உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Freebie Politics: کلرٹی وی سےلےپیسوں کی تقسیم تک! ووٹروں کولبھانے کیلئےہندوستانی سیاستدانوں کے حربے

    ایک روپے میں ایک کلو چاول کا اعلان کیا تھا۔

    ایک روپے میں ایک کلو چاول کا اعلان کیا تھا۔

    وزیر اعظم نریندر مودی (Narendra Modi) نے حال ہی میں لوگوں کو ووٹوں کے لیے مفت دینے کی ’’ریوادی ثقافت‘‘ (revadi culture) کے خلاف خبردار کیا اور کہا کہ یہ ملک کی ترقی کے لیے بہت خطرناک ہے۔

    • Share this:
      اس سال کے شروع میں سپریم کورٹ (Supreme Court) میں دائر کی گئی درخواست نے اب ملک گیر بحث کو ہوا دی ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ انتخابات سے قبل عوامی فنڈز سے غیر معقول مفت کا وعدہ یا اعلانت رائے دہندگان کو غیر ضروری طور پر متاثر کر سکتے ہیں۔ یہ عمل آزادانہ اور منصفانہ انتخابات کی جڑیں ہلا سکتی ہے اور انتخابی عمل کی پاکیزگی کو نقصان پہنچانے انتخابی میدان میں خلل ڈال سکتے ہیں۔

      وزیر اعظم نریندر مودی (Narendra Modi) نے حال ہی میں لوگوں کو ووٹوں کے لیے مفت دینے کی ’’ریوادی ثقافت‘‘ (revadi culture) کے خلاف خبردار کیا اور کہا کہ یہ ملک کی ترقی کے لیے بہت خطرناک ہے۔

      اس ضمن میں چند مثالیں پیش ہیں:

      آزادانہ سیاست کی 'اماں'؟

      تامل ناڈو کی آنجہانی وزیر اعلیٰ اور اے آئی اے ڈی ایم کے لیڈر جے جے للیتا (J Jayalalithaa ) کئی طرح سے فریبی کلچر کی علمبردار تھیں۔ انہوں نے ووٹروں کو مفت بجلی، موبائل فون، وائی فائی کنکشن، سبسڈی والے اسکوٹر، بلا سود قرض، پنکھے، مکسر گرائنڈر، اسکالرشپ اور بہت کچھ دینے کا وعدہ کیا۔ ان کی طرف سے شروع کی گئی امّا کینٹین (Amma Canteen) کا سلسلہ بھی بہت کامیاب رہا۔ اس نے اپنے پیش رووں میں سے ایک چیف منسٹر سی این انادورائی سے کچھ مشورے ضرور لیے ہوں گے، جنہوں نے 1960 کی دہائی میں ایک روپے میں ایک کلو چاول کا اعلان کیا تھا۔

      ٹی وی تحریک:

      تمل ناڈو میں ڈی ایم کے بھی پیچھے نہیں رہی۔ 2006 میں پارٹی نے لوگوں کو مفت ملٹی کلر ٹیلی ویژن سیٹ فراہم کرنے اور غربت کی لکیر سے نیچے (BPL) گھرانوں کے لیے کھانا پکانے کے گیس کنکشن دینے کے وعدے کیے تھے۔ تاہم 2011 میں اقتدار میں واپس آنے کے بعد جے للیتا نے ڈی ایم کے کی رنگین ٹی وی اسکیم کو ختم کردیا۔

      ’’کیش فار ووٹ‘‘ اور وکی لیکس:

      2011 میں تمل ناڈو میں ووٹ کے بدلے کیش اسکینڈل پھوٹ پڑا، جس میں وکی لیکس (WikiLeaks) کی کیبل میں الزام لگایا گیا تھا کہ سیاستدانوں نے 2009 کے تھرومنگلم ضمنی انتخابات میں ووٹروں کو متاثر کرنے کے لیے انتخابی قانون کی خلاف ورزی کا اعتراف کیا تھا۔ کیبل میں ڈی ایم کے کی طرف سے اپنائے گئے نقدی کی تقسیم کے مبینہ طریقہ کار کی وضاحت کی گئی۔ اس میں بتایاگیا تھا کہ تھرومنگلم میں آدھی رات کو ووٹروں کو نقد رقم دینے کے روایتی طریقہ کو استعمال کرنے کے بجائے ڈی ایم کے نے ووٹنگ رول پر ہر فرد کو لفافوں میں رقم تقسیم کی۔ رقم کے علاوہ لفافوں میں ڈی ایم کے کی 'ووٹنگ پرچی' تھی جس میں وصول کنندہ کو ہدایت دی گئی تھی کہ وہ کس کے لیے ووٹ ڈالیں۔

      یہ بھی پڑھیں:

      MP News: ہندوستان، پاکستان اور بنگلہ دیش کے بیچ فیڈریشن بناکر مسائل کو حل کیا جا سکتا ہے : پنڈت راج ناتھ شرما

      یہ بھی پڑھیں:

      LPG Cylinder:مہنگے ہوئے بڑے سلینڈر تو چھوٹے سلینڈروں کے بڑھی فروخت،آگرہ میں فروخت 30 فیصد تک بڑھی

      رائے دہندگان سے قبل از انتخابات کی امداد کا وعدہ کرنا ہندوستان کے سیاست دانوں میں کئی دہائیوں سے ایک عام رواج رہا ہے۔ نقدی سے لے کر شراب تک گھریلو سامان، اسکالرشپ، سبسڈ، اور غذائی اجناس کی مفت فراہمی کا اعلان کیا جاتا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: