ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

کیا انکوائری رپورٹ میں جیٹلی کا نام شامل کرانا چاہتی تھی عآپ حکومت؟

نئی دہلی۔ ڈی ڈی سی اے کو لے کر دہلی اور مرکزی حکومت کے درمیان پھر ٹکراو کے آثار دکھائی دے رہے ہیں۔

  • IBN Khabar
  • Last Updated: Jan 12, 2016 01:41 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
کیا انکوائری رپورٹ میں جیٹلی کا نام شامل کرانا چاہتی تھی عآپ حکومت؟
نئی دہلی۔ ڈی ڈی سی اے کو لے کر دہلی اور مرکزی حکومت کے درمیان پھر ٹکراو کے آثار دکھائی دے رہے ہیں۔

نئی دہلی۔ ڈی ڈی سی اے کو لے کر دہلی اور مرکزی حکومت کے درمیان پھر ٹکراو کے آثار دکھائی دے رہے ہیں۔ اس بار تفتیشی افسر کے ایک خط کے انکشاف سے عآپ حکومت سوالوں کے گھیرے میں ہے۔ دراصل، دہلی حکومت میں شہری ترقی سیکرٹری اور ڈی ڈی سی اے تحقیقات کے لئے بنی کمیٹی کے صدر چیتن بی سانگھی نے مرکزی حکومت میں تقرری کو لے کر مرکزی داخلہ سکریٹری کو خط لکھا ہے۔


یہ خط 28 دسمبر کا ہے جس میں سانگھی نے دہلی حکومت پر الزام لگایا ہے کہ ڈی ڈی سی اے میں مبینہ گھوٹالہ میں وی آئی پی کا نام شامل کرنے کا دباؤ بنایا۔ اس کے بعد بی جے پی نے الزام لگایا ہے کہ یہ وی آئی پی کوئی اور نہیں بلکہ وزیر خزانہ ارون جیٹلی ہیں۔


تاہم سانگھی نے ارون جیٹلی کا نام خط میں کہیں نہیں لکھا ہے، لیکن بی جے پی کا کہنا ہے کہ جس طرح سے عآپ کی حکومت شروع سے بغیر حقائق کے ارون جیٹلی کا نام گھوٹالے میں گھسیٹ رہی ہے ایسے میں وی آئی پی کا ذکر ارون جیٹلی کے لئے کیا گیا ہے۔


بی جے پی لیڈر وجیندر گپتا نے کہا کہ دہلی حکومت نے تین رکنی کمیٹی بنائی تھی۔ عام آدمی پارٹی کے لیڈروں کے کہنے پر کمیٹی کے اندر دباؤ بنایا گیا کہ اس میں جیٹلی جی کا نام لکھا جائے، جس سے انہوں نے انکار کر دیا۔ میں اس کی مذمت کرتا ہوں، تعصب صاف دکھائی دیتا ہے۔ 248 صفحات کی رپورٹ حکام سے تین دن کے اندر اندر دستخط کرواتے ہیں۔

وہیں دہلی حکومت میں وزیر گوپال رائے نے کہا کہ دہلی اسمبلی کی تشکیل کردہ کمیشن کام کر رہا ہے۔ سبھی اپنے موقف رکھ سکتے ہیں۔ آج انہوں نے یہ الزام لگائے۔ کمیشن کے سامنے آئیں، کمیشن ان کی بات سنے گا۔

کیا ہے معاملہ

دہلی اینڈ ڈسٹرکٹ کرکٹ ایسوسی ایشن یعنی ڈی ڈی سی اے میں بے ضابطگیوں کو لے کر کیجریوال حکومت کے پاس حال میں شکایت آئی تھی جس کے بعد دہلی حکومت نے اپنے آئی اے ایس افسر چیتن بی سانگھی کی صدارت میں انکوائری کمیٹی تشکیل دی۔ جانچ رپورٹ سامنے آنے سے پہلے ہی عام آدمی پارٹی اورعآپ کی حکومت دونوں نے مل کر وزیر خزانہ ارون جیٹلی پر حملہ بولتے ہوئے انہیں ذمہ دار ٹھہرا ديا۔ خاص بات یہ ہے کہ سانگھی نے اپنی رپورٹ میں جیٹلی کا کہیں ذکر ہی نہیں کیا تھا۔

اب سانگھی کا خط سامنے آنے کے بعد بی جے پی حملہ آور ہے۔ بی جے پی کا کہنا ہے کہ اس مبینہ اسکینڈل سے ارون جیٹلی کا کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ باوجود اس کے عآپ حکومت نے اپنے افسر پر جیٹلی کے خلاف تحقیقات کے لئے ان کا نام رپورٹ میں ڈلوانے کا دباؤ بنایا۔
First published: Jan 12, 2016 01:40 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading