دائر کی عرضی

ی ایس پی صدر کے خلاف قابل اعتراض تبصرہ کرنے کے الزام میں دیاشنکر سنگھ کے خلاف حضرت گنج تھانے میں پارٹی کے ریاستی سیکرٹری میوا لال گوتم نے دیاشنکر سنگھ کے خلاف رپورٹ درج کرائی تھی

  • UNI
  • Last Updated: Jul 26, 2016 10:40 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
گرفتاری سے بچنے کے لئے دیاشنکر نے ہائی کورٹ میں دائر کی عرضی
ی ایس پی صدر کے خلاف قابل اعتراض تبصرہ کرنے کے الزام میں دیاشنکر سنگھ کے خلاف حضرت گنج تھانے میں پارٹی کے ریاستی سیکرٹری میوا لال گوتم نے دیاشنکر سنگھ کے خلاف رپورٹ درج کرائی تھی

لکھنؤ : الہ آباد ہائی کورٹ کی لکھنؤ بنچ میں بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) صدر مایاوتی کے خلاف قابل اعتراض تبصرے کے معاملے میں نامزد بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) سے نکالے گئے لیڈر دیا شنکر سنگھ نے گرفتاری سے بچنے کے لئے آج ایک درخواست دائر کی۔ اس معاملے کی سماعت 28 جولائی کو ہو سکتی ہے۔ بی ایس پی صدر کے خلاف قابل اعتراض تبصرہ کرنے کے الزام میں دیاشنکر سنگھ کے خلاف حضرت گنج تھانے میں پارٹی کے ریاستی سیکرٹری میوا لال گوتم نے دیاشنکر سنگھ کے خلاف رپورٹ درج کرائی تھی۔

دریں اثنا پولیس نے دیا شنکر سنگھ کو گرفتار کرنے کے لئے لکھنؤ، بلیا، اعظم گڑھ اور مؤ سمیت ان کے کئی ٹھکانوں پر چھاپے مارے ۔ ادھر دیاشنکر سنگھ نے گرفتاری سے بچنے کیلئے الہ آباد ہائی کورٹ کی لکھنؤ بنچ میں عرضی دائر کی ہے۔ اس درمیان چیف جوڈیشیل مجسٹریٹ (سی جی ایم) نے کل دیاشنکر سنگھ کے خلاف غیرضمانی وارٹ جاری کیا تھا۔ ان کی گرفتاری کے لیے پولیس نے ریاست میں کئی مقامات پر چھاپے مارے ہیں۔

مسٹر سنگھ کی گرفتاری کے لئے لکھنؤ، گورکھپور، مؤ، اعظم گڑھ اور بلیا میں چھاپے مارے گئے۔ ان کی گرفتاری نہیں ہو پانے کی وجہ سے عدالت نے غیر ضمانتی وارٹ جاری کر دیا۔ مسٹر سنگھ کے خلاف 504، 506، 509 اور دلت ظلم وستم ایکٹ کے تحت مقدمہ درج ہے۔ دیاشنکر معاملے پر چل رہی سیاست کے درمیان مظاہرہ کرنے والے بی ایس پی اور بی جے پی لیڈروں کے خلاف تین مقدمے درج ہو چکے ہیں۔

واضح رہے کہ گذشتہ 19 جولائی کو دیا شنکر نے مؤ میں محترمہ مایاوتی کے خلاف قابل اعتراض تبصرہ کیا تھا۔ 20 جولائی کو محترمہ مایاوتی نے اس معاملے کو راجیہ سبھا میں زوردار طریقے سے اٹھایا۔ اسی دن بی ایس پی سیکرٹری میوا لال گوتم نے دیاشنکر سنگھ کے خلاف رپورٹ درج کرائی تھی۔ 21 جولائی کو بی ایس پی نے لکھنؤ میں مظاہرہ کیا۔ مظاہرے کے دوران دیاشنکر کے کنبہ کے بارے میں کئے گئے تبصرہ کو قابل اعتراض بتاتے ہوئے ان کی ماں تیترا دیوی نے حضرت گنج تھانہ میں محترمہ مایاوتی، نسیم الدین صدیقی، رام اچل راج بھر اور میوا لال گوتم کے خلاف رپورٹ درج کرا دی۔

دیاشنکر سنگھ کی بیوی سواتی سنگھ نے بی ایس پی اور اس کی لیڈر محترمہ مایاوتی کے خلاف محاذ کھول دیا تھا۔ سواتی سنگھ کی مانگ تھی کہ بی ایس پی لیڈروں کے خلاف پاسکو ایکٹ کے تحت بھی مقدمہ درج ہو۔ انہیں فوراََ گرفتار کیا جائے۔ اس درمیان اپنے اہل خانہ کے ساتھ ریاست کے گورنر رامنائک سے ملاقات کر کے بی ایس پی لیڈروں کے خلاف پاسکو ایکٹ کے تحت کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا۔

سواتی سنگھ اور ماں تیترا دیوی نے لکھنؤ کے حضرت گنج تھانہ میں بی ایس پی صدر مایاوتی اور ان کی پارٹی کے تین سینئر لیڈروں نسیم الدین صدیقی، رام چل راج بھر اور میوا لال گوتم کے خلاف تعزیرات ہند کی دفعہ 120 بی، 153 اے، 504، 506 اور 509 کے تحت آج مقدمہ درج کرایا۔ دیاشنکر کی ماں نے اپنی شکایت میں الزام لگایا ہے کہ محترمہ مایاوتی کے اکسانے پر ان کی پارٹی کے لوگوں نے ان کے اور کنبہ کے بارے میں قابل اعتراض تبصرہ کیا۔
First published: Jul 26, 2016 10:40 PM IST