உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    فرانس نے دباؤ میں کم کی رافیل کی قیمت ، ہندوستان اب بھی مطمئن نہیں

    علامتی تصویر

    علامتی تصویر

    نئی دہلی : ہندوستان اور فرانس نے 36 رافیل جنگی طیاروں کے سودے کے لئے خواہ سرکاری معاہدے پر دستخط کر دیے ہیں لیکن ان کی قیمتوں پر کوئی اتفاق رائے نہیں ہوسکا ہے اور اس میں ایک سے ڈیڑھ مہینے کا مزید وقت لگ سکتا ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی : ہندوستان اور فرانس نے 36 رافیل جنگی طیاروں کے سودے کے لئے خواہ سرکاری معاہدے پر دستخط کر دیے ہیں لیکن ان کی قیمتوں پر کوئی اتفاق رائے نہیں ہوسکا ہے اور اس میں ایک سے ڈیڑھ مہینے کا مزید وقت لگ سکتا ہے۔


      وزارت دفاع کے اعلی سطحی ذرائع نے آج یہاں بتایا کہ فرانسیسی صدر فرانکو اولاندے کے حالیہ ہندوستان کے سفر کے دوران جس معاہدے پر دستخط کئے گئے ۔اس میں قیمت کو چھوڑ دیگر تمام پہلوؤں پر بات چیت ہوئی جو اس سودے کی اہم بات ہے۔


      وزارت کے ایک سینئر افسر نے نام نہ بتانے کی شرط پر کہا کہ میں کوئی رقم نہیں بتاؤں گا لیکن میں یہ کہہ سکتا ہوں کہ وہ (فرانس) 126 طیاروں کے سودے کے وقت کے ٹینڈر سے نیچے آ گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ اب فرانس کے افسر سرکاری معاہدے کے تحت نئے سرے سے قیمت کے بارے میں تبادلہ خیال کریں گے۔


      ہندوستان یہ کی کوشش کر رہا ہے کہ فرانسیسی کمپنی پہلے ہوئے معاہدے سے کم قیمت پر طیارے دینے کو تیار ہو جائے۔ گزشتہ اپریل میں وزیر اعظم نریندر مودی اور مسٹر اولاند ے کی ملاقات کے دوران 36 رافیل طیاروں کی خریداری پر اتفاق ہونے کے بعد 126 طیارے خریدنے کا سودا خودبخود ٹھنڈے بستے میں چلا گیا تھا۔


      میڈیا رپورٹوں کے مطابق رافیل طیارے سودا 60 ہزار کروڑ روپے تک پہنچ گیا ہے لیکن وزارت دفاع کے حکام نے اسے قیاس آرائی قرار دیتے ہوئے مسترد کر دیا ہے۔ ذرائع نے کہا کہ مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے کہ رافیل طیاروں کی سپلائی 126 طیاروں کے سودے سے بہتر اور اچھی شرائط پر ہوگی۔

      First published: